نظم۔ آؤ ہم بن جائیں تارے۔ چراغ حسن حسرت

فرحت کیانی نے 'بچوں کی نظمیں' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 12, 2010

  1. فرحت کیانی

    فرحت کیانی لائبریرین

    مراسلے:
    10,984
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    آؤ ہم بن جائیں تارے
    کلام: چراغ حسن حسرت

    آؤ ہم بن جائیں تارے
    ننھے ننھے پیارے پیارے
    دھرتی سے آکاش پہ جائیں
    چمکیں دمکیں ناچیں گائیں
    بادل آئے دھوم مچاتے
    لے کر کالے کالے چھاتے
    آؤ ہم بھی دھوم مچائیں
    ان کے پَردوں میں چُھپ جائیں
    آؤ آنکھ مچولی کھیلیں
    مل کر سب ہمجولی کھیلیں
    لو گلزار شفق کا پُھولا
    ڈالا آ کے دھنک نے جُھولا
    آؤ جُھولیں اور جُھلائیں
    ان کے رنگ اُتار کے لائیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  2. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    22,034
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    واہ!

    بہت پیاری نظم ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر