غزل: یوں اپنی محبت کو پُر کیف بنانا ہے ٭ نصر اللہ خان عزیزؔ

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 31, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,105
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    یوں اپنی محبت کو پُر کیف بنانا ہے
    اک بار خفا کرنا، سو بار منانا ہے

    اسرارِ محبت کو اے دوست چھپانا ہے
    ہے شوق بہت سادہ پُرکار زمانا ہے

    جو داغِ گنہ سارے اک بار مٹا ڈالے
    اے چشمِ ندامت اب وہ اشک بہانا ہے

    جلووں کے تقاضے پر وہ عذرِ شباب ان کا
    کیا خوب تقاضا تھا، کیا خوب بہانا ہے

    افسانۂ غم ان کا کیا کہیے زمانے سے
    زخم ان کی محبت کا بس ان کو دکھانا ہے

    ٭٭٭
    ملک نصر اللہ خان عزیزؔ
     

اس صفحے کی تشہیر