غزل: خداوندا ہلالِ نو مہِ کامل نہ بن جائے ٭ نصر اللہ خان عزیزؔ

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 18, 2020

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,125
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ”پریشاں ہو کے میری خاک آخر دل نہ بن جائے“
    خداوندا ہلالِ نو مہِ کامل نہ بن جائے

    وفائے دوست محرومِ شکیبائی نہ کر ڈالے
    مسيحا جس کو بننا ہے، وہی قاتل نہ بن جائے

    بڑی مشکل سے میں نے کائناتِ دل کو بدلا تھا
    مگر یہ ہو کے محرومِ سکوں پھر دل نہ بن جائے

    میں تیرے شوق کی قوت کا منکر تو نہیں لیکن
    محبت کے شناور، آرزو ساحل نہ بن جائے

    توجہ ان کی وجہِ راحتِ غم ہے مگر اے دل
    جسے آسان سمجھا ہوں وہی مشکل نہ بن جائے

    عزیزؔ اس دور میں ہے زندگی کا حق فقط اس کو
    جو منزل پر ہو اور آسودۂ منزل نہ بن جائے

    ٭٭٭
    ملک نصر اللہ خان عزیزؔ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,231
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    خوبصورت خوبصورت۔ شریکَ محفل کرنے پر شکریہ قبول فرمائیے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. عرفان سعید

    عرفان سعید محفلین

    مراسلے:
    6,703
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Mellow
    بہت خوب!
    پہلا مصرع بالِ جبریل میں اقبال کی غزل سے مستعار لیا گیا ہے۔ اصولی طور پر کیا واوین میں نہیں ہونا چاہیے؟
     
    آخری تدوین: ‏فروری 19, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  4. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,125
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    توجہ دلانے پر مشکور ہوں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر