1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

رئیس امروہوی غزل : ہجومِ غم سے مفَر کا خیال کیوں آیا - رئیس امروہوی

فرحان محمد خان نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 4, 2018

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,095
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    ہجومِ غم سے مفَر کا خیال کیوں آیا
    یہ سُوچتا ہوں سَحر کا خیال کیوں آیا

    بہت دنوں سے قدم بھی جدھر نہ اُٹھے تھے
    بہت دنوں میں ادھر کا خیال کیوں آیا

    جنونِ شوق تری سمت کیوں ہوا مائل
    جہاں نورد کو گھر کا خیال کیوں آیا

    ترے بغیر ہر اک انجمن ہے ویرانہ
    ترے بغیر سفر کا خیال کیوں آیا

    ابھی تو شہر میں قحطِ شرابِ ناب نہیں
    کسی کی مست نظر کا خیال کیوں آیا

    یہ کیا ہوا کہ ہوائے سحر نہیں آئی!
    فقط ہوائے سحر کا خیال کیوں آیا

    رہِ حیات بھی ناقابلِ گزر تو نہیں
    تمہاری راہ گزر کا خیال کیوں آیا
    رئیسؔ امروہوی
     

اس صفحے کی تشہیر