یاس فارسی غزل :من کہ بر نمی تابم دردِ زیستن تنہا -میرزا یاس یگانہؔ چنگیزی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 14, 2020

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky

    غزل
    من کہ بر نمی تابم دردِ زیستن تنہا
    صبح دم چساں بینم شمعِ انجمن تنہا
    ترجمہ :میں کہ جینے کے درد کو تنہا برداشت نہیں کر پاتا، صبح دم کس طرح شمعِ انجمن کو تنہا دیکھوں.

    تا کجا اماں یابد از ہجومِ جاں بازاں
    گوشہ گیرِ فانوسے ، بہرِ سوختن تنہا
    ترجمہ :کب تک جاں بازوں کے ہجوم سے گوشہ گیرِ فانوس اکیلے جلنے کی خاطر اماں پائے گا؟

    ہر گلے و ہر خارے فتنہ ہا بر انگیزد
    الحذر دلِ حیراں صد بہار و من تنہا
    ترجمہ :ہر گل اور ہر خار فتنے اٹھاتا ہے. الحذر دلِ حیران!، سو بہاریں اور میں تنہا.

    ذوق می تواں دانست رنگِ حسنِ نادیدہ
    شاہدیست غمّازے ، بوے پیرہن تنہا
    ترجمہ :ذوق نادیدہ حسن کے رنگ سمجھ سکتا ہے. شاہد غماز ہے اور بوئے پیرہن تنہا

    طرفہ محشرے دارد از فریبِ فرداے
    زندہ زیرِ پیراہن ، مُردہ در کفن تنہا
    ترجمہ :کل کے وعدے کے فریب سے زندہ پیراہن میں اور مردہ کفن میں تنہا ایک طرفہ محشر سے دوچار ہیں.

    اے کہ کار ہا کردی ، مدفنے مہیّا کن
    تابکے نہاں دارد عیبِ من کفن تنہا
    ترجمہ :اے کہ تو کارنامے کر چکا مدفن مہیا کب تک میرا عیب تنہا کفن ڈھانپ کر رکھے.

    چارہِ پشیمانی ، خوش دلی و خوش کامی
    توبہ از ریا کاراں ، خندہا زمن تنہا
    ترجمہ :پشیمانی کا علاج خوش دلی اور خوش کامی،ریاکروں سے توبہ اور خود سے تنہا تبسم ہے.

    رہبرانِ خُود گُم را . جُز دعا چہ فرمایم
    پا سکستہ و حیراں ماندہ در وطن تنہا
    ترجمہ :ان رہبروں کے لیے دعا کے سوا اور کیا کہوں جو خود کو گم کر چکے، وطن میں تنہا پاشکستہ اور حیران پڑے ہیں.

    ناخدا زمن بگزر سوے دیگراں بنگر
    کارِ من بہ دریا در دست و پا زدن تنہا
    ترجمہ :اے ناخدا مجھے چھوڑ دوسروں پر نظر کر، میرا کام دریا میں تنہا دست و پا مارنا ہے.

    صد رفیق و صد ہمدم پر شکستہ و دل تنگ
    داورا نمی زیبد بال و پر و من تنہا
    ترجمہ :سو رفیق اور ہمدم پرشکستہ اور دل تنگ ہیں، اے داور بال و پر کا صرف مجھ تنہا پر ہونا اچھا نہیں لگتا.

    نکتہ دانِ خود شازم میرزا یگانہؔ را
    دل نمی تواں برداشت لذتِ سخن تنہا
    ترجمہ :میرزا یگانہ کو اپنا نکتہ دان بنا چکا ہوں، دل لذتِ سخن اکیلے برداشت نہیں کر سکتا تھا.
    میرزا یاس یگانہؔ چنگیزی
    مترجم : محمد ریحان قریشی
     
    آخری تدوین: ‏مئی 15, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,045
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    ہر گلے و ہر خارے فتنہ ہا بر انگیزد
    الحذر دلِ حیراں صد بہار و من تنہا

    کیا عمدہ شعر ہے، واللہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فہد اشرف

    فہد اشرف محفلین

    مراسلے:
    6,742
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Relaxed
    ترجمہ کے لحاظ سے مصرعہ یوں ہونا چاہیے
    داورا نمی زیبد بال و پر بہ من تنہا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر