غزل: کلی پھوٹ آئے، چٹکنے نہ پائے ٭ نعیم صدیقیؒ

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 22, 2019

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    26,624
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    کلی پھوٹ آئے، چٹکنے نہ پائے
    تڑپ جائے بلبل، چہکنے نہ پائے

    گھُلے گرچہ سینے میں دل اے حمیت!
    مگر کوئی آنسو ٹپکنے نہ پائے

    وہی رند ہے رند اِس مے کدے کا
    جو کھل کر پیے اور بہکنے نہ پائے

    بڑی آزمائش ہے وہ اشکِ لرزاں
    جو امڈے مگر پھر ٹپکنے نہ پائے

    قفس کیا ہے؟ تنکوں کی بودی سی سازش!
    اسیر اس کے اندر پھڑکنے نہ پائے

    مزے عاشقی کے اگر ہیں تو جب ہیں
    سلگتی رہے اور بھڑکنے نہ پائے

    شبِ غم کی ظلمت کا اتنا تحفظ؟
    کہیں اک شرر تک چمکنے نہ پائے

    ٭٭٭
    نعیم صدیقیؒ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر