غزل برائے اصلاح

ارشد چوہدری نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 1, 2019

ٹیگ:
  1. ارشد چوہدری

    ارشد چوہدری محفلین

    مراسلے:
    1,276
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Brooding
    الف عین
    عظیم،یاسر شاہ،خلیل الرحمن ، فلسفی
    ----------------
    فاعلاتن فاعلاتن فاعلاتن فاعلن
    --------------
    نام تیرا لے رہا ہوں دل مرا بھرتا نہیں
    یاد کرتا ہوں تجھے بس اور تو کچھ کرتا نہیں
    -------------------
    آج تیری یاد میں میرا ہوا یہ حال ہے
    دل میں آنسو بہہ رہے ہیں آنکھ سے گرتا نہیں
    ----------------
    یاد رکھے جو تجھے تُو یاد رکھتا ہے اُسے
    یہ ترا فرمان ہے میں بات یوں کرتا نہیں
    ------------------
    ہو رہا ہے اس جہاں میں جو تجھے منظور ہے
    بن اجازت سے تمہاری اک پتّہ گرتا نہیں
    -------------
    زندگی اور موت ارشد کی ہے تیرے ہاتھ میں
    دشمنوں کے ہاتھ سے تو وہ کبھی مرتا نہیں
    ----------------













    یاد رکھے جو تجھے تُو یاد رکھتا ہے اُسے
    یہ ترا فرمان ہے میں بات یوں کرتا نہیں
    ہو رہا ہے اس جہاں میں جو تجھے منظور ہے
    بن اجازت سے تمہاری اک پتّہ گرتا نہیں
    زندگی اور موت ارشد کی ہے تیرے ہاتھ میں
    دشمنوں کے ہاتھ سے تو وہ کبھی مرتا نہیں
     
  2. سعید احمد سجاد

    سعید احمد سجاد محفلین

    مراسلے:
    302
    ارشد بھائی بہت خوب تھوڑی سی اور محنت کریں تخیل کے ساتھ ساتھ الفاظ اور ترتیب میں بھی خوبصورتی لائیں۔
    میرے خیال سے دل سے آنسو نہیں بہتے آنکھوں سے آنسو بہتے ہیں۔
    اگلے شعر میں آپ جس ذات سے مخاطب ہیں وہ ذات تو ہر کسی کے لئے رحیم ہے کریم ہے۔
    تو کو پورا باندھنا عجیب سا ہوتا ہے خوبصورتی تب آتی ہے جب واؤ گرا دی جائے
     
    • متفق متفق × 1
  3. عظیم

    عظیم محفلین

    مراسلے:
    6,628
     

اس صفحے کی تشہیر