ای بک تشکیل سید منیف اشعر ۔۔۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 26, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    حد ِنگاہ میں کوئی شجر تو آنے دو
    کوئی پڑاؤ کی صورت نظر تو آنے دو

    ہمیں بھی آتا ہے قسمت کو ڈھونڈنا لیکن
    ہمارے شہر میں اِک دن سحر تو آنے دو

    ذرا تو صبر کرو اے مری تمناؤ
    دعا کروں گا ،مقام اثر تو آنے دو

    سر ِنیاز تو ازخود ہی جھک پڑے گا، مگر
    جو سر بلند کرے گا وہ دَر تو آنے دو

    قبولیت کی گھڑی ڈھونڈتی پھرے گی مجھے
    مری دعاؤں میں سحرِ اثر تو آنے دو

    کہیں تو آہی ملے گا وہ ایک دن مجھ سے
    پر اُس کو یاد مری رہ گزر تو آنے دو

    کریں گے خواہش ِجلوہ بھی ایک دن، لیکن
    ہماری آنکھ میں وصفِ بصر تو آنے دو

    کریں گے قتل بھی، مظلوم بھی ہمیں ہوں گے
    ہمارے ہاتھوں میں اُن کا ہنر تو آنے دو

    کماں میں تیر ابھی کیا سجائیں ہم اشعر
    جو آبروئے ہدف ہے، نظر تو آنے دو​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    تمہارا جوَر و سِتم کچھ بیاں نہیں کرتے
    دلِ حزیں کو کِسی پر عیاں نہیں کرتے

    لبوں پہ اپنے تبسم سجائے رکھتے ہیں
    جو عشق کرتے ہیں، آہ و فغاں نہیں کرتے

    یہ اور بات کبھی آنکھ سے چھلک جائے
    ہم آرزُو کو رہین ِزباں نہیں کرتے


    نصاب ِعشق میں سود و زیاں کا سارا حساب
    زیاں ہے وقت کا ،ایسا زیاں نہیں کرتے

    ہمیں کوئی نہ ملا دہر میں دُکھوں کے بغیر
    سو اپنے درد کو نذر ِجہاں نہیں کرتے

    زمانہ لاکھ مجھے بے وفا کہے اشعر
    خوشا کہ آپ کوئی بدگماں نہیں کرتے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    اگرچہ کہنے کو بے شک سبھی کے ساتھ رہا
    میں جان و دل سے مگر روشنی کے ساتھ رہا

    جو میری روح، مری زندگی کے ساتھ رہا
    میں ایک عمر اُسی اجنبی کے ساتھ رہا

    ہمارے درد کا ساتھی بھی جس کو ہونا تھا
    وہ اپنی خواہشِ لذت کشی کے ساتھ رہا


    بس ایک رات ہی مہماں رہا تھا چاند مرا
    میں ساری عمر مگر چاندنی کے ساتھ رہا

    نہ بھول جاتا میں کیسے عداوتیں تیری
    تیرا خیال ہی بس دوستی کے ساتھ رہا

    وطن میں اب کے سکونت کا دائمی تھا خیال
    میں چار دن بھی مگر بے کلی کے ساتھ رہا

    رہا ہے ظلم کی وادی میں پر دل اشعر
    لگے ہے ایسا کہ بس آشتی کے ساتھ رہا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    زندگی بھر زندگی سے یوں وفا کرتے رہے
    جیسے اپنے حق میں کوئی بدعا کرتے رہے

    اور تنگ ہوتا گیا کچھ اُس کی یادوں کا حصار
    جس قدر ہم بھول جانے کی دعا کرتے رہے


    آرزوئے وصل پر لب بستگی کے جرم میں
    وہ ہمارے نام فرقت کی سزا کرتے رہے

    وہ ہمیں دیتے رہے مایوسیوں کی تیرگی
    ہم نئی امید کا روشن دیا کرتے رہے

    قصہ ویرانئ دل ہم بھی کہتے تو ،مگر
    وہ بہارِ زندگی کا تذکرہ کرتے رہے

    ہاتھ میں تھا جن کے اشعر کچھ مداوائے جُنوں
    وہ مری آشفتہ سامانی سوا کرتے رہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    یادیں تمہاری آج بھی یوں دشتِ جاں میں ہیں
    آباد جیسے بستیاں خالی مکاں میں ہیں

    رکھیں مزاجِ عشق کو ہم کِس کے سامنے
    مدہوش عام لوگ بھی سود و زیاں میں ہیں

    دستِ جہاں سے لینے مصائب نہ جائیے
    درماں تمام درد کے اپنے جہاں میں ہیں

    کیا منصفی ہے ،بے کس و مفلس ہے دار پر
    اور قاتلوں کے نام پس ِزر اماں میں ہیں


    ہے آزمائشوں کا تسلسل کچھ اس طرح
    جیسے ازل سے تا بہ ابد امتحاں میں ہوں

    بس فرقت و وصال نہیں اس کی داستاں
    دنیا کے اور غم بھی دل بے کراں میں ہیں

    دیکھی ہوئی ہیں آتشِ عارض کی سرخیاں
    شعلے بھی دیکھ لیں گے جو برقِ تپاں میں ہیں

    جب سے لٹی بہار ِچمن دیکھتے ہیں ہم
    اشعر ترے سخن بھی حصار خزاں میں ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    کیا کروں موسم کوئی اے زندگی تیرے بغیر
    سب رُتیں ہیں اجنبی، اے زندگی تیرے بغیر

    کوئی صحرا ہو، چمن ہو، دشت یا وادی کوئی
    کس جگہ ہے دلکشی اے زندگی تیرے بغیر

    رات دن یلغار ہے یادوں کی،درماں کچھ نہیں
    درد کی پھر کیا کمی اے زندگی تیرے بغیر

    دامنِ فرقت کو دیتی ہے اُمیدوں کے چراغ
    آنکھ میری شبنمی اے زندگی تیرے بغیر

    موت کیا ہوگی، نہیں معلوم ،لیکن زندگی
    آج کل ہے موت سی اے زندگی ،تیرے بغیر

    شہر کی رنگینیاں پہلی سی ہیں اب بھی ،مگر
    دل میں ہے تیرہ شبی اے زندگی تیرے بغیر


    تیرا اشعر کیا کرے تنہائیوں کی بھیڑ میں
    کھو گئی ہے زندگی، اے زندگی تیرے بغیر​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    دل کا ہر داغ لہو دے کے جلا لیتا ہوں
    میں شب ِغم کو ستاروں سے سجا لیتا ہوں

    کوئی پل جب کِسی پہلو مجھے دیتا ہے قرار
    درد کی لو میں اُسی سمت بڑھا لیتا ہوں

    آتشِ عشق تو اشکوں سے بھڑکتی ہے، مگر
    اک ذرا آتش ِجذبات بُجھا لیتا ہوں

    شبِ ڈھلے صبح کے تارے نے یہ پوچھا اکثر
    کیا تری آنکھ سے میں نیند چرا لیتا ہوں

    سرگراں تم نہ پھرو ایذا رسانی کو مری
    میں تو خود گردشِ ایام کو جا لیتا ہوں

    نا خدا تجھ پہ ہی اک تکیہ نہیں ہے، میں تو
    موج ِبرہم سے بھی ساحل کا پتا لیتا ہوں


    کون دیتا ہے تجھے طرز ِمسیحائی نئے
    میں ہی ہر درد ترا جاں سے لگا لیتا ہوں

    ایک مانوس مہک جب بھی صبا لاتی ہے
    ان کو انفاس کی آغوش میں پالیتا ہوں

    ڈال کر چہرے پہ اشعر میں تبسم کی نقاب
    کربِ تنہائی کو دنیا سے چُھپا لیتا ہوں​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    نباہ تجھ سے کیا ہے ہنسی خوشی ہم نے
    تجھے برَت کے دکھایا ہے زندگی ہم نے

    ملا ہے دل کی لگی کا مرض بطورِ سزا
    سمجھ رکھا تھا محبت کو دل لگی ہم نے


    بس اس لئے کہ کبھی دوست کہہ دیا تھا تجھے
    بھلائے رکھی سدا تیری دشمنی ہم نے

    خیال تھا کہ یہ مغرب تو مثل ِجنت ہے
    اسی بہانے جہنم بھی دیکھ لی ہم نے

    لباسِ فکر و نظر جان کر تجھے اب تک
    اک اہتمام سے بَرتا ہے شاعری ہم نے

    سبب نہ پوچھئے ان آنسوؤں کا اے اشعر
    کسی کو یاد کیا تھا ابھی ابھی ہم نے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    درد ،تقسیم کے اِمکاں سے بچا رکھا ہے
    اپنا سرمایۂ کل دل میں چھپا رکھا ہے

    وہ پلٹ آیا تو سینے سے لگا لیں گے اُسے
    جانِ من چھوڑئے ،اِن باتوں میں کیا رکھا ہے

    آؤ ،آرائشِ جاں کچھ تو بدل دیں مل کر
    کتنی مدت سے غمِ ہجر بسا رکھا ہے

    بُھولنا چا ہوں تو کچھ اور اُلجھ جاتا ہوں
    اُس نے یادوں کا عجب جال بچھا رکھا ہے

    تاکہ دنیا تری آمد کا نہ پا جائے سراغ
    نام آہٹ کا تری، بادِ صبا رکھا ہے

    دل کو میرے دلِ ویراں تو نہ کہئے صاحب
    میں نے تو درد کا اک شہر بسا رکھا ہے

    شامل زاد ِسفر رکھتے تو آساں تھا سفر
    رات کا ساتھ ہے اور گھر میں دِیا رکھا ہے

    کیا بجھا پائے گی تُو میری محبت کا چراغ
    اے ہوا دیکھ تری زَد پہ جلا رکھا ہے

    بے وفا کیسے کہوں میں کہ سرِ بزم ابھی
    کل ہی تو نام ترا رشکِ وفا رکھا ہے

    کوئی مُنصف نظر آئے تو میں پوچھوں اشعر
    کیوں مرے شہر کو مقتل سا بنا رکھا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    خواہشِ گریہ کو پلکوں تک نہ آنا چاہئے
    آبروئے غم بکھرنے سے بچانا چاہئے

    تاکہ پسپائی پہ ہو مجبور، شرمندہ رہے
    درد جب حد سے بڑھے تو مسکرانا چاہئے

    فرصتِ فکر رفوئے چاک دل کس کو، مگر
    سب کو بہرِ داستاں کوئی فسانہ چاہئے

    قافیہ بندی کا فن ہی تو نہیں ہے شاعری
    شعر کو فکر و نظر بھی شاعرانہ چاہئے

    عشق کا لمحہ بھی آتا ہے محبت میں ضرور
    ہاں مگر اس ایک لمحے کو زمانہ چاہئے


    بے سبب تو کوئی ہستی بھی عدم ہوتی نہیں
    انتہائے زیست کو بھی اِک بہانہ چاہئے

    گو کہ اب تا دیر مشکل لگ رہا ہے اُن کا ساتھ
    پھر بھی اے اشعر جہاں تک ہو ،نبھانا چاہئے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر