گلزار "فلاح آدمیت میں صعوبت سہہ کے مر جانا" گلزار دہلوی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 6, 2017

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    فلاحِ آدمیت میں صعوبت سہہ کے مر جانا
    یہی ہے کام کر جانا یہی ہے نام کر جانا

    جہاں انسانیت وحشت کے ہاتھوں ذبح ہوتی ہو
    جہاں تذلیل ہے جینا وہاں بہتر ہے مر جانا

    یوں ہی دیر و حرم کی ٹھوکریں کھاتے پھرے برسوں
    تری ٹھوکر سے لکھا تھا مقدر کا سنور جانا

    سکونِ روح ملتا ہے زمانہ کو ترے در سے
    بہشت و خلد کے مانند ہم نے تیرا در جانا

    ہماری سادہ لوحی تھی خدا بخشے کہ خوش فہمی
    کہ ہر انسان کی صورت کو ما فوق البشر جانا

    یہ ہے رندوں پہ رحمت روز محشر خود مشیت نے
    لکھا ہے آب کوثر سے نکھر جانا سنور جانا

    چمن میں اس قدر سہمے ہوئے ہیں آشیاں والے
    کہ جگنو کی چمک کو سازشِ برق و شرر جانا

    ہمیں خارِ وطن گلزارؔ پیارے ہیں گلِ تر سے
    کہ ہر ذرے کو خاکِ ہند کے شمس و قمر جانا
    گلزار دہلوی
     
    مدیر کی آخری تدوین: ‏جولائی 7, 2017
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر