سَر اُٹھایا تو سَر رہے گا کیا؟ ۔ رسا چغتائی

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 25, 2015

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,683
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    سَر اُٹھایا تو سَر رہے گا کیا؟
    خوف یہ عُمر بھر رہے گا کیا؟

    اُس نے زنجیر کر کے رکّھا ہے
    ہم سے وہ بے خبر رہے گا کیا؟

    پاؤں رہتے نہیں زمیں پہ تِرے
    ہاتھ دستار پر رہے گا کیا؟

    وہ جو اِک خواب ہم نے دیکھا تھا
    خواب وہ عُمر بھر رہے گا کیا؟

    مر رہے ہیں فراق میں تیرے
    تَو ہمیں مار کر رہے گا کیا؟

    عشق خانہ خراب ! تیرے بعد
    کوئی آباد گھر رہے گا کیا؟

    ہم نہ ہوں گے تو یہ جہانِ طلِسم
    یہ فریبِ نظر رہے گا کیا؟

    تیرا اپنا نہیں ، تِرا سایہ
    تیرے زیر ِ اثر رہے گا کیا؟

    موج اپنی جگہ کنارہ ہے
    یہ کنارہ مگر رہے گا کیا؟

    ڈوبنا تھے جسے، وہ ڈوب گیا
    تُو بھی اب ڈوب کر رہے گا کیا؟

    آج کیا بے افق رہے گی شام؟
    بے ستارہ سفر رہے گا کیا؟

    دیکھ کر اُن پَری نژادوں کو
    آئنہ خود نگر رہے گا کیا؟

    اپنے بس میں رہے گی کیا آندھی؟
    اپنے بَل پر شجر رہے گا کیا؟

    شہر میں وہ جدھر رہے گا ، رَسا !
    شہر سارا اُدھر رہے گا کیا؟

    ( رَسا چُغتائی )
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  2. عباس آزر

    عباس آزر محفلین

    مراسلے:
    31
    جھنڈا:
    Ireland
    موڈ:
    Where
    بہت خوب جناب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,683
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    غزل
    سر اُٹھایا تو سر رہے گا کیا
    خوف یہ عمر بھر رہے گا کیا

    اُس نے زنجیر کر کے رکھا ہے
    ہم سے وہ بے خبر رہے گا کیا

    پاﺅں رہتے نہیں زمیں پہ ترے
    ہاتھ دستار پر رہے گا کیا

    وہ جو اِک خواب ہم نے دیکھا تھا
    خواب ہی عمر بھر رہے گا کیا

    مر رہے ہیں فراق میں تیرے
    تو ہمیں مار کر رہے گا کیا

    عشق خانہ خراب! تیرے بعد
    کوئی آباد گھر رہے گا کیا

    ہم نہ ہوں گے تو یہ جہانِ طلسم
    یہ فریبِ نظر رہے گا کیا

    تیرا اپنا نہیں ترا سایا
    تیرے زیرِ اثر رہے گا کیا

    موج اپنی جگہ کنارا ہے
    یہ کنارا مگر رہے گا کیا

    ڈوبنا تھا جسے وہ ڈوب گیا
    تو بھی اب ڈوب کر رہے گا کیا

    آج کیا بے افق رہے گی شام
    بے ستارا سفر رہے گا کیا

    دیکھ کر ان پری نژادوں کو
    آئنہ خود نگر رہے گا کیا

    اپنے بس میں رہے گی کیا آندھی
    اپنے بل پر شجر رہے گا کیا

    شہر میں وہ جدھر رہے گا رسا
    شہر سارا ادھر رہے گا کیا
    (رسا چغتائی)
     

اس صفحے کی تشہیر