1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $413.00
    اعلان ختم کریں

منیر نیازی منیر نیازی

عرفان سرور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 3, 2011

  1. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    شام، خوف، رنگ
    `
    بجلی کڑک کے تیغ شرر بار سی گری
    جیسے گھٹا میں رنگ کی دیوار گری
    دیکھا نہ جائے گا وہ سماں شام کا منیر
    جب بامِ غم سے خوشبو کوئی ہار سی گری​
     
  2. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ایک خیال
    `
    دنیا سے دور اس کی بھری محفلو ں سے دور
    بھٹکا ہے دل ہوا کی طرح منزلوں سے دور
    اُٹھی ہے موجِ درد کوئی دل کے آس پاس
    پھرتی ہے اک صدا سی کہیں ساحلوں سے دور​
     
  3. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    وصال کی خواہش
    `
    کہہ بھی دے اب وہ سب باتیں
    جو دل میں پوشیدہ ہیں
    سارے روپ دکھا دے مجھ کو
    جو اب تک نادیدہ ہیں
    ایک ہی رات کے تارے ہیں
    ہم دونوں اس کو جانتے ہیں
    دوری اور مجبوری کیا ہیں
    اس کو بھی پہچانتے ہیں
    کیوں پھر دونوں مل نہیں سکتے
    کیوں یہ بندھن ٹوٹا ہے
    یا کوئی کھوٹ ہے تیرے دل میں
    یا میرا کوئی غم جھوٹا ہے​
     
  4. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    ڈوب گیا اب شام کو سورج آئی کالی رات
    اب تو دل میں درد بسے گا نینوں میں برسات
    آئی کالی رات
    پی درشن کر نکلی ہر البیلی نار
    دور دیس کی رادھا جائے کس موہن کے دوار
    کیسے بنے گی بات
    ندی کنارے گانے والو، سُونے دوار بساؤ
    بچھڑ گئے جو میت پرانے رو رو انھیں بلاؤ
    ہوئی پریت کی مات​
     
  5. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    من مورکھ کی ایک نہ مانو
    اس کے موہ کو جُھوٹا جانو
    اس کا کام ہے دھوکا کھانا
    بنجاروں سے من نہ لگانا
    بستی بستی گھومنے والے
    رس کے لوبھی یہ متوالے
    نرمل سندریوں کے من میں
    چاہ کی آگ لگانے والے
    ان کی باتوں میں مت آنا
    پل بھر کی پہچان ہے ان کی
    دو گھڑیوں کا میل
    آن کی آن میں مٹ جاتا ہے
    ان کی پیت کا کھیل
    یہ کیا جانیں لاج نبھانا​
     
  6. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    رات اندھیری، بادل برسے
    جیارا دھڑکے موہن ڈرسے
    وہ دیکھو! اک سندر ناری
    پیا ملن کو نکلی گھر سے
    جھوم جھوم کر بادل برسے
    پریم نگر کے لو گو آؤ
    اس ناری کی دھیر بندھاؤ
    ہر سونے اندھیارے پتھ پر
    ملن گیت کے دیپ جلاؤ
    گوری آئی روپ نگر سے
    دیکھو رے اک سندر ناری
    پیا ملن کو نکلی گھر سے
    جھوم جھوم کر بادل برسے​
     
  7. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    `
    بات تو دیکھو پاگل من کی
    چاہ کرے اس کے جوبن کی
    جس کا بسیرا، سیج گگن کی
    باتیں دیکھو پاگل من کی
    جندن کا دیپک بجھ جائے
    اُمڈ گھمڈ کر بادل چھائے
    اک ناری شرماتی آئے
    آئیں گھڑیاں مدھر ملن کی
    سپنے کب سچے ہوتے ہیں
    پریمی تو یونہی روتے ہیں
    جلتی رہے گی جو لگن کی
    باتیں دیکھو پاگل من کی​
     
  8. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    کس کس سے ہم پریت نبھائیں
    کون سی مورت من میں بٹھائیں
    سانجھ سویرے کس کو ڈھونڈنے
    کنج گلیوں میں جائیں
    کس سے پریت نبھائیں
    نت نئی اک سندر ناری
    ہردے بیچ سمائے
    جس ناری کو میں چاہوں
    وہ دور کھڑی شرمائے
    ایسے بھید سمجھ نہ آئیں
    لو پھر سانجھ سہانی آئی
    دھیان میں لاکھوں باتیں لائی
    سونے گھر میں سندریوں نے
    نینن جوت جلائی
    کس رادھا سنگ راس رچائیں​
     
  9. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    رادھا کے کومل ہردے میں کرے کامنا زور
    اس کے سندر دھیان میں گونجے کوئلیا کا شور
    رادھا کے چنچل نینوں میں چھائی گھٹا گھنگھور
    آتے جاتے جھونکے اس کو دکھ کے راگ سنائیں
    بندرا بن کی چنچل ناریں ہنس ہنس جی کو جلائیں
    سوتن کے سنگ راس رچائے نرموہی چت چور
    دن ڈھلتے ہی ہر آنگن میں
    سکھ کا جادو چھائے
    جس کے درس کو رادھا ترسے
    وہ موہن کب آئے
    بول رے من کے مور​
     
  10. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    تم جلتی رہو
    تم جلتی رہو
    ساون کی اندھیری راتوں میں
    بادل سے بھری برساتوں میں
    چپ رہ کر دکھ کی پیڑ سہو
    تم جلتی رہو
    جب پشپ لتا کا شور پڑھے
    اور کامناؤں کا زور بڑھے
    تب نرمل، کاپنتے ہردے سے
    تم مدھر ملن کے گیت کہو
    تم جلتی رہو
    پھر پی پر تم کو پیار آئے گا
    ہر دکھ پل میں مٹ جائے گا
    اس سمے کے دھیان میں مست رہو​
     
  11. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    بچوں جیسی باتیں
    ٭
    آج کا کام نہ کل پر ٹالو
    جو کچھ لکھنا ہے لکھ ڈالو
    ادھر ادھر کی جھوٹی باتیں
    ذرا ذرا سی جیتیں ماتیں
    جانے پھر کب موت آ جائے
    دل کی دل میں رہ جائے​
     
  12. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گیت
    ٭
    لو پھر سانولی رجنی نے تاروں بھرا آنچل لہرایا
    بیتے ہوئے سب سمے سہانے
    گاتے ہوئے اب گیت پرانے
    آ گئے دل کا درد بڑھانے
    دھیرے دھیرے سونے نگر پر پھیلی دکھ کی چھایا
    روپ نگر کے رہنے والو
    جُھوٹے سپنوں کے متوالو
    آنکھوں کو کاجل سے سنوارو
    پھولوں کو بالوں سے سجا لو
    بھور ہوئی تو مٹ جائے گی سندر رات کی مایا
    گئے سمے کا سوگ منائیں
    چندرماں کی جوت جلائیں
    سندرتا کی دھوم مچائیں
    ایسی ہی کتنی سوچوں سے جیون کا پنچھی گھبرایا​
     
  13. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    رات فلک پر رنگ برنگی آگ کے گولے چُھوٹے
    پھر بارش وہ زور سے برسی مہک اٹھے گل بُوٹے
    اس کی آنکھ کے جادو کی ہر ایک کہانی سچی
    میرے دل کے خوں ہونے کے سب افسانے جُھوٹے
    پہلے پہل تو جی نہ لگا پردیس کے ان لوگوں میں
    رفتہ رفتہ اپنے ہی گھر سے سارے ناطے ٹُوٹے
    یہ تو سچ ہے سب نے مل کر دلجوئی بھی کی تھی
    اپنی رسوائی کے مزے بھی سب یاروں نے لُوٹے
    میں جو منیر اک کمرے کی کھڑکی کے پاس سے گزرا
    اس کی چق کی تیلیوں سے ریشم کے شگوفے پُھوٹے​
     
  14. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    میں اور وہ
    ٭
    روز ازل سے وہ بھی مجھ تک آنے کی کوشش میں ہے
    روز ازل سے میں بھی اس سے ملنے کی کوشش میں ہوں
    لیکن میں اور وہ
    ہم دونوں
    اپنی اپنی شکلوں جیسے لاکھوں گورکھ دھندوں میں
    چپ چپ اور حیران کھڑے ہیں
    کون ہے میں
    اور کون ہے تُو
    بس اسی دور میں کھوئے ہوئے ہیں
    صبح کو اٹھنے والے سمجھیں
    جیسے یہ تو روئے ہوئے ہیں​
     
  15. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ایک پہلی
    ٭
    آنکھوں میں اندھیری رین بھی ہے
    میری ہی طرح بے چین بھی ہے
    پر اس کی اپنی شان بھی ہے
    اور منہ میں رنگیلا پان بھی ہے
    جب دیکھیں تو شرماتی ہے
    جب چاہیں تو گھبراتی ہے​
     
  16. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اپنے گھر میں
    ٭
    منہ دھو کر جب اس نے مڑ کر میری جانب دیکھا
    مجھ کو یہ محسوس ہوا جیسے کوئی بجلی چمکی ہے
    یا جنگل کے اندھیرے میں جادو کی انگوٹھی دمکی ہے
    صابن کی بھینی خوشبو سے مہک گیا دالان
    اُف اُن بھیگی بھیگی آنکھوں میں دل کے ارمان
    موتیوں جیسے دانتوں میں وہ گہری سرخ زبان
    دیکھ کے گال پہ ناخن کا مدھم سا لال نشان
    کوئی بھی ہوتا میری جگہ پر، ہو جاتا حیران​
     
  17. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ایک آسیبی رات
    ٭
    کافی دیر گزرنے پر بھی جب وہ گھر نہیں آئی
    اور باہر کے آسمان پر کالا بادل کڑکا
    تو میرا دل ایک نرالے اندیشے سے دھڑکا
    لالٹین کو ہاتھ میں لے کر جب میں باہر نکلا
    دروازے کے پاس ہی اک آسیب نے مجھ کو ٹوکا
    آندھی اور طوفان نے آگے بڑھ کر رستہ روکا
    تیز ہوا نے رو کے کہا تم کہاں چلے ہو بھائی
    یہ تو ایسی رات ہے جس میں زہر کی موج چھٹی ہے
    جی کو ڈرانے والی آوازوں کی فوج چھپی ہے
    میں نے پاگل پن کی دھن میں مڑ کر بھی نہیں دیکھا
    دل نے تو دیکھے ہیں ایسے لاکھوں کھٹن زمانے
    وہ کیسے ان بھوتوں کی باتوں کو سچا جانے
    جونہی اچانک میری نظر کے سامنے بجلی چمکی
    میں نے جیسے خواب میں دیکھا اک خونیں نظارا
    جس نے میرے دل میں گہرے درد کا بھالا مارا
    خون میں لت پت پڑی ہوئی تھی اک ننگی مہ پارا
    پھر گھائل چیخوں نے مل کر دہشت سی پھیلائی
    رات کی عفرتیوں کا لشکرمجھے ڈرانے آیا
    دیکھ نہ سکنے والی شکلوں نے جی کو دِھلایا
    ہیبت ناک چڑیلوں نے ہنس ہنس کر تیر چلائے
    سائیں سائیں کرتی ہوا نے خوف کے محل بنائے
    سارے تن کا زور لگا کر میں نے اسے بلایا
    لیلٰی لیلٰی کہاں ہو تم اب جلدی گھر آ جاؤ
    لیلٰی لیلٰی کہاں ہو تم
    لیلٰی لیلٰی کہاں ہو تم
    عفریتوں نے میری صدا کو اسی طرح دُہرایا​
     
  18. عرفان سرور

    عرفان سرور محفلین

    مراسلے:
    838
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ایک پرانی ریت​
    ٭​
    جو بھی گھر سے جاتا ہے​
    یہ کہہ کر ہی جاتا ہے​
    دیکھو مجھ کو بھول نہ جانا​
    میں پھر لوٹ کے آؤں گا​
    دل کو اچھے لگنے والے​
    لاکھوں تحفے لاؤں گا​
    نئے نئے لوگوں کی باتیں​
    آ کر تمہیں سناؤں گا​
    لیکن آنکھیں تھک جاتی ہیں​
    وہ واپس نہیں آتا ہے​
    لوگ بہت ہیں اور وہ اکیلا​
    ان میں گم ہو جاتا ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر