ماں جیسی ہستی دنیا میں ہے کہاں

ناصر علی مرزا نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 3, 2014

  1. ناصر علی مرزا

    ناصر علی مرزا معطل

    مراسلے:
    1,234
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    ماں جیسی ہستی دُنیا میں ہے کہاں
    نہیں ملے گا بدل چاہے ڈھونڈ لے ساراجہاں
    شفقت بھرا تیراچہرا
    جھلکے محبت کاجذبہ
    قائم رہے سایہ تیرا
    قدموں میں ہے جنت کاپتہ
    ہردُکھ کوخودسہا میرے لئے تونے
    ماں جیسی ہستی دُنیامیں ہے کہاں
    نہیں ملے گا بدل چاہے ڈھونڈ لے ساراجہاں
    جب بھی وہ دن یادآتے ہیں
    آنکھیں میری بھرآتی ہے
    کہ میری سُکھ کی خاطر
    تونے کتنی راتیں جاگی ہیں
    غصہ تھا جن آنکھوں میں
    وہی میری یاد میں روئی ہیں
    جوقرض ہے تیری محبت کا
    کیا کرپائیں گئے ہم وہ ادا
    ہردُکھ کوخود سہا میرے لئے تو نے
    ماں جیسی ہستی دُنیامیں ہے کہاں
    نہیں ملے گا بدل چاہے ڈھونڈلے ساراجہاں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  2. ناصر علی مرزا

    ناصر علی مرزا معطل

    مراسلے:
    1,234
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    فکر میں‌ بچوں کے کچھ اس گُھل جاتی ہے ماں۔
    نوجوان ہوتے ہوئے بھی بوڑھی نطر آتی ہے ماں۔

    موت کی آغوش میں‌جب تھک کے سو جاتی ہے ماں،
    تب کہیں‌جا کر رضا تھوڑا سکوں پاتی ہے ماں۔

    ہڈیوں‌کا رس پلا کر اپنے دل کے چین کو،
    کتنی ہی راتوں‌میں‌خالی پیٹ سو جاتی ہے ماں۔

    روح‌کے رشتوں‌کی یہ گہرائیاں‌تو دیکھیں،
    چوٹ لگتی ہے ہمارے اور چلاتی ہے ماں۔

    جب کھلونے کو مچلتا ہے کوئی غربت کا پھول،
    آنسوئوں‌کے ساز پر بچے کو بہلاتی ہے ماں۔

    جانے کتنی برف سی راتو‌ں‌میں‌ایسا بھی ہوا،
    بچہ تو چھاتی پہ پے گیلے میں‌سو جاتی ہے ماں۔

    اپنے آنچل سے گلابی آنسوئوں کو پونچھ کر،
    دیر تک غربت پہ اپنی اشک بہاتی ہے ماں۔

    فکر کے شمشان میں‌آخر چتائوں‌کی طرح،
    جیسے سوکھی لکڑیاں‌اس طرح‌جل جاتی ہے ماں۔

    پیار کہتے ہیں‌کسے مامتا کیا چیز ہے،
    کوئی ان بچوں‌سے پوچھے جن کی مر جاتی ہے ماں۔

    سامنے بچوں‌کے خوش رہتی ہے ہر اِک حال میں،
    رات کو چُھپ چُھپ کر لیکن اشک بہاتی ہے ماں۔
     
    • زبردست زبردست × 2
  3. ناصر علی مرزا

    ناصر علی مرزا معطل

    مراسلے:
    1,234
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    یہ کامیابیاں عزت یہ نام تُم سے ہے
    خُدا نے جو بھی دِیا ہے مقام تُم سے ہے
    تمھارے دَم سے ہیں مرے لہُو میں کھلتے گُلاب
    مرے وُجُود کا سارا نظام تُم سے ہے
    کہاں بساطِ جہاں اور میں کمسِن و ناداں
    یہ میری جیت کا سب اہتمام تُم سے ہے
    جہاں جہاں ہے مری دُشمنی سبب مَیں ہُوں
    جہاں جہاں ہے مرا احترام تُم سے ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  4. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    13,261
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    بہت خوب۔
     
  5. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    موت کی آغوش میں‌جب تھک کے سو جاتی ہے ماں
    تب کہیں‌جا کر رضا تھوڑا سکوں پاتی ہے ماں
     

اس صفحے کی تشہیر