مصطفیٰ زیدی فراق

غزل جی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 2, 2012

  1. غزل جی

    غزل جی محفلین

    مراسلے:
    234
    فراق

    ہم نے جِس طرح سبُو توڑا ہے ۔۔۔۔۔۔ ہم جانتے ہیں

    دل ِپُر خُوں کی مئے ناب کا قطرہ قطرہ
    جُوئے الماس تھا، دریائے شب ِنیساں تھا
    ایک اک بُوند کے دامن میں تھی موج ِکوثر
    ایک اک عکس حدیث ِحَرَم ِ اِیماں تھا
    ایک ہی راہ پہنچتی تھی تَجلّی کے حضُور
    ہم نے اُس راہ سے مُنھ موڑا ہے ۔۔۔۔۔۔ ہم جانتے ہیں

    ماہ پاروں کے طِلسمات میں تیرا افسُوں
    شیوہ و شعبدہ و رسم و روایات میں تُو
    حرف و تقریر میں تُو، رمز و کنایات میں تُو
    خواب کی بزم تِری، دیدہؑ بےخواب تِرا
    صُبح کے نُور میں تُو، نیند بھری رات میں تُو
    دِل کی دھڑکن کا تِرے قُرب کے لمحوں پہ مدار
    ہم نے جِس طرح تجھے چھوڑا ہے ۔۔۔۔۔۔ ہم جانتے ہیں

    مصطفٰی زیدی

    (روشنی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 8
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,725
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    کیا بات ہے۔ بہت خوب انتخاب۔ زیدی دماغ کے خلیوں کو ہلا دیتا ہے۔ :) شکریہ غزل جی!
     
    • متفق متفق × 1
  3. غزل جی

    غزل جی محفلین

    مراسلے:
    234
    بجا فرمایا آپ نے ،۔ انتخاب پسند فرمانے کا بہت شکریہ فرخ صاحب ! شاد رہئے :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    11,296
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بہت ہی عمدہ کلام ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. زبیر مرزا

    زبیر مرزا محفلین

    مراسلے:
    5,997
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    واہ بہت خوب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. غزل جی

    غزل جی محفلین

    مراسلے:
    234
    انتخاب پسند کرنے کا بےحد شکریہ ، محب علوی صاحب ! اور ، زحال مرزا صاحب !
     
  7. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,725
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    فراق
    ہم نے جِس طرح سبُو توڑا ہے ۔۔۔ ہم جانتے ہیں
    دل ِپُر خُوں کی مئے ناب کا قطرہ قطرہ
    جُوئے الماس تھا، دریائے شب ِنیساں تھا
    ایک اک بُوند کے دامن میں تھی موجِ کوثر
    ایک اک عکس حدیث ِحَرَمِ اِیماں تھا
    ایک ہی راہ پہنچتی تھی تَجلّی کے حضُور
    ہم نے اُس راہ سے مُنھ موڑا ہے ۔۔۔ ہم جانتے ہیں
    ماہ پاروں کے طِلسمات میں تیرا افسُوں
    شیوہ و شعبدہ و رسم و روایات میں تُو
    حرف و تقریر میں تُو، رمز و کنایات میں تُو
    خواب کی بزم تِری، دیدۂ بےخواب تِرا
    صُبح کے نُور میں تُو، نیند بھری رات میں تُو
    دِل کی دھڑکن کا تِرے قُرب کے لمحوں پہ مدار
    ہم نے جِس طرح تجھے چھوڑا ہے ۔۔۔ ہم جانتے ہیں
    مصطفیٰ زیدی​
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر