مظفر وارثی غزل: ساتھ ہر چند ہمسفر رکھنا

ساتھ ہر چند ہمسفر رکھنا
سامنے اپنی رہ گزر رکھنا

زندگی خواب بن کے رہ جائے
زانوئے شب پہ یوں نہ سر رکھنا

برف کی ناؤ میں تو بیٹھے ہو
آگ سی ذہن میں مگر رکھنا

خاک پر بھی اگر بناؤ محل
سنگِ بنیاد عرش پر رکھنا

بن گئے خول اب تو چہرے بھی
احتیاطِ دل و نظر رکھنا

لذّتیں لے چلیں تمھارے حضور
تلخیاں گفتگو میں بھر رکھنا

لو مظفرؔ متاعِ شعر و سخن
اب نہ تم آرزوئے زر رکھنا

٭٭٭
مظفر وارثی
 
Top