"نایافت" سے انتخاب

محمد بلال اعظم نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 8, 2012

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    السلام علیکم!
    احمد فراز کی نظمیں
    ٹائپنگ کا تیسرا زینہ​
    "نایافت" سے انتخاب
    استادِ محترم الف عین صاحب
    فاتح بھائی
    قیصرانی بھائی
    مقدس آپی

    نوٹ: تبصرہ جات کے لئے یہ دھاگہ استعمال کیا جائے۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    فرازؔ تُو نے اُسے مشکلوں میں ڈال دیا
    زمانہ صاحبِ زر اور صرف شاعر تُو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    دیباچہ

    یہ قصّہ پُرانا ہے
    جب بعض ہونٹوں نے چاہا
    کہ لفظوں کوآواز کی زندگی دیں
    توخود اُن کو زہراب پینا پڑ رہا تھا
    کہ اہلِ حُکم کو یہ ڈر تھا
    یہ الفاظ
    آواز کی زندگی سے
    کوئی داستاں بن نہ جائیں
    ۔۔۔اور وہ ہونٹ چپ ہو گئے تھے
    سسکتے تڑپتے ہُوئے لفظ
    قاتل کی شمشیر سے نیم جاں
    مدّتوں تک فراقِ صدا میں
    دھڑکتے رہے ہیں
    کسے کیا خبر تھی
    کہ ان بسملوں کا لہو۔۔۔قطرہ قطرہ
    لکیروں کی صورت دمکتا رہے گا
    اور اب یہ
    لہو کی لکیریں
    بجائے خود اک داستاں بن گئی ہے
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    وفا پرست صلیبیں

    وہ دن بھی یاد ہیں مجھ کو کہ جب مری دنیا
    کہاں کے جسم، کہ سایوں کو بھی ترستی ہے
    پھرا ہوں کوچہ بہ کوچہ متاعِ درد لئے
    اگرچہ خلق مری سادگی پہ ہنستی ہے

    سدا جلاتی رہے مجھے یہ محرومی
    وہی تھا میں وہی صحرائے آرزو کے سراب
    کوئی نہ تھا کہ میں جس کے حضور نذر کروں
    یہ آنسوؤں کے چراغ، یہ شاعری کے گلاب

    یہ زخم وہ تھے جو فن کے لئے چراغ بنے
    مرا شریکِ سفر بس مرا شعور رہا
    کسی سے کر نہ سکا دردِ نارسا کا گلہ
    وہ روز و شب تھے کہ تنہائیوں سے چور رہا

    رہِ طلب میں پھر اک یہ مقام بھی آیا
    کہ دل گرفتہ ہے تُو میری زندگی کے لئے
    میں دیکھتا ہوں کہ تیری اداس آنکھوں میں
    وفا کی آنچ لئے ہیں عقیدتوں کے دیے

    کسے عزیز نہ ہو گی تری طلب کی لگن
    ہزار دل پہ پڑی ہو غمِ زمانہ کی دھول
    کسے غرور نہ ہو گا اگر تری چاہت
    کھِلائے دشتِ تمنّا میں التفات کے پھُول
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    عقیدت

    میں کتنی وارفتگی سے اُس کو سُنا رہا تھا
    وہ ساری باتیں وہ سارے قصّے
    جو اس سے ملنے سے پیشتر
    میری زندگی کی حکایتیں تھیں

    میں کہہ رہا تھا
    کہ اور بھی لوگ تھے
    جنہیں مری آرزو تھی مری طلب تھی
    کہ جن سے میری محبّتوں کا رہا تعلّق
    کہ جن کی مجھ پر عنایتیں تھیں

    میں کہہ رہا تھا
    کہ اُن میں کچھ کو تو میں نے
    جاں سے عزیز جانا
    مگر اُنہیں میں سے بعض کو
    میری بے دلی سے شکایتیں تھیں

    میں ایک اک بات
    ایک اک جرم کی کہانی
    دھڑکتے دل کانپتے بدن سے سُنا رہا تھا
    مگر وہ پتھّر بنی
    مجھے اِس طرح سے سُنتی رہی
    کہ جیسے مرے لبوں پر
    کسی مقدّس تریں صحیفے کی آیتیں تھیں
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    سچ کا زہر

    تجھے خبر بھی نہیں
    کہ تیری اُداس ادھوری
    محبتوں کی کہانیاں
    جو بڑی کشادہ دلی سے
    ہنس ہنس کے سُن رہا تھا
    وہ شخص تیری صداقتوں پر فریفتہ
    با وفا و ثابت قدم
    کہ جس کی جبیں پہ
    ظالم رقابتوں کی جلن سے
    کوئی شکن نہ آئی
    وہ ضبط کی کربناک شدّت سے
    دل ہی دل میں
    خموش، چُپ چاپ
    مر گیا ہے
    ٭٭٭​
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کونسا نام تجھے دُوں؟

    یوں بھی گزری ہے کہ جب درد میں ڈوبی ہوئی شام
    گھول دیتی ہے مری سوچ میں زہرِ ایّام
    زرد پڑ جاتا ہے جب شہرِ نظر کا مہتاب
    خون ہو جاتا ہے ہر ساعتِ بیدار کا خواب
    ایسے لمحوں میں عجب لطفِ دل آرام کے ساتھ
    مہرباں ہاتھ ترے ریشم و بلّور سے ہاتھ

    اپنے شانوں پہ مرے سر کو جھکا دیتے ہیں
    جس طرح سالِ اُمید سے بے بس چہرے
    دیر تک ڈوبنے والے کو صدا دیتے ہیں

    یوں بھی گزری ہےکہ جب قرب کی سرشاری میں
    چمک اُٹھتا ہے نگاہوں میں ترے حُسن کا شہر
    نہ غمِ دہر کی تلچھٹ نہ شبِ ہجر کا زہر
    مجھ کو ایسے میں اچانک ترا بے وجہ سکوت

    کوئی بے فیض نظر یا تلوار سی بات
    ان گنت درد کے رشتوں میں پرو دیتی ہے
    اس طرح سے کہ ہر آسودگی رو دیتی ہے

    کونسا نام تجھے دوں مرے ظالم محبوب
    تُو ہی قاتل مرا تُو ہی مسیحا میرا
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    تخلیق

    درد کی آگ بجھا دو کہ ابھی وقت نہیں
    زخمِ دل جاگ سکے نشترِ غم رقص کرے
    جو بھی سانسوں میں گُھلا ہے اُسے عریاں نہ کرو
    چپ بھی شعلہ ہے مگر کوئی نہ الزام دھرے

    ایسے الزام کہ خود اپنے تراشے ہُوئے بُت
    جذبۂ کاوشِ خالق کو نگونسار کریں
    مُو قلم حلقۂ ابرو کو بنا دے خنجر
    لفظ نوحوں میں رقم مدحِ رخِ یار کریں
    رقصِ مینا سے اُٹھے نغمۂ رقصِ بسمل
    ساز خود اپنے مغنّی کو گنہگار کریں

    مرہمِ اشک نہیں زخمِ طلب کا چارہ
    خوں بھی روؤ گے تو کس خاک کی سج دھج ہو گی
    کانپتے ہاتھوں سے ٹوٹی ہوئی بنیادوں پر
    جو بھی دیوار اٹھاؤ گے وہی کج ہو گی
    کوئی پتّھر ہو کہ نغمہ کوئی پیکر ہو کہ رنگ
    جو بھی تصویر بناؤ گے اپاہج ہو گی
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    یہ کیسی رُت ہے

    یہ کیسی رُت ہے
    کہ ہر شجر
    صحنِ گلستاں میں
    ملول و تنہا سلگ رہا ہے
    طیور کب سے چپ چاپ منقار زیرِ پر ہیں
    ہوائیں نوحہ کناں
    کہ اس باغ کی بہاریں
    گئیں تو پھر لوٹ کر نہ آئیں
    یہ کیسی رُت ہے
    نہ برف باری کے دن
    کہ شاخوں کے پیرہن پر
    سپیدۂ صبح کا گماں ہو
    نہ فصلِ گُل ہے
    کہ ہر طرف شورِ جانفروشاں سے
    کوئے محبوب کا سماں ہو
    نہ دور پت جھڑ کا ہے
    کہ بے جان کونپلوں کو
    اُمیدِ فردائے مہرباں ہو

    یہ کیسی رُت ہے
    کوئی تو بولے
    کوئی تو دھڑکے
    کوئی تو بھڑکے
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    گئی رُت

    پھر آ گئی ہے، گئی رُت تمہیں خبر بھی نہیں
    خبر مجھے بھی نہیں تھی کہ رات پچھلے پہر
    کسی نے مجھ سے کہا جاگ اے دریدہ جگر
    نشستہ ہے سرِ دہلیز کوئی بام نشیں

    بدل چکا تھا سبھی کچھ تمہارے جاتے ہی
    فلک کا چاند، زمیں کے گلاب راکھ ہُوئے
    وہ راکھ خواب ہُوئی پھر وہ خواب راکھ ہُوئے
    تم آ سکو تو میں سمجھوں تمہارے آتے ہی

    ہر ایک نقش وہی آج بھی ہے جو کل تھا
    یہ راکھ خواب بنے خواب سے گلاب بنے
    ہر اک ستارۂ مژگاں سے ماہتاب بنے
    برس فراق کا جیسے وصال کا پل تھا
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  11. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کردار

    ہم ابھی ایستادہ تھے
    اب سے کچھ پہلے
    وفا کے فرش پائندہ پہ
    خوش وقتی کے رنگیں شامیانوں کے تلے
    اپنے ہاتھوں میں قرار و قول کی شمعیں لیے
    آندھیوں میں زلزلوں میں
    تا قیامت ساتھ دینے کے لیے
    آمادہ تھے
    اک دوسرے کے اس قدر دلدادہ تھے

    دیکھنے والوں میں شامل
    یار بھی اغیار بھی
    چند آنکھوں میں نمی
    چند آنکھوں میں حقارت، برہمی
    چند آنکھوں میں سکوتِ دائمی
    جم گئے سائے اُدھر
    اور کانپ اُٹھی اس طرف دیوار بھی
    دشمنوں کو بھی یقیں
    اور بد گماں کچھ ہمنشیں۔۔۔غمخوار بھی
    دیکھنے والوں نے دیکھا

    کس طرح صدیاں اچانک
    ثانیوں میں بٹ گئیں
    شامیانیوں کی طنابیں کٹ گئیں

    بجھ گئیں شمعیں قرار و قول کی
    فرشِ وفا کی سخت و پائندہ سلیں بھی پھٹ گئیں
    اور دو پیکر
    خود اپنے خنجروں کے وار سے
    خاک و خوں میں تر بتر
    فرش پر افتادہ تھے
    ہم ابھی ایستادہ تھے
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  12. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    روزنا جرمن نژاد

    روزنا جرمن نژاد
    اس کے ہونٹوں میں حرارت
    جسم میں طوفاں
    برہنہ پنڈلیوں میں آگ
    نیّت میں فساد
    رنگ و نسل و قد و قامت
    سرزمین و دین کے سب تفرقوں سے بے نیاز

    ہر کسی سے بے تکلّف ایک حد تک دلنواز
    وہ سبھی کی ہم پیالہ ہم نفس
    عمر شاید بیس سے اوپر برس یا دو برس

    روزنا جرمن نژاد
    اور دیکھنے والوں میں سب
    اس کی آسودہ نگاہی بے محابا میگساری کے سبب
    پیکرِ تسلیم و سر تا پا طلب
    ان میں ہر اک کی متاعِ گُل
    بہائے التفاتِ نیم شب

    روزنا جرمن نژاد
    اور اس کا دل۔۔۔زخموں سے چُور
    اپنے ہمدردوں سے ہمسایوں سے دُور
    گھر کی دیواریں نہ دیواروں کے سایوں کا سرور
    جنگ کے آتشکدے کا رزق کب سے بن چکا
    ہر آہنی بازو کا خوں
    ہر چاند سے چہرے کا نور

    خلوتیں خاموش و ویراں
    اور ہر دہلیز پر اک مضطرب مرمر کا بُت
    ایستادہ ہے بچشمِ ناصبور
    کون ہے اپنوں میں باقی
    توسنِ راہِ طلب کا شہسوار
    ہر دریچے کا مقدّر انتظار
    اجنبی مہماں کی دستک خواب
    شاید خواب کی تعبیر بھی

    چند لمحوں کی رفاقت جا وداں بھی
    حسرتِ تعمیر بھی
    الوداعی شام، آنسو، عہد و پیماں
    مضطرب صیّاد بھی نخچیر بھی
    کون کر سکتا ہے ورنہ ہجر کے کالے سمندر کو عبور
    اجنبی مہماں کا اک حرفِ وفا
    نومید چاہت کا غرور

