سلیم احمد غزل : یوں نہ سیکھا تھا گریز اہلِ سفر نے پہلے - سلیم احمد

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 21, 2019

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    یوں نہ سیکھا تھا گریز اہلِ سفر نے پہلے
    قافلے آتے تھے منزل پہ ٹھہرنے پہلے

    میرے اندر جو خموشی تھی وہ باہر گونجی
    دلِ ویراں کی خبر دی مجھے گھر نے پہلے

    کھیل طفلی میں کٹی اور تھے لیکن مجھ کو
    اپنا دیوانہ کیا رقصِ شرر نے پہلے

    بڑھ گئی بات تو دل کو مرے الزام نہ دے
    سخن آغاز کیا تیری نظر نے پہلے

    خبرِ دُوریِ منزل تو کسے تھی لیکن
    حوصلہ ہار دیا اہلِ سفر نے پہلے

    اب خزاں میں کسی طائر کی تمنا بھی نہیں
    سائے پھیلائے بہت شاخِ شجر نے پہلے

    سرفروشانِ محبت کی ادا تو دیکھو
    طلبِ زیست میں نکلے ہیں یہ مرنے پہلے

    نقشِ دنیا طلبی یوں نہ اُترتا تجھ میں
    کر دیا موم تجھے آتشِ زر نے پہلے

    ہوش منزل کو بہت بعد میں آیا ہے سلیمؔ
    مجھ کو دیوانہ کیا راہ گزر نے پہلے
    سلیم احمد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر