ملکی اداروں کی مدد کیلئے آئین کے تحت فرائض انجام دیتے رہینگے: آرمی چیف

جاسم محمد نے 'سیاست' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 5, 2019 3:00 صبح

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    ملکی اداروں کی مدد کیلئے آئین کے تحت فرائض انجام دیتے رہینگے: آرمی چیف
    [​IMG]
    راولپنڈی: (دنیا نیوز) پاک فوج کے سربراہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے کہ ملکی امن واستحکام قومی اداروں اور افواج پاکستان کی قربانیوں کے مرہون منت ہے۔ کسی بھی مذموم مقصد کیلئے قربانیاں رائیگاں نہیں جانے دیں گے۔

    پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے زیر صدارت کور کمانڈرز کانفرنس ہوئی جس میں ملک کی اندرونی، بیرونی سیکیورٹی صورتحال، قومی سلامتی اور جیو سٹریٹجک حالات کا جائزہ لیا گیا۔

    آئی ایس پی آر کے مطابق کانفرنس میں داخلی سلامتی اور کشمیر کی صورتحال کا بھی جائزہ لیا گیا۔ کور کمانڈرز نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ہر حال میں ملک کا دفاع کریں گے۔

    اس موقع پر آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ پاک فوج ملکی اداروں کی مدد کیلئے آئین کے تحت فرائض انجام دیتی رہے گی۔ افواج پاکستان ہر قسم کے چیلنجز سے نمٹنے کیلئے تیار ہے۔

    انہوں نے کہا کہ ملکی امن واستحکام قومی اداروں اور افواج پاکستان کی قربانیوں کے مرہون منت ہے۔ کسی بھی مذموم مقصد کیلئے قربانیاں رائیگاں نہیں جانے دیں گے۔

     
  2. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    فرقان احمد ادارہ کے اس آفیشل بیان کے بعد آپ کے خیال میں اسٹیبلشمنٹ نے اپنی سلیکٹڈ حکومت کا ساتھ مزید بڑھانے کا اعلان کیا ہے یا اس کے پیچھے کوئی اور بات بھی ہو سکتی ہے؟
     
  3. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    8,907
    سر، اسے تو چھوڑیے نا آپ۔ یہ سبھی جرنیل اس قدر تناؤ کا شکار کیوں ہیں؟ کیا آپ نے محسوس کیا؟ زیادہ تر تو رُوٹھی ہوئی حسینائیں لگ رہی ہیں۔ :) ویسے، یہ ہومیو پیتھک قسم کا اعلامیہ ہے جو کسی بھی موقع کے لیے فٹ بیٹھ سکتا ہے۔ اس میں حکومت کے خلاف بہر صورت کچھ نہیں ہے، اور حمایت کا اعادہ کرنے کی ضرورت محسوس نہیں کی گئی جس پر آپ کسی قدر 'گھبرا' سکتے ہیں، اگر آپ ایسا کرنا چاہیں تو! :)
     
    • متفق متفق × 1
  4. سید عاطف علی

    سید عاطف علی محفلین

    مراسلے:
    7,350
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    مجھے لگتا ہے کہ یہ اشارہ جنہیں دیا گیا ہے ان کی عقل (فی الحال) گھاس چرنے گئی ہے ۔
    ۔۔۔۔سےمعذرت کے ساتھ۔
    یہ خالی جگہ بھی ایک اشارہ ہے ۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    ظاہر ہے جنرل باجوہ کو ایکسٹینشن دئے جانے کا شدید غم ہے۔ امید ہے عمران خان 2022میں انہی کو ایک اور ایکسٹینشن دیں گے :)
     
  6. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    8,907
    پہلے مولانا کو تو یہاں سے روانہ کیجیے۔ مزید یہ کہ، دسمبر کے منتظر رہیے جو امکانی طور پر سیاسی و اسٹیبلشیائی تپش کو یخ بستگی سے ہمکنار کر دے گا۔ 2022ء تو ابھی بہت دور ہے صاحب!
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    حکومت کی خواہش ہے کہ جس طرح مولانا اور دیگر اپوزیشن جماعتوں نے 2014 میں تحریک انصاف کے دھرنے کو بند گلی میں دکھیلا تھا۔ اس کا تھوڑا سا ٹریلر مولانا کو بھی دکھایا جائے :)
     
  8. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    8,907
    ہماری چھٹی حس تو کچھ اور کہتی ہے مگر ہم خاموش ہیں۔ ہماری دانست میں مولانا کسی کے اشارے کے منتظر ہیں اور وہ اشارہ تبھی ہو گا جب دباؤ بڑھے گا۔ ابھی مطلوبہ دباؤ موجود نہیں، اس لیے آپ کی بات میں اثر ہے۔ کوئی ایک واقعہ، کوئی ایک غلط قدم؛ کوئی ممکنہ تصادم ہو گیا تو معاملات اب بھی یک سر بدل سکتے ہیں۔ حکومتی وزراء اور نمائندگان کو کم از کم ان دنوں الفاظ کے چناؤ میں حتی الامکان اور غیر معمولی احتیاط کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ لاؤ لشکر چاہے پانچ ہزار تک محدود ہو جائے، تاہم، جب تک یہ اسلام آباد میں موجود ہیں؛ ایک خطرہ ہمہ وقت حکومت کے سر پر موجود ہے۔ معاملہ اک ذرا بگڑ گیا تو نفری پھر سے پوری ہو سکتی ہے اور اس دوران کچھ بھی ممکن ہے۔ مولانا صاحب کچھ کہنا چاہتے ہیں، مگر، 'ماحول' نہیں بن پا رہا ہے۔ ابھی تک، حکومت نے اس دھرنے کو اچھی طرح ہینڈل کیا ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. آورکزئی

    آورکزئی محفلین

    مراسلے:
    400
    ائین میں شاید کہیں لکھا ہو کہ فوج ہی اپنی مرضی کا قزیر اعظم لاسکتا ہے۔۔ یا انتخابات کروا سکتا ہے۔۔۔
    باقی کسی کو یہ جمہوری حق حاصل نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  10. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    ملک کا آئین بنانے والی سیاسی قوتیں موقع پر موجود جرنیلوں کا ان پٹ بھی لے لیتی تو ملک کو جمہوری آمریت کے تجربات سے بار بار گزرنا نہ پڑتا۔ فوج سے مشورہ کئے بغیر "متفقہ" آئین بنا کر پارلیمان سے پاس کروا لیا ۔ اور اس کے سنگین نتائج بھگتنے کیلئے ہمیں پیچھے چھوڑ گئے ۔
     
    • متفق متفق × 1
  11. آورکزئی

    آورکزئی محفلین

    مراسلے:
    400
    تو کیا خیال ہے اس نظام کو ختم نہیں ہونا چاہیئے۔۔۔۔۔۔۔ کیا ہم اپنی مرضی سے اپنے مرضی کے بندے کو ووٹ کاسٹ نہیں کر سکتے ؟؟
     
  12. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    ملک کا پہلا "متفقہ" آئین 1956 میں منظور ہوا تھا۔ یہ اس وقت بھی فوج کو ایک آنکھ نہ بھایا اور صدر اسکندر مرزا کو سیڑھی بناتے ہوئے جنرل ایوب خان نے اسے بذریعہ مارشل لا معطل کر وا دیا۔
    The Constitution of 1956

    دوسرا متفقہ آئین جنرل ایوب کے مارشل لا کے دوران 1962 میں منظور ہوا۔ یہ والا آئین فوج کو بہت پسند آیا کیونکہ انہوں نے خود ہی اپنی مرضی سے لکھوایا تھا۔ مگر افسوس یہ بھی ملک کے حالات خراب ہونے پر 7 سال بعد ہی معطل کر دیا گیا۔
    The Constitution of 1962 | Provided for a unicameral legislature

    تیسر "متفقہ" آئین بھٹو حکومت نے 1973 میں پاس کیا۔ یہ بھی دیر پاثابت نہ ہوا اور 1977 میں جنرل ضیا نے مارشل لا لگا کر اسے معطل کر دیا۔
    The Constitution of 1973 | Provided a free and independent Judiciary

    ایسا آئین جو بار بار معطل ہو، جس پر عمل پیرا نہ ہوا جا سکے، اسے ردی کے ٹوکرے میں پھینک دینا چاہئے :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,426
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    1962ء کا آئین "متفقہ" کیسے تھا؟ سی ایم ایل اے (جنرل ایوب) کی خواہشات کو اس وقت کے ملک کے قابل ترین وکیل (منظور قادر) نے آئین کا روپ دے دیا تھا، یعنی دو بندوں کا متفقہ دستور تھا یہ!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    جن کا یہ ملک ہے وہ اس آئین پر متفق تھے۔ ا سلئے متفقہ لکھا تھا۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  15. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,426
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اس آئین کو بناتے وقت اس پر رائے لینے کے لیے ایک سوالنامہ بنا کر ملک کے طول و عرض میں پھیلا دیا گیا تھا۔ اس کا فائدہ تو خیر کیا ہوتا، کچھ "ذہین" لوگوں نے اپنے تیز و تند و تلخ جوابات اخباروں میں چھپوا دیئے، حکومت نے اس پر بھی پابندی لگا دی۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  16. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    13,145
    آئندہ اگر خدانخواستہ فوج نے مارشل لا لگا کر نیا آئین بنانے کی کوشش کی۔ تو اس پر انپٹ سوشل میڈیا سے لیا جائے گا۔ جس کے بعد واٹس ایپ، فیس بک ، ٹویٹر وغیرہ سب ایک ساتھ بین ہو جائیں گے۔ :)
     

اس صفحے کی تشہیر