    روزنا اب اجنبی کے ملک میں خود اجنبی
    پر بھی چہرے پر اُداسی ہے نہ آنکھوں میں تھکن
    اجنبی کا ملک جس میں چار سُو
    تاریکیاں ہی خیمہ زن
    سب کے سایوں سے بدن
    روزنا مرمر کا بُت
    اور اس کے گرد
    ناچتے سائے بہت
    سب کے ہونٹوں پر وہی حرفِ وفا
    ایک سی سب کی صدا
    وہ سبھی کی ہم پیالہ ہم نفس
    عمر شاید بیس سے اوپر برس یا دو برس
    اس کی آنکھوں میں تجسس اور بس
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    فضا نورد بادل

    میں سایۂ نخل میں کھڑا تھا
    جب ایک فضا نورد بادل
    لہراتا ہُوا نظر پڑا تھا

    یوں قلب و جگر سے آگ اُٹھی
    برسوں کی طویل تشنہ کامی
    یکلخت ہی جیسے جاگ اُٹھی

    پل بھر میں بدن دہک رہا تھا
    میں سایۂ نخل سے نکل کر
    بادل کی طرف لپک رہا تھا

    بادل تھا سمندروں کا پیاسا
    یہ اس کا کرم کے چند لمحے
    وہ مجھ کو بھی دے گیا دلاسا

    دل پر لئے داغِ نا مرادی
    چاہا کہ پلٹ چلوں ادھر ہی
    جس سمت سے درد نے صدا دی

    دیکھا تو رُت بھی جا چکی تھی
    مایوس کن انتظار کی دھوپ
    اس نخلِ وفا کو کھا چکی تھی
    ٭٭٭

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    فصلِ رائیگاں

    زندگی کے خواب فصلِ رائیگاں
    تو دریدہ دل میں آشفتہ بیاں
    زندگی کے خواب فصلِ رائیگاں

    رائیگاں ہر درد کے سورج کی دھوپ
    آبلے ہاتھوں کے ماتھوں کا عرق
    گیسوؤں کے ابر ہونٹوں کی شفق
    میرے دل کی آگ تیرا رنگ روپ

    رائیگاں خونِ وفا کی ندیاں
    کشتِ بے حاصل کا حاصل بے نشاں
    آنسوؤں کی جھیل دوپہروں کی لُو
    جسم شل احساس مردہ دل لُہو

    چار جانب ریت کے ٹیلے رواں
    کوئی نوحہ گر نہ کوئی چشمِ نم
    صرف ہم تو بھی کہاں میں بھی کہاں
    جیسے ویرانے میں لاشیں بے اماں

    بے کفن، بے گور، رزقِ کرگساں
    اور یہ یادیں بھی کچھ لمحوں کی ہیں
    جس طرح صحرا میں قدموں کے نشاں
    جس طرح تعزیتی خاموشیاں
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  15. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    سلامتی کونسل

    پھر چلے ہیں مرے زخموں کا مداوا کرنے
    میرے غمخوار اُسی فتنہ گرِ دہر کے پاس
    جس کی دہلیز پہ ٹپکی ہیں لہو کی بوندیں
    جب بھی پہنچا ہے کوئی سوختہ جاں کشتۂ یاس
    جس کے ایوانِ عدالت میں فروکش قاتل
    بزم آرا و سخن گسترو فرخندہ لباس
    ہر گھڑی نعرہ زناں "امن و مساوات کی خیر"
    زر کی میزان میں رکھے ہُوئے انسان کا ماس

    کون اس قتل گہہِ ناز کے سمجھے اسرار
    جس نے ہر دشنہ کو پھُولوں میں چھپا رکھا ہے
    امن کی فاختہ اُڑتی ہے نشاں پر لیکن
    نسلِ انساں کو صلیبوں پہ چڑھا رکھا ہے
    اس طرف نطق کی بارانِ کرم اور ادھر
    کاسۂ سر سے مناروں کو سجا رکھا ہے

    جب بھی آیا ہے کوئی کشتۂ بیداد اُسے
    مرہمِ وعدۂ فردا کے سوا کچھ نہ ملا
    یہاں قاتل کے طرفدار ہیں سارے قاتل
    کاہشِ دیدۂ پُر خوں کا صلہ کچھ نہ ملا
    کامر کوریا ویت نام دومنکن کانگو
    کسی بسمل کو بجز حرفِ دعا کچھ نہ ملا

    قصرِ انصاف کی زنجیر ہلانے والو
    کجکلاہوں پہ قیامت کا نشہ ہے طاری
    اپنی شمشیر پہ کشکول کو ترجیح نہ دو
    دم ہو بازو میں تو ہر ضربِ جنوں ہے کاری
    اس جزیرہ میں کہیں نور کا مینار نہیں
    جس کے اطراف میں اک قلزمِ خوں ہے جاری
    "جوہرِ جامِ جم ازکانِ جہانِ دگراست
    تُو توقّع زگلِ کوزہ گراں می داری"
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  16. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    نوحہ گر چُپ ہیں

    نوحہ گر چُپ ہیں کہ روئیں بھی تو کس کو روئیں
    کوئی اس فصلِ ہلاکت میں سلامت بھی تو ہو
    کونسا دل ہے جس کے لئے آنکھیں کھولیں
    کوئی بسمل کسی شب خوں کی علامت بھی تو ہو

    شکر کی جا ہے کہ بے نام و نسب کے چہرے
    مسندِ عدل کی بخشش کے سزاوار ہُوئے
    کتنی تکریم سے دفنائے گئے سوختہ تن
    کتنے اعزاز کے حامل یہ گنہگار ہُوئے

    یوں بھی اس دور میں جینے کا کسے تھا یارا
    بے نوا بازوئے قاتل سے گلہ مند نہ ہوں
    زندگی یوں بھی تو "مفلس کی قبا" تھی لیکن
    دلفگاروں کے کفن میں بھی تو پیوند نہ ہوں

    ناوکِ ظّلِ الہٰی اجل آہنگ سہی
    شکر کی جا ہے کہ سونے کی اَنی رکھتے ہیں
    جاں گنوائی بھی تو کیا مدفن و مرقد تو ملا
    شاہِ جم جاہ طبیعت تو غنی رکھتے ہیں
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    قاتل

    قاتل چُپ ہے
    خوں آلودہ ہاتھ میں اب تک
    خنجر تھر تھر کانپ رہا ہے
    لوگوں کا انبوہ اُسے
    گھیرے میں لے کر
    چیخ رہا ہے
    یہ قاتل ہے
    یہ قاتل ہے
    خاک اور خوں میں لت پت لاش
    کے ہونٹوں پر
    اک بات جمی ہے
    یہ قاتل ہے
    لیکن کس کا
    یہ اپنی تخلیق کا قاتل
    اس نے خود کو قتل کیا ہے
    لوگوں کا انبوہ مگر
    کب سُنتا ہے
    کون ہے قاتل
    کس نے
    کس کو قتل کیا ہے؟
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    نہیں ہے یوں

    نہیں ہے یوں کہ مرا دُکھ مری حدود میں ہے
    نہ صرف دل ہی دریدہ نہ صرف جاں ہی فگار
    نہ صرف دیکھتی آنکھوں میں حسرتوں کا دھواں
    نہ صرف ہاتھ شکستہ نہ سر پہ زخم ہزار

    جو یوں بھی ہو تو بڑی بات ہے تری قربت
    تری وفا تری چاہت تری مسیحائی
    ہر ایک زخم کو دھو دے شفیق ہاتھوں سے
    ہر ایک درد کو چن لے تری دل آرائی

    مگر یہ درد یہ دُکھ کب مری حدود میں ہے
    کہاں نہیں مرا پیکر ہاں نہیں یہ فغاں
    تو اک وجود کو زندہ تو کر چکے لیکن
    ہر اک صلیب پہ میرا ہی جسم آویزاں

    ہر ایک تیرِ ستم پر مرا لہو لرزاں
    کسے کسے تُو بچائے گی اے مری درماں
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کُشان بی بی1؎

    تو جب
    بمبریت کے قاتل پہاڑوں کی صلیبوں سے اُتر آئے
    تو یہ جانا
    کہ ہم دشتِ عدم کو پار کر آئے
    ہر اک کے پاؤں چھلنی جسم شل
    اعضا تھکن سے چُور
    لیکن سب
    ہراسِ مرگ سے بے جان۔۔۔بے حس تھے
    سبھی یوں زرد رُو جیسے
    ابھی تک آسمانوں کے سفر سے لوٹ کر
    رُوحیں نہیں آئیں
    چلو ہم سب کے سب زندہ ہیں
    جیسے بھی ہیں یکجا ہیں
    ضیاؔ، باسطؔ، سعیدؔ اور میں

    ہمارا میزباں کب سے نہ جانے
    گھر کے دروازے کُھلے چھوڑے
    سبک شہتیر کے پُل پر ہمارا منتظر تھا
    اس کو یہ معلوم تھا
    ہم اجنبی مہماں
    سیاحت کے لئے کن مشکلوں سے
    ہفت خواں طے کر کے
    اِس وادی میں آئیں گے
    چناروں کے بلند اشجار
    انگوروں کی بیلیں
    چار سُو سبزہ
    ہوائیں بید مشک و عود و مُر کی خوشبوؤں سے
    چُور بوجھل
    طائرانِ خوشنما و خوش نوا۔۔۔بے کل
    سبک رفتار چشموں کی تہوں میں
    پتّھروں کا نیل و یاقوت سا چھل بل
    ادھر کچھ دور بُزغالوں کے گلے
    نوجواں چرواہیوں کے دودھیا چہروں کی صورت
    برف سے شفاف و دل آرا
    فضا حیرت فزا۔۔۔سحر آفریں دنیا
    "مژہ برہم مزن تا نشکنی رنگِ تماشا را"
    ہمارا میزباں مفلس تھا
    لیکن شام کو خوانِ ضیافت دیکھ کر
    ہم خس بد نداں تھے
    کشادہ طشت میں بزغالۂ بریاں
    بطک میں آبِ تاک
    اور کشتیوں میں ڈھیر سیبوں کے
    الاؤ میں دہکتی آگ
    کتنی گرم کتنی خوبصورت تھی

    مگر ہم منتظر اس پَل کے تھے
    جب کافرستاں کی جواں پریاں
    زمینی خُلد کی حوریں
    دف و مردنگ کی تھاپوں پہ رقصاں
    اپنے محبوبوں کی فرقت کے
    نشیلے گیت گائیں گی
    الف لیلہ کے شہزادوں کی صورت
    ہم میں ہر اک
    اس طلسماتی فضا کے سحر میں گُم تھا
    بتانِ آذری کا رقص جاری تھا
    سیہ ملبوس میں لپٹے ہُوئے
    مرمر کے بُت
    مہتاب سے پیکر
    سبھی باہوں میں باہیں ڈال کر زنجیر کی صورت
    کماں کی شکل میں جُنباں
    کہ جیسے دیوتاؤں کے رتھوں کی گھوڑیاں
    وحشت سے پا کُو باں
    دف و مامہ و مردنگ کے آہنگ میں
    آہستہ آہستہ
    کھنکتے قہقہے۔۔۔محجوب آوازیں بھی
    شامل ہو گئیں آخر
    کہ جیسے نقرئی گھنگرو
    اچانک جھنجھنا اُٹھیں
    سبھی غارت گرِ تمکین و ہوش و دشمنِ ایماں
    ہر اک فتنہ گرِ دوراں
    مگر وہ سر گروہِ ناز نیناں
    غیرتِ ناہید
    جانِ حلقۂ خوباں
    کشان بی بی
    قد و قامت قیامت
    جُنبشیں جادو
    بدن طوفاں
    ضیاؔ کردار میں گوتم
    مجسّم صدق و ایثار و وفا
    درد آشنا و نفس کُش ہمدم
    لہو اس کا بھی اس شعلے نے گرمایا
    مگر سب ساتھیوں سے کم
    بتانِ آذری رقصاں
    مگر باسطؔ جو اک فنکار
    لیکن شکوہ سنجِ زندگی ہر دم
    قلم اس کا دُر افشان و گہر تحریر
    لیکن خود تہی داماں
    شکستہ دل
    خود اپنے فن سے اپنے آپ سے نالاں
    یہاں دنیا کے غم بھُولا ہُوا
    بسمل
    ہر اک پیکر پہ سو سو جان سے قرباں
    سعیدؔ اک کم نظر جذبات کا پُتلا
    مہندس
    اور فقط جسموں کا سوداگر
    جو اپنے ساتھیوں سے بھی چھپا کر ساتھ لایا تھا
    کئی تحفے
    ملمّع کی ہوئی انگوٹھیاں
    جھوٹے نگوں کے ہار
    دل آویز آوازے
    کسی ماہر شکاری کی طرح
    اپنی کمند و دام پر نازاں
    ہر اک پر سحر طاری تھا
    بتانِ آذری کا رقص جاری تھا

    ضیاؔ حیرت میں گم
    باسطؔ زخود رفتہ
    سعیدؔ افسوں زدہ
    میں بُت
    کشان بی بی کے لب
    کلیوں کی صورت نیم وا
    اور ہم فقط
    آواز کی خوشبو سے پاگل
    لذّتِ معنی سے نا محرم
    زبانِ یار کیلاشی و ما از حرفِ بیگانہ
    (ہمارے میزباں نے ترجمانی کی)
    کشان بی بی یہ کہتی ہے
    "مرے محبوب تو اک دستۂ مُر ہے
    کہ جو راتوں کو مری چھاتیوں کے درمیاں
    خوشبو لُٹاتا ہے
    مری ہمجولیو!
    بستی کے سارے نوجوانوں میں
    مرا محبوب پیارا
    جس طرح بن کے درختوں میں ہو نخلِ سیب استادہ
    مرا محبوب
    جیسے جھاڑیوں کے درمیاں کوئی گلِ سوسن
    مرا محبوب مجھ سے کل ملا تھا
    اُس نے مجھ سے خوب باتیں کیں
    وہ کہتا تھا کہ اے میری پری
    اے نازنین
    اب تو مری بستی کو میرے ساتھ چل
    برسات کا موسم چلا
    بادل برس کر کھل چکے
    انگور اور سیبوں کی مٹی جاگ اٹھی
    اے کوہساروں کی چکوری
    تو نہ جانے کن پہاڑوں کی دراڑوں میں چھپی ہے
    آ مرے ہمراہ چل پیاری

    بتانِ آذری کا رقص جاری تھا
    فضا پر سحر طاری تھا
    ہر اک کی آنکھ میں تل کی طرح
    وہ کافرستاں کی قلو پطرہ
    مگر ہم میں کوئی سیزر نہ انتونی
    ضیاؔ گوتم سہی
    لیکن کشاں بی بی
    وہ کافر جو ضیاؔ کو بھی نہ سونپی جائے ہے مجھ سے
    نہ جانے کس طرح یہ شب ڈھلی
    لیکن سحر دم
    جب پرندوں کے چہکنے کی صدا آئی
    کشان بی بی
    سیہ ملبوس میں لپٹی
    جبیں پر کوڑیوں کا تاج
    گالوں پر گھنی زلفیں
    کنیزوں کی طرح اپنی رفیقوں کو لیے
    رخصت ہُوئی ہم سے
    بصد اندازِ استغنا و دارائی
    تو ہم سارے تماشائی تھے پتّھر
    اور پتّھر تھے تماشائی

    1؎ کافرستان کی ایک لڑکی
    ٭٭٭​
     
  20. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    خواب جھُوٹے خواب

    خواب جھوٹے خواب میرے خواب تیرے خواب بھی
    درد کی لذّت بھی دھوکہ قرب کا غم بھی فریب
    بے قراری بھی نمائش خام یارائے شکیب
    تشنگی کی آگ بھی قاتل شرابِ ناب بھی

    میں نے جس دریا کی وسعت دیکھ کر چاہا اُسے
    وہ تو میری موجۂ غم سے بھی تھا پایاب تر
    تُو بڑھی جن ساحلوں کی سمت مجھ کو دیکھ کر
    تشنگی اُن کی بجھا سکتا نہیں سیلاب بھی

    واہموں میں مبتلا ہم آج تک سمجھا کیے
    تیرا آئینہ بھی سورج میرے پتّھر بھی گلاب
    آؤ اب تسلیم کر لیں سب غلط باتیں کہیں
    کاغذی ہیں پھول میرے تیرے دریا بھی سراب
    خواب جھوٹے خواب میرے خواب تیرے خواب بھی
    ٭٭٭
     

اس صفحے کی تشہیر