1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $450
    $255.00
    اعلان ختم کریں

غزل برائے اصلاح: ساتھی تو کہاں حسین و جمیل رہ گئی

عمران سرگانی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 11, 2018

  1. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    سر الف عین و دیگر اساتذہ سے اصلاح کی درخواست ہے۔
    افاعیل: فاعلات فاعلن فاعلات فاعلن
    یا
    فاعلن مفاعلن فاعلن مفاعلن

    ہاتھ میں محبتوں کی سبیل رہ گئی
    ساتھی تو کہاں حسین و جمیل رہ گئی

    دل یہ ٹوٹ تو گیا ، دھڑکنیں کہاں رکیں
    اک ترے ملن کی خواہش طویل رہ گئی

    پھر سے رت بدل گئی ، اڑ گئیں وہ تتلیاں
    پھر سے وادیوں میں ویران جھیل رہ گئی

    وہ ذہن پہ نقش تصویر بھی اتر گئی
    ایک یادوں کی چھبی ہوئی کیل رہ گئی

    اک قدم پہ جسم سے جسم مل گئے مگر
    دو دلوں کی دوری پھر چند میل رہ گئی

    شکریہ۔۔۔
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    30,963
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہ زمین بھی دو لخت ہے۔ ہر حصے میں کم از کم لفظ ٹوٹنا نہیں چاہیے
    نو جمیل، ہش طویل، ران جھیل، غلط ہیں۔
    ہوئی فعو ہوتا ہے یہ کہیں لکھ چکا ہوں ۔فاع نہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    یہ سر غزل 2016 کی لکھی ہوئی ہے ۔ میں نے دوبارہ چیک نہیں کیا۔۔۔ اسے درست کرنے کی کوشش کرتا ہوں۔
     
  4. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    سر الف عین اب نظر ثانی کریں۔

    ہاتھ میں محبتوں کی سبیل رہ گئی
    ساتھی تو کہاں حسیں اور جمیل رہ گئی

    دل یہ ٹوٹ تو گیا ، دھڑکنیں کہاں رکیں
    اک ملن کی آرزو تھی طویل رہ گئی

    پھر سے رت بدل گئی ، اڑ گئیں وہ تتلیاں
    پھر سے وادیوں میں اک تنہا جھیل رہ گئی

    جو ذہن پہ نقش تھی فوٹو بھی اتر گئی
    یادوں کی چھبی ہوئی ایک کیل رہ گئی

    اک قدم پہ جسم سے جسم مل گئے مگر
    دو دلوں کی دوری پھر چند میل رہ گئی
     
    آخری تدوین: ‏جون 12, 2018
  5. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی مدیر

    مراسلے:
    17,105
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ذہن کا وزن فعو نہیں فاع ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    30,963
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میں دیکھ چکا تھا لیکن سوچا کہ قافیے کی غلطیاں دور ہونے کا انتظار کیا جائے!
    ہاتھ میں محبتوں کی سبیل رہ گئی
    ساتھی تو کہاں حسیں اور جمیل رہ گئی
    /// مطلع نہیں سمجھ سکا۔ سبیل مراد راستہ؟

    دل یہ ٹوٹ تو گیا ، دھڑکنیں کہاں رکیں
    اک ملن کی آرزو تھی طویل رہ گئی
    /// طویل رہنا محاورہ نہیں۔ اگر مان بھی لیا جائے تو 'تھی' کا رعلق پہلے نصف سے ہے اور 'طویل' دوسرے نصف۔
    اک ملن کی آرزو تھی، جو طویل رہ گئی
    بہتر ہو گا۔ مفاعلن کو مفاعلات کیا جا سکتا ہے

    پھر سے رت بدل گئی ، اڑ گئیں وہ تتلیاں
    پھر سے وادیوں میں اک تنہا جھیل رہ گئی
    /// ٹھیک۔ لیکن یہاں بھی اسی کا فائدہ اٹھا کر رواں بنایا جا سکتا ہے 'ایک اکیلی' کر کے۔

    جو ذہن پہ نقش تھی فوٹو بھی اتر گئی
    یادوں کی چھبی ہوئی ایک کیل رہ گئی
    /// ذہن پر جو نقش تھا/تھی کہو تو تلفظ درست ہو جاتا ہے۔ نقش تصویر کی طرح نہیں ہوتا جسے جب چاہے ٹانگ یا اتارا جا سکے۔ یہاں 'دیوار' استعمال کیا جا سکتا ہے ۔ چھبی، ہندی کا عکس کے معنی میں لفظ یا 'چبھی' کی غلط املا؟

    اک قدم پہ جسم سے جسم مل گئے مگر
    دو دلوں کی دوری پھر چند میل رہ گئی
    ۔۔۔ درست
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    اوکے سر شکریہ محمد تابش صدیقی ۔۔۔
    سر الف عین پہلی بار اس طرح کی بحر سے واسطہ پڑا ہے۔ میرا سر اردو ادب سے کوالیفیکیشن کے لحاظ سے دور دور تک کوئی واسطہ نہیں رہا۔ اب سوچ رہا ہوں اردو میں پرائیویٹ ماسٹر کر لیا جائے۔
    اسے مزید بہتر کرنے کی کوشش کرتا ہوں۔
     
    آخری تدوین: ‏جون 12, 2018
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    سر الف عین

    کھو گئیں وہ منزلیں اک سبیل رہ گئی
    ساتھی تو کہاں حسیں اور جمیل رہ گئی

    دل یہ ٹوٹ تو گیا ، دھڑکنیں کہاں رکیں
    اک ملن کی آرزو تھی ، جو طویل رہ گئی

    پھر سے رت بدل گئی ، اڑ گئیں وہ تتلیاں
    پھر سے وادیوں میں ایک اکیلی جھیل رہ گئی

    گھر جو لگائی تھی ، فوٹو بھی اتر گئی
    یادوں کی چبھی ہوئی ایک کیل رہ گئی

    اک قدم پہ جسم سے جسم مل گئے مگر
    دو دلوں کی دوری پھر چند میل رہ گئی
     
    آخری تدوین: ‏جون 13, 2018
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    30,963
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    فوٹو عام طور پر مذکر مانا جاتا ہے، تصویر مونث ہے۔
    مطلع اب بھی واضح نہیں
    باقی درست
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    ہاتھ میں جلی ہوئی اک قندیل رہ گئی
    ساتھی تو کہاں حسیں اور جمیل رہ گئی

    گھر جو لگایا تھا ، فوٹو بھی اتر گیا
    یادوں کی چبھی ہوئی ایک کیل رہ گئی

    اب سر ٹھیک ہے؟؟؟
    ایک اکیلی کی تقطیع کی صحیح سے سمجھ نہیں آئی۔
    کیا اسکی تقطیع دولخت ہونے کی بجائے اکٹھی نہیں ہو گئی؟
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    30,963
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گھر میں جو لگایا تھا
    کہو نا!
    مطلع میں قندیل صرف 'قدیل' تقطیع ہو رہا ہے اگرچہ اب کچھ مطلب برامد ہو رہا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    سر ایک اکیلی کی تقطیع کی صحیح سے سمجھ نہیں آئی۔
    کیا اسکی تقطیع دولخت ہونے کی بجائے اکٹھی نہیں ہو گئی؟
     
  13. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    ہاتھ میں جلی ہوئی اک قندیل رہ گئی
    ساتھی تو کہاں حسیں اور جمیل رہ گئی

    دل یہ ٹوٹ تو گیا ، دھڑکنیں کہاں رکیں
    اک ملن کی آرزو تھی ، جو طویل رہ گئی

    پھر سے رت بدل گئی ، اڑ گئیں وہ تتلیاں
    پھر سے وادیوں میں ایک اکیلی جھیل رہ گئی

    گھر میں جو لگایا تھا ، فوٹو بھی اتر گیا
    یادوں کی چبھی ہوئی ایک کیل رہ گئی

    اک قدم پہ جسم سے جسم مل گئے مگر
    دو دلوں کی دوری پھر چند میل رہ گئی
     
  14. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    سر الف عین یہ اور اشعار کا اضافہ کیا ہے۔

    پیار کا گواہ تھا جو ، جب وہی مکر گیا۔
    کون سی ہمارے پاس پھر دلیل رہ کئی۔

    قتل کر کے ہنستے ہیں مجھ پہ جملے کستے ہیں
    یا خدا ابھی بھی کچھ اور ڈھیل رہ گئی؟

    آخری دفعہ ملو ، بات پیار کی کریں
    پیار کی زندگی اب قلیل رہ گئی۔
     
    آخری تدوین: ‏جون 13, 2018
  15. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی مدیر

    مراسلے:
    17,105
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    گواہ کا وزن مفاع ہے۔
    بحر میں نہیں ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  16. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی مدیر

    مراسلے:
    17,105
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    مصرعوں کے اختتام پر ختمہ کی ضرورت نہیں ہوتی۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    پیار کا گواہ تھا جو ، جب وہی مکر گیا
    یہ سر ' فاعلات فاعلات فاعلات فاعلن کے وزن میں ہے۔

    اور اس مصرعے کی کریکشن کر دی ہے۔۔۔
    پیار کی یہ زندگی اب قلیل رہ گئی۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی مدیر

    مراسلے:
    17,105
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    غزل کی بحر تو فاعلن مفاعلن فاعلن مفاعلن نہیں؟
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    79
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    جی دونوں کا وزن ایک ہے۔
    فاعلات فاعلن فاعلات فاعلن
    یا فاعلن مفاعلن فاعلن مفاعلن
    اسی طرح
    فاعلن مفاعلات فاعلن مفاعلن
    یا فاعلات فاعلات فاعلات فاعلن
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    30,963
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    قندیل کا لکھ چکا ہوں کہ قافیہ غلط ہے۔ یہ مفعول ہے 'علات' نہی۔
    نئے اشعار میں ہنستے اور کستے کی ے کا اسقاط اچھا نہیں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر