ای بک تشکیل سید منیف اشعر ۔۔۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 26, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    تلخ و شیریں
    از
    سید منیف اشعر

    سے منتخب کلام

    ۔۔۔۔۔۔۔۔



    دعا ۔ اپنے جگر پاروں کے نام


    مری دعا ہے دعا مستجاب دوں بچو
    تمہیں حیات سے بھر پور خواب دوں بچو

    تمہارے بیچ اندھیروں کے سامنے آکر
    تمہیں دمکتا ہوا آفتاب دوں بچو​
     
    آخری تدوین: ‏جون 26, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    حمد باری تعالیٰ

    حمدِ رب کر سکے بیاں کوئی
    کاش ایسی بھی ہو زباں کوئی

    اتنی قدرت کسے ہے دنیا میں
    قدرت حق کرے عیاں کوئی

    کیا ادا ہو کسی سے حقِ ثناء
    ملتا جلتا کہاں گماں کوئی

    رب ہے سب عالموں کا تُو یارب
    ہے کہاں غیر کا نشاں کوئی

    کیسے ممکن ہے اک سوا تیرے
    دائیں بائیں، یہاں وہاں کوئی

    اپنے سائے میں رکھنا اے ستار
    ہم کو کہہ دے نہ بے اماں کوئی

    ماسوا تیرے کِس کا ڈر ہم کو
    کیا مٹائے گا عزو جاں کوئی

    کوئی بھی عزم کیا چھُپے اُس سے
    جس سے سینہ نہیں نہاں کوئی

    تجھ سے اشعر کی التجا ہے یہی
    دل میں آئے نہ بدگماں کوئی​
     
    • زبردست زبردست × 2
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    نعت رسول ﷺ


    جن لبوں پر محمد ﷺ کا نام آئے گا
    چومنے ان کو کوثر کا جام آئے گا

    پشت پر جس کی ختم نبوت بھی ہو
    لے کے وہ اک نظام ِدوام آئے گا

    نفسا نفسی کے عالم میں یا مصطفٰی ﷺ
    آپ ﷺ کا نامِ نامی ہی کام آئے گا

    عاصی و ابن عاصی پہ اتنا کرم
    کیا اسے اور اذنِ سلام آئے گا

    کیا جبیں کے مقدر میں پھر یا نبی ﷺ
    آپ ﷺ کے نقشِ پا کا مقام آئے گا

    کاش کہہ دے خدا زندگی کا تری
    جا مدینے میں ہی وقت شام آئے گا

    مجھ کو اشعر یقین ہے وطن میں مرے
    ایک دن مصطفائی نظام آئے گا​
     
    • زبردست زبردست × 1
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    یہ کس نے کہہ دیا سب کچھ ہوا پر منحصر ہے
    ہمارا بجھ کے جل اٹھنا دعا پر منحصر ہے

    ہم انداز جنوں اپنا ابھی کیسے بتا دیں
    ہماری سرکشی طرز جفا پر منحصر ہے

    ہماری بات کو کچھ لوگ مانیں یا نہ مانیں
    جمال ِیار تو حسنِ حیا پر منحصر ہے

    ہمارا زندگی بھر صرف تیرا ہو کے رہنا
    نہیں مشکل مگر تیری وفا پر منحصر ہے

    مری جانب سے امکان تقرب یا تردّد
    سبھی کچھ آپ کے اذن و ادا پر منحصر ہے

    تصور ایک پیکر تو بنا لاتا ہے لیکن
    وصال خوشبوئے جاناں صبا پر منحصر ہے

    مرض سے کیا علاقہ کوچ کر جانے کا اشعر
    یہ قصہ تو محض امرِ قضا پر منحصر ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    نفرتیں احباب کی یوں دوستی کے ساتھ ہیں
    جیسے نادیدہ اندھیرے روشنی کے ساتھ ہیں

    اب قلندر کی صدا میں کیا کشش پائیں گے لوگ
    آج تو سب مال و زر کی دلکشی کے ساتھ ہیں

    کون خوشیوں پر کرے تکیہ جو کل تک ہوں نہ ہوں
    درد و غم اپنائیے جو زندگی کے ساتھ ہیں

    خُود فریبی ہے کہ میں اُس کے لئے سجدے میں ہوں
    ورنہ کتنی خواہشیں اِس بندگی کے ساتھ ہیں

    ضرب تیر ِنیم کش کا لطف کچھ ہم کو بھی دے
    ہم بھی اپنی آرزوئے خُودکشی کے ساتھ ہیں

    کیسے آجائیں ابابیلیں لئے کنکر کہ ہم
    جنگ ِبے مقصد میں شامل بے دلی کے ساتھ ہیں


    ہو سکے تو دوستوں میں کچھ تبسم بانٹ دو
    غم کے افسانے تو ورنہ ہر کسی کے ساتھ ہیں

    برہمی و بے رخی سے واسطہ پڑنا ہی تھا
    عشوہ و ناز و ادا تو عاشقی کے ساتھ ہیں

    وہ ہمارا ہمسفر ہونے نہیں پایا مگر
    ہم اُسی کے ساتھ تھے اشعر، اُسی کے ساتھ ہیں​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    اِنصاف کا امکاں مجھے حاصل ہی نہیں ہے
    مُنصف بھی وہی ہے مِرا قاتل ہی نہیں ہے

    میں سمجھا تھا اُس کی کوئی منزل ہی نہیں ہے
    اور سینے میں جھانکا تو وہاں دل ہی نہیں ہے

    میں کیسے کہوں اس سے بھی پہنچے گی اذیت
    وہ شخص تو احباب میں شامل ہی نہیں ہے

    امواج حوادث سے نہ کیوں ربط بڑھا لوں
    تاحد ِنظر جب کوئی ساحل ہی نہیں ہے

    پھر کیسے نہ رکھ دیتا مرے ہاتھ پہ قیمت
    بے لوث محبت کا وہ قائل ہی نہیں ہے


    کس کام کے پھر رہ گئے ماضی کے حوالے
    تجدید وفا پر تو وہ مائل ہی نہیں ہے

    مجھ سے مری بے مہری کا شکوہ ہی کرے کون
    پیاراپنوں کا اتنا مجھے حاصل ہی نہیں ہے

    آسکتی ہے مولا کی مدد آج بھی لیکن
    حقدار جو کہلائے وہ سائل ہی نہیں ہے


    سمجھے گا بھلا کون ترے درد کو اشعر
    تجھ سا تو کوئی دہر میں گھائل ہی نہیں ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    جس میں ذوقِ ستم نہیں ہوتا
    کچھ بھی ہو ،پر صنم نہیں ہوتا

    سچ تو یہ ہے کہ سچی باتوں سے
    تلخ تر کوئی سم نہیں ہوتا

    صبر کا حوصلہ اُسے بھی ہو
    اتنا ظالم میں دم نہیں ہوتا

    جو بھی لکھ دے قصیدۂ حاکم
    اُس پہ انعام کم نہیں ہوتا

    میرے ساقی سبھی کی نظروں میں
    حاصل زیست جم نہیں ہوتا

    گر وفا ایک بار مر جائے
    دوسرا پھر جنم نہیں ہوتا

    عمر بھر ایک ساتھ رہنے کا
    فیصلہ ایک دم نہیں ہوتا

    شکر ہے مجلسی تبسم سے
    اک ذرا درد کم نہیں ہوتا

    اٹھ نہ پاتے مرے قدم اشعر
    وہ اگر ہم قدم نہیں ہوتا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ستم،دیکھو شکیبائی سے بڑھ کر ہو نہ جائے
    دل دریا کہیں گر کر سمندر ہو نہ جائے

    مری پستہ قدی کی بات ثابت کرتے کرتے
    تری قامت کہیں میرے برابر ہو نہ جائے


    محبت کر رہا ہوں میں جنوں کی آرزو میں
    مگر دشت جنوں ہی کل مرا گھر ہو نہ جائے

    اگر چہ عقل کے پہرے سے لگے رہتے ہیں اس پر
    دل سرکش مگر قابو سے باہر ہو نہ جائے

    فقط اس خوف سے اک اور ہجر ت کی ہے میں نے
    مری طرح میری اولاد بے گھر ہو نہ جائے

    وہ جب چاہے بھلا دے گا مجھے کہتا ہے اشعر
    تو پھر کیوں بے نشاں وہ میرے اندر ہو نہ جائے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    اُنہیں خوشی ہے کہ باہم شکایتیں نہ رہیں
    ہمیں یہ خوف کہ شاید محبتیں نہ رہیں

    میں بے نیازِ زمانہ نہ ہوسکا پھر بھی
    زمانے بھر کی اگرچہ ضرورتیں نہ رہیں

    نہ کوہ کن ہے کوئی اب نہ کوئی دشت نوَرد
    محبتوں میں اب ایسی قباحتیں نہ رہیں

    سکون مجھ کو بہت مُضطرب سا کردے گا
    میں کیا کروں گا جو اُس کی شرارتیں نہ رہیں

    ہمارے آج کے بچے دلیل مانگتے ہیں
    سو کوہ قاف کی شیریں حکایتیں نہ رہیں


    سخن کو آگ لگا دوں گا میں سر محفل
    غزل میں گر کبھی تیری شباہتیں نہ رہیں

    یہ فیض وقت کے مرہم کا میری ذات پہ ہے
    کہ سرخروئی پہ مائل جراحتیں نہ رہیں

    گلہ کسی سے بھی مہر و وفا کا کیسے کریں
    خود اپنی جھولی میں اپنی روایتیں نہ رہیں


    میں صرف کانٹوں کی بد صورتی کو کیوں روتا
    کئی گلوں میں بھی پہلی صباحتیں نہ رہیں

    نہ جانے کس کی نظر لگ گئی ہمیں اشعر
    ہماری ذات پہ اُن کی عِنایتیں نہ رہیں​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    سُخن کی اپنے نہ جانے حیات ہو کہ نہ ہو
    کسی کی بزم میں پھر اپنی بات ہو کہ نہ ہو

    ابھی تو عیش کے دن ہیں مگر خدا معلوم
    شریکِ غم بھی شریکِ حیات ہو کہ نہ ہو

    وہ جس کے بعد بہت دیر تک سویرا رہے
    نصیب شہر میں اب ایسی رات ہو کہ نہ ہو

    جو متقی ہیں انہیں کو یہ ڈر بھی رہتا ہے
    کہ سہل پنے لئے پل صراط ہو کہ نہ ہو


    ارادہ کرتا ہوں ،چلتا ہوں، لوٹ آتا ہوں
    اب اس گلی میں وہ پہلی سی بات ہو کہ نہ ہو

    جلانے والے مجھے اتنا سوچ لے تو بھی
    تری خوشی کو بھی حاصل ثبات ہو کہ نہ ہو

    تجھے مٹا کے بھی اشعر مجھے سکوں نہ ملا
    میں جس کو مات سمجھتا ہوں مات ہو کہ نہ ہو ​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    کئی دن سے حصار ِآزمائش میں کھڑا ہوں
    میں اپنے دوستوں سے طالبِ حرف ِدعا ہوں

    سمجھتا ہے کوئی مخلص مجھے کوئی منافق
    اُتر آتا ہے سب کا عکس مجھ میں ،آئینہ ہوں


    دیا ہوں میں، بجھا دو یا مجھے تسلیم کرلو
    ہواؤ ،تم مرے چاروں طرف ہو، جانتا ہوں

    اب وجد کی طرح کاٹو زباں میری کہ میں بھی
    اساسِ اہلیت پر اپنا حصہ مانگتا ہوں

    بغاوت کے سب الزامات سچے کر دکھاؤں
    مگر کیا کروں پابندِ زنجیرِ وفا ہوں

    سوا تیرے نظر کچھ دیکھنا چاہے نہ میری
    ہجومِ مہ و شاں میں بھی اکیلا سا رہا ہوں

    وہ ظالم صبر کی طاقت سے واقف تھا نہ اشعر
    وگر نہ سوچتا کیسے کہ میں بے آسرا ہوں​
     
  12. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    درد جب آنکھ سے اشکوں کی روانی مانگے
    مجھ سے دل ضبط کا انداز ِجوانی مانگے

    بات ایک روز نئی چاہئے سچ ہو کہ نہ ہو
    عالمِ طفل تو بس کوئی کہانی مانگے

    کیا بھلا خاک کرے گا وہ کوئی راہبری
    ہر مسافر سے جو منزل کی نشانی مانگے

    عشق کیا عام ہوا اپنا کہ دنیا ہم سے
    ایک اک لمحے کی اک رام کہانی مانگے

    گھر تو پیارا ہے ہمیں اب بھی رگ جاں کی طرح
    گھر کا ماحول مگر نقل مکانی مانگے


    اپنا ہر عکس نئے رنگ میں دیتا ہے ہمیں
    اور ہم سے وہی تصویر پرانی مانگے

    درد اظہار کا طالب تو ہے اشعر لیکن
    رونمائی کے لئے طرز نہانی مانگے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ہے کہیں ہم سا مصور تو بتائے کوئی
    عمر بھر ایک ہی تصویر بنائے کوئی

    اپنی راہوں پہ مجھے ایسا لگائے کوئی
    اور رستہ ہی نظر مجھ کو نہ آئے کوئی

    اُن کے آنے کی خبر ہے تو بتاؤ کیسے
    اپنی دہلیز پہ آنکھیں نہ بچھائے کوئی

    دل میں بڑھ جائے تو آنکھوں سے چھلک پڑتا ہے
    سرکشی درد کی پھر کیسے چھپائے کوئی

    آ نہیں سکتا تو یادوں میں بسیرا کیوں ہے
    اِس سے اچھا ہے کبھی یاد نہ آئے کوئی

    میرے ہر خواب کو اِک چاند سا چہرہ دے کر
    آرزو وصل کی ہر رات جگائے کوئی

    کرکے ہر روز نیا وعدۂ تجدیدِ وفا
    صاف کہہ دیجئے اب دل نہ جلائے کوئی

    مینا و جام کی بانہوں میں نہ جاؤں لیکن
    بادۂ چشم تو جی بھر کے پلائے کوئی

    میں تو صحرا بھی چمن زار بنا دوں اشعر
    اپنے پیکر کی بہاریں تو دکھائے کوئی​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    خرد کی پاسبانی میں دوانے دیکھتا ہوں
    حقیقت جانتا ہوں اور فسانے دیکھتا ہوں

    حیات آگیں رہا ہے جن کی تعبیروں کا منظر
    ابھی تک میں وہی سپنے سہانے دیکھتا ہوں

    کوئی تعداد حمد ِرب مقرر کیسے کر دوں
    ہر اک تسبیح میں گنتی کے دانے دیکھتا ہوں

    تری نظر ِکرم اغیار پر اٹھتی ہے جب بھی
    میں اپنے دل پہ تیروں کے نشانے دیکھتا ہوں

    کسی راوی پہ اپنا فیصلہ دینے سے پہلے
    میں اس کی داستاں کے تانے بانے دیکھتا ہوں

    پلٹ کر دیکھنے سے ڈر ہے پتھر ہو نہ جاؤں
    میں رکھ کر سامنے گزرے زمانے دیکھتا ہوں

    یقیں سا ہے کہ تعبیریں بھی دیں گے خواب میرے
    سویرا ہوتے ہی اٹھ کر سرہانے دیکھتا ہوں

    میں جب بھی اعتبار زندگی کرتا ہوں دم بھر
    اجل کے ان گنت رنگیں بہانے دیکھتا ہوں

    بھلا کیا کام آیا وقت کا مرہم بھی اشعر
    گل تازہ کی طرح دکھ پرانے دیکھتا ہوں​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    یہ راز ِعشق تو اس کے خیال ہی میں نہیں
    علاجِ درد بیانِ ملال ہی میں نہیں

    تمہاری باتوں کا اپنا الگ ہی جادو ہے
    کشش تمام بدن کے جمال ہی میں نہیں

    فنِ سخن کی نمائش بھی ہے عزیز مجھے
    کہ لُطف ِزیست حصولِ کمال ہی میں نہیں

    مشاہدات کا اپنا ہے ایک پیمانہ
    شمار عمر کا بس ماہ و سال ہی میں نہیں

    تمہارے حسن کا پرتو ہے بس مری معراج
    کہ تابِ جلوہ تو میری مجال ہی میں نہیں

    میں تیری بات پہ خاموش ہوں تو حیرت کیا
    کِسی جواب کا امکاں سوال ہی میں نہیں

    اسے تو ہم نے کئی زاویوں سے دیکھا ہے
    وہ بے مثال سا کچھ خدو خال ہی میں نہیں

    گزار آئے ہیں ماضی میں ایسے دور کئی
    یہ عصرِ درد فقط اپنے حال ہی میں نہیں

    فراق یار کا اپنا ہے اک مزہ اشعر
    تمام لطفِ محبت وصال ہی میں نہیں​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    شمع ِانمول کو ارزَاں نہیں ہونے دیتا
    وہ اسے شعلہ بہ داماں نہیں ہونے دیتا

    لاکھ ہو ذہن پراگندہ و برہم لیکن
    وہ کبھی زلف پریشاں نہیں ہونے دیتا

    عین ممکن ہے کہ پھر کوئی بلندی پا جائے
    آدمی خود کو ہی اِنساں نہیں ہونے دیتا


    میں تو جاتا ہوں تکلف کی ردا سر پہ رکھے
    ہاں مگر وہ مجھے مہماں نہیں ہونے دیتا

    درمیاں فاصلہ رکھتا ہے جو ساحل پہ سدا
    مجھ کو تنہا پئے طوفاں نہیں ہونے دیتا

    اشک نظروں میں جو آ جائیں تو عزت کھو دیں
    میں نمائش سر ِمژگاں نہیں ہونے دیتا

    بس دیئے جاتا ہے ہر وقت دعائیں اشعر
    وہ مری موت کو آساں نہیں ہونے دیتا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ہمیں نہیں ہیں فقط جان سے لگائے ہوئے
    دلوں میں خواب سبھی لوگ ہیں سجائے ہوئے

    زمانہ ہو گیا لب پر فغاں کو آئے ہوئے
    "تمہاری تیغِ محبت کا زخم کھائے ہوئے"

    مرے قلم کو ہے عادت نگارشِ حق کی
    تمہارے حوصلے سو بار آزمائے ہوئے

    اب اپنا کہتے ہوئے میں کِسی کو ڈرتا ہوں
    کہ میرے اپنے تو سب لوگ ہی پرائے ہوئے

    مری خوشی میں وہاں اِک عجب چراغاں تھا
    دئے ہزاروں سجے تھے مگر بجھائے ہوئے

    چلیں جو آندھیاں فرقت کی دیکھ لینا تم
    نہ آسکے گا تمہیں بھی سکوں بن آئے ہوئے

    اگر چہ بھول گئی رقصِ بے خودی لیکن
    ہیں یاد شمع کو کچھ پَر مرے جلائے ہوئے

    ہمیں پتا ہے تجھے جیتنے کی عادت ہے
    سو آج ہم بھی ہیں جاناں ترے ہرائے ہوئے


    انہی سے مہکی رہیں گی فضائیں اب اشعر
    جنہیں زمانہ ہوا گلستاں میں آئے ہوئے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    کسی منصور کو سمجھے کہ دیوانہ نہیں ہے
    ابھی دنیا میں ایسا کوئی فرزانہ نہیں ہے

