لیاقت علی عاصم غزل: تلخیِ مے تلخیِ حالات کی توہین ہے

محمد تابش صدیقی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 29, 2018

  1. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    24,077
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    تلخیِ مے تلخیِ حالات کی توہین ہے
    نشّے میں سچ بولنا سچ بات کی توہین ہے

    گر نہیں ہے آئینہ پتھر اٹھا لو دوستو
    یونہی خالی ہاتھ پھرنا ہاتھ کی توہین ہے

    آدمی ہی آدمی سے بات کرتا ہے جناب
    بات کرنے میں بھلا کس بات کی توہین ہے

    آپ نے تصویر کھنچوائی مدد کرتے ہوئے!
    یہ تو کارِ خیر کی، خیرات کی توہین ہے

    پاس بیٹھے دور تکنا وہ بھی خاموشی کے ساتھ
    یہ تو ہنستے بولتے لمحات کی توہین ہے

    دل پہ چھانا اور آنکھوں میں نہ آنا بادلو
    یہ تو ساون کی ہتک، برسات کی توہین ہے

    باعثِ اعزاز ہے دریا میں ملنا قطرے کا
    کون کہتا ہے محبت ذات کی توہین ہے

    ٭٭٭
    لیاقت علی عاصم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  2. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    863
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    واہ - غزل اعلیٰ پائے کی ہے-
     
  3. سفیر آفریدی

    سفیر آفریدی محفلین

    مراسلے:
    403
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    محبت ذات کی توہین ہے
     

اس صفحے کی تشہیر