ماحولیاتی سمٹ: امریکی صدر جو بائیڈن کی 40 عالمی رہنماؤں کو شرکت کی دعوت، پاکستان کا نام شامل نہیں

جاسم محمد نے 'ماحولیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 28, 2021

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    29,320
    ماحولیاتی سمٹ: امریکی صدر جو بائیڈن کی 40 عالمی رہنماؤں کو شرکت کی دعوت، پاکستان کا نام شامل نہیں
    27 مار چ 2021
    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہEPA

    ،تصویر کا کیپشن
    جو بائیڈن کے دورِ صدارت کا آغاز صدارتی حکم ناموں سے ہوا تھا اور انھوں نے پیرس ماحولیاتی معاہدے کی بحالی کا اعلان کی تھا

    امریکی صدر جو بائیڈن نے ماحولیاتی تبدیلی پر اپریل 22-23 کو ایک ورچوئل سمٹ (اجلاس) کا اعلان کیا ہے اور اس سلسلے میں 40 عالمی رہنماؤں کو مدعو کیا گیا ہے۔

    وائٹ ہاؤس کے جمعے کو جاری کردہ بیان کے مطابق اس ورچوئل اجلاس میں اس حوالے سے آگاہی دی جائے گی کہ ماحولیاتی تبدیلی کو روکنے سے بہتر نوکریاں فراہم کی جاسکیں گی، اعلیٰ ٹیکنالوجی تیار ہو گی اور کمزور ممالک کی مدد ہو سکے گی۔

    بیان کے مطابق صدر بائیڈن چاہتے ہیں کہ عالمی رہنما اس سمٹ کو ایک موقع سمجھیں جہاں وہ بتا سکتے ہیں کہ ان کے ممالک کیسے ماحولیاتی تبدیلی کو روکنے کے لیے بہتر کردار ادا کر رہے ہیں۔

    واضح رہے کہ یہ سمٹ ایک ایسے وقت میں ہو رہا ہے کہ جب سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے جانے کے بعد امریکہ دوبارہ پیرس معاہدے میں شامل ہو گیا ہے اور رواں سال نومبر کے دوران اسی موضوع پر گلاسگو میں اقوام متحدہ کی کانفرنس ہونے جا رہی ہے۔

    سمٹ میں کسے مدعو کیا گیا ہے؟

    وائٹ ہاؤس کے بیان کے مطابق ایسے 17 ممالک کے رہنماؤں کو مدعو کیا گیا ہے جو قریب 80 فیصد کاربن کے عالمی اخراج اور عالمی پیداوار کے ذمہ دار ہیں۔

    ’صدر نے ان ملکوں کے سربراہان کو بھی مدعو کیا ہے جنھوں نے مضبوط کلائمیٹ لیڈرشپ کا مظاہرہ کیا ہے، جو ماحولیاتی اثرات سے سب سے زیادہ متاثر ہو رہے ہیں یا اپنی معیشت کو کاربن کے صفر اخراج کی طرف لے جانے کے لیے نئے طریقے استعمال کر رہے ہیں۔‘

    ’سمٹ میں چھوٹے پیمانے پر کاروباری اور سول سوسائٹی کے رہنما بھی شرکت کریں گے۔‘

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہEPA

    ،تصویر کا کیپشن
    امریکہ نے کلائمیٹ سمٹ میں انڈیا کے وزیر اعظم نریندر مودی (بائیں) اور بنگلہ دیش کی شیخ حسینہ (دائیں) کو مدعو کیا ہے

    صدر بائیڈن نے انڈین وزیراعظم نریندر مودی، بنگلہ دیش کی وزیراعظم شیخ حسینہ، برطانوی وزیراعظم بورس جانسن، ترک صدر طیب اردوغان، سعودی حکمران سلمان بن عبدالعزیز آل سعود، اسرائیلی وزیراعظم بن یامین نتن یاہو، فرانس کے صدر میکخواں، یورپی کمیشن کی صدر ارسلا وان ڈرلائن سمیت دیگر رہنماؤں کو مدعو کیا ہے۔

    وائٹ ہاؤس کے بیان کے مطابق چین کے صدر شی جن پنگ اور روسی صدر ولادیمیر پوتن کو بھی اس میں شرکت کی دعوت کی گئی ہے تاکہ ’بڑی معیشتیں ماحولیاتی بحران کو قابو کرنے کے لیے اپنی کوششیں تیز کرسکیں۔‘

    جرمن چانسلر اینگلا مرکل اور کینیڈا کے صدر جسٹن ٹروڈو کے علاوہ جنوبی افریقہ، ویتنام، جنوبی کوریا، نائجیریا، میکسیکو، کینیا، انڈونیشیا، بھوٹان اور برازیل کے رہنماؤں کو بھی ورچوئل شرکت کی دعوت دی گئی ہے۔

    ’عمران خان فہرست میں شامل کیوں نہیں؟‘

    سوشل میڈیا پر اس خبر کے ردعمل میں کئی صارفین نے سوال اٹھایا ہے کہ پاکستان کو اس فہرست میں شامل کیوں نہیں کیا گیا اور ورچوئل اجلاس میں وزیر اعظم پاکستان کو دعوت کیوں نہیں دی گئی۔

    مائیکل کوگلمین نے لکھا کہ ’پاکستان میں کئی کوگ خوش نہیں کہ عمران خان اجلاس کے شرکا میں نہیں ہوں گے۔‘

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER/@MICHAELKUGELMAN

    انھوں نے مزید لکھا: ’مدعو کیے جانے والوں میں سر فہرست امریکہ کے اتحادی تھے، دوسرے نمبر پر زیادہ آلودگی پھیلانے والے ملک، تیسرے پر وہ ملک جو ماحولیاتی اثرات سے متاثر ہو رہے ہیں۔۔۔ پاکستان تیسری شرط کے تحت اہل تھا۔‘

    اسماعیل خان نے طنزیہ ٹویٹ میں کہا کہ ’لگتا ہے پاکستان نے ماحولیاتی مسئلے کو حل کر دیا ہے۔‘

    انھوں نے مزید لکھا: ’مگر سنجیدہ بات یہ ناانصافی ہے کہ ایسے مسئلے پر بولنے کے لیے عمران خان کو نہیں بلایا گیا جو ان کے نزدیگ انتہائی اہم ہے۔‘

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER

    سلیم علی کا کہنا تھا کہ ’پاکستان ان 10 ممالک میں شامل ہے جو ماحولیاتی اثرات سے سب سے زیادہ متاثر ہو رہے ہیں۔‘

    علی رفیق نے اس پر تبصرہ کیا کہ ’علاقائی اعتبار سے بنگلہ دیش سے شیخ حسینہ اور انڈیا سے نریندر مودی کو مدعو کیا گیا لیکن پاکستان سے عمران خان کو نہیں۔۔۔ کچھ لوگوں کی تجویز ہے کہ پاکستان امریکہ تعلقات میں ماحولیاتی تبدیلی ایک بنیادی عنصر ہونا چاہیے۔‘

    غریدہ فاروقی کے مطابق اس سے ’عالمی منظر نامے میں پاکستان کی اہمیت اور وزارت ماحولیاتی تبدیلی کے کرادر کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔‘ جبکہ اجمل جامی نے لکھا کہ وہ ’اس فہرست میں عمران خان کو نہ دیکھ کر حیران‘ ہیں۔

    [​IMG]
    ،تصویر کا ذریعہTWITTER/@SOHAILANWER

    حامد میر نے سوال کیا کہ ’صدر بائیڈن نے ایسے ملک کو کیوں نظر انداز کیا ہے جس نے بلین ٹری سونامی کے منصوبے کو شروع کیا؟‘

    لیکن بعض صارفین نے اصرار کیا ہے کہ اس سے فرق نہیں پڑتا۔

    سہیل نامی صارف لکھتے ہیں کہ ’بلین ٹری کو ورلڈ اکنامک فورم، اقوام متحدہ سمیت دنیا کے ان گنت اداروں نے سراہا اور قابل تقلید کہا۔۔۔ چھوڑ دیں یہ ذہنیت کہ جب تک وہاں سے سرٹیفکیٹ نہ آئے ہم اپنی عزت نہیں کرائیں گے۔ پاکستان کی دنیا میں عزت ہم سب نے کرانی ہے، امریکہ نے نہیں۔‘

    اسما عثمان مزاحیہ انداز میں کہتی ہیں کہ ’میرے خیال سے پاکستان موسمیاتی تبدیلی اور ایسے سمٹ کا صدر منتخب ہو چکا ہے۔ پاکستان کو دعوت دی نہیں جائے گی کیونکہ پاکستان صدارت کرے گا؟‘
     
  2. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    16,894
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اللّہ جسے عزت دینا چاہے اُسے امریکہ سے نہیں پوچھنا ان بڑی طاقتوں کا غرور کھلُ کھلُ کر سامنے آیا کوڈ 19 میں ۔۔۔یہ پروردگار کی وارنگ ہے اگر انسان سمجھے تو لیکن بےشک انسان بڑا بے صبر اور ناشکرا ہے !!!!!!!!!!
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 28, 2021
    • زبردست زبردست × 1
  3. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    11,013
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    “یہ ماحولیاتی کانفرنس ھے جب مخولیاتی کانفرنس ھوئی تو آپ کو بھی بلا لیں گے-
    بائیڈن انتطامیہ کا پاکستانی حکومت کو متوقع جواب”

    از نامعلوم
    ایک واٹس ایپ پیغام۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  4. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    29,320
    پاکستان امریکہ کیلئے اہمیت نہیں رکھتا۔ بائیڈن کا واضح پیغام
     
    • متفق متفق × 1
  5. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    39,174
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    پاکستان کی دنیا میں اہمیت صفر ہے۔ امریکہ کے افغانستان سے جانے کے بعد یہ اس سے بھی کم ہو جائے گی۔
     
    • متفق متفق × 2
  6. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    29,320
    جس ملک کی کل برآمداد پچھلے 10 سال میں30 ارب ڈالر سے کم ہو اور اس میں دور دور تک بہتری کا کوئی امکان نہ ہو تو اس کی دنیا کی نظر میں کیا اہمیت ہوگی؟
    [​IMG]
    [​IMG]
    https://wits.worldbank.org/CountryProfile/en/Country/PAK/Year/LTST/Summary
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 28, 2021
    • متفق متفق × 1

اس صفحے کی تشہیر