    جنونِ عشق و حسرتِ آبلہ پائی کی باتیں
    محبت کا سفر نامہ ہے افسانہ نہیں ہے

    سوا تیرے سبھی مجھ کو دوانہ کہہ رہے ہیں
    یہ منصب مجھ کو دنیا بھر سے منوانا نہیں ہے

    تجھے دستار کی حسرت ہے مل جائے گی لیکن
    ترا قد شہر میں کیا جانا پہچانا نہیں ہے

    مجھے یہ میکدہ بدمست و بے خود کیا کرے گا
    مرے ساقی ترا انداز رندانہ نہیں ہے

    کسی دل پر لگے زخموں کی گہرائی ہے کتنی
    بجز احساس کوئی اور پیمانہ نہیں ہے


    دکھاتا ہے سدا ہر آئینہ اپنا ہی چہرہ
    مجھے یہ امر ِمشکل سب کو سمجھانا نہیں ہے

    محبت ہے مرا ایمان بھی اور زندگی بھی
    مجھے منہ موڑ کے ایماں سے مر جانا نہیں ہے

    غزل تیری اگر چُھو جائے اُس کا دل تو اشعر
    وہ شاید مان لے گا درد بیگانہ نہیں ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ابھی مرہونِ لب اِک بات بھی باہم نہیں ہے
    مگر جو اَن کہی سی ہوگئی ہے، کم نہیں ہے

    رُکے آنسو چھلک پڑے ہیں جب بھی سوچتا ہوں
    مرے گھر کی پلک میرے لئے کیوں نم نہیں ہے

    سر ِمقتل تو دل پتھر کے تھے لیکن یہاں تو
    کہیں مقتل سے باہر بھی صفِ ماتم نہیں ہے

    مجھے کیا نیند آئی وقت نے دنیا بدل دی
    میں جس عالم میں سویا تھا یہ وہ عالم نہیں ہے

    یہ شہر ِعلم و دانش ہے زباں کو بند رکھنا
    ہر اِک پیرو جواں اِس شہر کا حاتم نہیں ہے

    ہم اِک کمرے میں ہیں اور اجنبیت درمیاں ہے
    مری اِک بات پر بھی آج وہ برہم نہیں ہے

    جو خود ان کے لگائے نشتروں کے زخم بھر دے
    مرے چارہ گروں کے پاس وہ مرہم نہیں ہے

    نہ لافانی ہو تم اشعر، نہ سقراطِ زمانہ
    تمہارے ساغر فن میں کوئی بھی سم نہیں ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    حاصل بس اتنا خوبئ تدبیر سے ہوا
    ہر روز اپنا سامنا تقدیر سے ہوا

    دار و رَسن کا ہم کو ذرا دُکھ نہیں مگر
    رسوا ہمارا یار بھی تعذیر سے ہوا

    ہے دلکشی گنہ میں زیادہ کہ خُودکشی
    طے مرحلہ یہ نفس کی تطہیر سے ہوا

    سارا جہان بادِ مخالف میں ڈھل گیا
    کیا فائدہ اڑان کی تشہیر سے ہوا

    کیا جانے درمیان میں کس دن یہ اُٹھ گئی
    دیوار کا پتا بڑی تاخیر سے ہوا

    ہر شخص میری آنکھوں سے کرتا رہا سوال
    میں لاجواب آپ کی تصویر سے ہوا

    سوچا تھا جس کو گھر کہوں وہ آشیاں بنے
    بے گھر میں اپنی کاوش تعمیر سے ہوا

    کچھ دن رہا ہوں قید میں کچھ اپنے شہر میں
    احساسِ فرق پاؤں کی زنجیر سے ہوا

    دل سوزئ سخن کے سبب اہل درد کا
    رشتہ سا ایک اشعر دلگیر سے ہوا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر