صاد اوردوسری نظمیں - اعجاز عبید

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 28, 2007

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    احساس


    اب تک جو کچھ بھی سوچا ، سمجھا، جانا اور دیکھا تھا
    تیرے روپ کا سپنا تھا ، یا میری آنکھ کا دھوکا تھا

    تو بھولی بھالی سی لڑکی جس کے روپ ہزار
    تیرے سوابھی گھٹا ۔چمیلی ۔ گگن سے مجھ کو پیار
    تو اک ست رنگی سی دھنک اور پھر چوڑی کے رنگ
    میں آئینے کا ٹوٹا ٹکڑا اور وہ بھی بے رنگ
    تو گوری جوسیج پہ سوئے مکھ پر ڈارو کیس
    میں رمتا جوگی جو ہر پل آئے بدل کر بھیس
    تو وہ بہار کا پھول کہ جس سے بادِ صبا کو پیار
    ہیں جیسے کسی ویرانے میں اک تھو ہر کی قطار
    یا وہ برگ خزاں جو پاؤں سے چرمر ٹوٹ گیا
    پھر کیوں مجھ کو دکھ ہو تیرا ہاتھ جو چھوٹ گیا

    تو وہ تیز ندی جیسے گنگا کاویری پیاس
    میں ریگستانوں کی ترشنا ۔۔ میری انمٹ پیاس
    تو نے ہاتھ جھٹک کے دیا مجھ ان سب کا احساس
    ۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک سیاسی نظم
    (ایمرجینسی کا زمانہ

    وہ دن آگیا
    جب ہر اک آنکھ
    سرخ
    اپنے ہی خون
    اپنے ہی چلتے ہوئے سرخ شعلے
    کی سرخی سے پُر تھی

    تو اس پل خدا نے
    فرشتوں کو بھیجا
    کہ ہر سمت جائیں
    زمیں پر جہاں بھی کہیں
    سرخ کے ماسوا اور کچھ رنگ
    ان کو دکھائی دے
    اس کو
    سرخ ہی رنگ سے
    پینٹ کر دیں
    ۔0۔0۔0۔0۔0۔
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    فیض اور فیض کے غم کے نام


    موسمِ گل کے قدم
    جانے کہاں کون سے رستے پہ مڑے
    اس طرف تو نہیں آئے شاید
    موسمِ گل کے قدم
    راستہ گھر کا مرے بھول گئے ہیں شاید
    (جو کوئی مشکل تو نہ تھا )

    ابتدا سے مری تقدیرمیں لکھّے ہیں وہی
    دشتِ امکاں کے سراب
    جو مرے خون میں شامل ہیں
    بصارت میں، سماعت میں گھُلے
    گفتگو ۔ لمس۔ نظر میں شامل
    اور یہ عالم ہے مرا
    کچھ پتہ ہی نہیں چلتا مجھ کو
    کب ہوئیں ، جلوہ گہِ وصل کی شمعیں روشن
    کب کسی مہرِ جدائی سے اندھیرے پھوٹے
    خواہشِ ہجر ہو کب عرضِ وصال
    پھول مہکیں تو ہنسا جائے
    کہ رویا جائے
    دل جو خوں ہو
    تو میں روؤں کہ ہنسوں
    جشن کا غم ہو کہ ماتم کی خوشی
    اب تو کچھ بھی مجھے احساس نہیں ہوتا ہے

    موسمِ گل کےقدم
    جانے کب آئیں مرے گھر کی طرف
    کب مٹیں گے یہ سراب
    کس طرف جاکے رکے ’’ قافلۂ نکہت غم‘‘
    ۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    طَیراً اَبَابِیل َ


    ہر سمت
    تا حدِّ نظر
    بس گرد ہے
    اور کچھ ڈرونی سی صداؤں کی کئی موجیں
    یہ سب مل کر مرے قرطاس پر شب خون آور ہیں

    اے ابرہہ ۔۔۔ اے ابرہہ
    • تو مطّلبؓ کی بکریاں چھوڑے نہ چھوڑے
    ہا تھیوں کے لشکروں کو دور لے جا
    یہ نظم لکھنے دے مجھے۔۔۔ اپنے خدا کے نام
    بس ایک ننھی منّی نظم
    کہ ترے ہاتھیوں کے لشکروں کی گرد سے میرے قلم کی روشنائی
    خشک ہو جانے کو ہے
    قرطاس پر لکھے ہوئے الفاظ سب مٹنے کو ہیں

    اے ابرہہ ..............! اے ابرہہ !!
    بس اک ذراسی نظم لکھنے دے مجھے

    میرے خدا .............. میرے خدا ........!!
    تیری ابابیلیں کہاں ہیں ؟
    ۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک کہانی


    بہت دیر سے میں بہت پر سکوں تھا
    بڑی دیر سے وہ بھی خوش خوش بہت تھی
    بڑی دیر سے میں بہ آرام بیٹھا
    یہ کہتا رہا.............
    ’’ میری تھی خوش نصیبی
    کہ مجھ کو ملی ہے بہت پیاری بیوی
    کہ جس نے مجھے پیار سے بھی نوازا
    مجھے ایک ننھی سی گڑیا بھی دی ہے
    کہ اگلے مہینے کے اٹھارویں دن
    جو دو سال اپنے مکمل کرے گی
    بہت باتیں کرتی ہے
    نٹ کھٹ بہت ہے ‘‘

    بہت دیر سے وہ بھی خوش خوش بہت تھی
    سناتی رہی اپنے شوہر کی باتیں
    ’’ ابھی اپنےدفتر سے آتے ہی ہوں گے۔
    تھکے ہارے آتے ہیں ۔جب چائےپی کر
    بلاتے ہیں بچے کو ، کچھ کھیلتے ہیں
    کبھی جاتے ہیں پارک میں سب کو لے کر
    کوئی فلم اچھی اگر چل رہی ہو
    کہ شاپنگ ہی کرنےنکلتے ہیں گھر سے
    کسی چینی ہوٹل میں کھاتےہیں کھانا
    کبھی وہ جو ہوٹل ہے اُڈپی صد رمیں
    وہاں اڈلی ڈوسا کھلاتے ہیں سب کو
    بہت دھیان رکھتے ہیں بچے کا ‘‘
    اور پھر
    لجاتے ہوئے سے کہا ۔۔۔’’ اور مرا بھی ’’

    اچانک وہ رونے لگی ہچکیوں سے
    کہ بچے کو مجھ سےملانے کی خاطر
    جب ’اعجاز‘ کہہ کر پکارا تھا اس نے
    نہ میں ضبط کر پایا اپنے بھی آنسو
    اسے یہ بتا بھی نہ پایا
    کہ میں نے بھی نام اپنی لڑکی کا ’نکہت‘ رکھا ہے
    ۔0۔0۔0۔0
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    منظر ایک


    دروازے پر ایک پرانا چہرہ نظر آتا ہے
    کھٹیا پر بیٹحے بوڑھے حقے کی گڑ گڑ گڑ گڑ
    اک پل کو تھمتی ہے
    ہاتھ بھوؤں تک اٹھتے ہیں
    اُپلے چھت پر رکھتی لڑکی سُن سی رہ جاتی ہے
    ناند کے پاس کھڑی عورت
    ٹک دیکھتی رہتی ہے
    کانپتے ہاتھ ۔ چمکتی آنکھیں ۔ تھر تھر کرتے ہونٹ
    سارے بدن سے ’بیٹا ‘ کہہ کر بڑھتی ۔ گر جاتی ہے
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    منظر دو


    کچی مسجد کے پیچھے تھوہر کی لمبی قطار
    رستے میں کچھ گولیاں کھیلتے ۔ بچے بھی دوچار
    رستے کے اس طرف پڑاگھورے کا بڑا انبار
    کچھ چنتی ۔ کچھ چگتی مرغی ۔ اور اس کے چوزے
    تال کے بند پہ پھبلے ہوئے رنگین کئی کپڑے
    گھر کی چھت پر سیم کی بیلیں۔ بکہرے ہوئے اُپلے
    جو ہڑ کے گندے پانی میں نہاتی دو بھینسیں
    گھڑے لیے کچھ سانوریاں پنگھٹ کے رستے میں
    مندر کی کلسی پر بیٹھی کچھ بوڑھی چیلیں
    دور شہر کے رستے میں جاتی ہوئی ایک برات
    اور ادھر کانٹوں کی باڑھ کے پیچھے ہلتے پات
    ننھے ننھے اجلے اجلے دانوں کی برسات
    چُپ چُپ گرتی لیکن سوپ میں چھن چھن کرتی جوار
    رک رک کر نیزے سے چبھوتی ایک سوچ ہر بار
    کتنا غلّہ گھر میں بچے کیا جائے گا بازار
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    منظر تین


    ناریل کے درختوں میں پاگل ہوا
    سیٹیاں سی بجاتی رہی سارا دن
    کنج میں اپنے من موہی کی منتظر
    شام کےدھیان میں سوچ کر کیا کیا کچھ
    ایک لڑکی لجاتی رہی سارا دن
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    منظر چار


    ہاتھ میں دوپٹے کا کونہ ۔ تھر تھر کرتے ہونٹ
    دروازے کی جھری سے لگے کچھ چوکنے سے کان
    در میں کسی ممکن سوراخ کی کھوج لگاتی آنکھ
    کچھ اپنے میں لجانے کانپتے جسم کا سندر لوچ
    دروازے کے پار .........
    کھنکتی عجب سی شوخ ہنسی
    چوکھٹ پر بھیا کی پوری جلتی ہوئی سگریٹ
    بھابھی کی نٹ کھٹ نٹ کھٹ سی چوڑی کی کھن کھن کھن
    کچھ ہنستی ساون کی بوندیں ۔ کچھ بجتے کنگن
    کچھ جنگل میں ہونکتے سناٹے کی بھاری صدا
    کچھ باغوں کی طرح کمرے میں سر سر کرتی ہوا

    اور ادھر ....۔ وہی تیز سی سانسیں ۔ جلتے جلتے ہونٹ
    ہاتھ میں دوپٹے کا کونہ .۔۔ چوکنّے سے کان
    ۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔0۔`

    نظمیں ختم شد
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,966
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ماہئے

    بارہ ماسا
    نعتیہ ماہئے
    مزید ماہئے
     

اس صفحے کی تشہیر