امجد اسلام امجد غزل: خزاں کی دھند میں لپٹے ہوئے ہیں

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 26, 2019

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,458
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    خزاں کی دھند میں لپٹے ہوئے ہیں
    شجر مجبوریاں پہنے ہوئے ہیں

    یہ کیسی فصلِ گل آئی چمن میں
    پرندے خوف سے سہمے ہوئے ہیں

    ہواؤں میں عجب سی بےکلی ہے
    دلوں کے سائباں سمٹے ہوئے ہیں

    ہمارے خواب ہیں مکڑی کے جالے
    ہم اپنے آپ میں الجھے ہوئے ہیں

    دمکتے، گنگناتے موسموں کے
    لہو میں ذائقے پھیلے ہوئے ہیں

    مری صورت زمیں کے سارے منظر
    ترے دیدار کو ترسے ہوئے ہیں

    مثالِ نقشِ پا، حیران تیرے!
    ہوا کی راہ میں بیٹھے ہوئے ہیں

    نگاہوں سے کہو ہم کو سمیٹیں
    مری جاں ہم بہت بکھرے ہوئے ہیں

    ادھوری خواہشوں کا غم نہ کرنا
    کہ سارے خواب کب پورے ہوئے ہیں

    سمندر آسماں اور سانس میرا
    تری آواز پہ ٹھہرے ہوئے ہیں

    ہر اک رستے پہ کہتی ہیں یہ نظریں
    یہ منظر تو کہیں دیکھے ہوئے ہیں

    ستارے آسماں کے دیکھ امجدؔ
    کسی کی آنکھ میں اترے ہوئے ہیں

    ٭٭٭
    امجد اسلام امجدؔ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. Tahir javed

    Tahir javed محفلین

    مراسلے:
    14
    واہ بلاشبہ بہت خوب
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر