غزل برائے اصلاح : جب مصور کوئی تصویر بناتا ہی نہیں

حسین علی ہاشمی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 23, 2020

  1. حسین علی ہاشمی

    حسین علی ہاشمی محفلین

    مراسلے:
    3
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    جب مُصوِّر کوئی تصویر بناتا ہی نہیں
    پھر یہ تصویر کا ڈر کیا ہے کہ جاتا ہی نہیں

    ہم سبھی لوگ جو اَطراف سے بند دائرہ ہیں
    ایسی تقدیر کوئی ہاتھ مٹاتا ہی نہیں

    تم وہی ہو نا! جسے میں نے کہیں ڈھونڈا تھا
    کیا کروں حافِظہ اب یاد دلاتا ہی نہیں

    میرے حصّے کے چراغوں کو بجھا رہنے دو
    جلتے سُورج کو کوئی آگ دکھاتا ہی نہیں

    ایک مُدِّت سے کہیں آگ، کہیں پانی ہے
    آگ بھجتی ہی نہیں پانی جَلاتا ہی نہیں

    یہ سبھی جسم سے پہلے کی کہانی ہے میاں
    جسم کے بعد کوئی قبر پہ آتا ہی نہیں

    (حُسین ہاشمی)
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,537
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جب مُصوِّر کوئی تصویر بناتا ہی نہیں
    پھر یہ تصویر کا ڈر کیا ہے کہ جاتا ہی نہیں
    ... مطلع واضح نہیں ہوا ، تصویر کا دہرایا جانا بھی اچھا نہیں

    ہم سبھی لوگ جو اَطراف سے بند دائرہ ہیں
    ایسی تقدیر کوئی ہاتھ مٹاتا ہی نہیں
    .. بند دائرہ بحر میں نہیں، محض' بن دائرہ' آتا ہے۔ اگر مکمل آ بھی جائے تو تنافر ہو جاتا ہے

    تم وہی ہو نا! جسے میں نے کہیں ڈھونڈا تھا
    کیا کروں حافِظہ اب یاد دلاتا ہی نہیں
    ... درست

    میرے حصّے کے چراغوں کو بجھا رہنے دو
    جلتے سُورج کو کوئی آگ دکھاتا ہی نہیں
    .. درست

    ایک مُدِّت سے کہیں آگ، کہیں پانی ہے
    آگ بھجتی ہی نہیں پانی جَلاتا ہی نہیں
    .. واضح نہیں ہوا، پانی آگ بجھاتا ہے یا جلاتا ہے؟ دوسرے مصرعے میں پانی کی ی ساقط ہو رہی ہے

    یہ سبھی جسم سے پہلے کی کہانی ہے میاں
    جسم کے بعد کوئی قبر پہ آتا ہی نہیں
    ... دونوں مصرعوں میں 'جسم' کی تکرار اچھی نہیں
     

اس صفحے کی تشہیر