1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

غزل: دن تو سب ہی گزر جاتے ہیں، یادیں باقی رہ جاتی ہیں ٭ احمد حاطب صدیقی

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 24, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    26,773
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    دن تو سب ہی گزر جاتے ہیں، یادیں باقی رہ جاتی ہیں
    جان سے پیارے مر جاتے ہیں ، یادیں باقی رہ جاتی ہیں

    ان کا ملنا، ان سے بچھڑنا، یاروں کے اغیار کے طعنے
    زخم تو سارے بھر جاتے ہیں، یادیں باقی رہ جاتی ہیں

    ماضی کی ہر بزم سے ہم نے، مستقبل کے خواب سمیٹے
    لیکن خواب بکھر جاتے ہیں، یادیں باقی رہ جاتی ہیں

    کتنے نعرے، کیسے نظریے، اٹھتے ہیں سیلاب کی صورت
    پھر سیلاب اتر جاتے ہیں، یادیں باقی رہ جاتی ہیں

    راہِ سفر کا ایک اک منظر پاؤں پکڑ لیتا ہے مگر
    ہر پھر آخر گھر جاتے ہیں، یادیں باقی رہ جاتی ہیں

    زیست کی ہر منزل پر حاطبؔ، ملتے ہیں خوش ذوق احباب
    یہ احباب کدھر جاتے ہیں؟ یاد میں باقی رہ جاتی ہیں

    ٭٭٭
    احمد حاطب صدیقی​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر