1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

مجید امجد سفر کی موج میں تھے، وقت کے غبار میں تھے ۔ مجید امجدم

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 18, 2019

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,631
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    جہاں نورد

    سفر کی موج میں تھے، وقت کے غبار میں تھے
    وہ لوگ جو ابھی اس قریۂ بہار میں تھے

    وہ ایک چہرے پہ بکھرے عجب عجب سے خیال
    میں سوچتا تو وہ غم میرے اختیار میں تھے

    وہ ہونٹ جن میں تھا میٹھی سی ایک پیاس کا رس
    میں جانتا تو وہ دریا مرے کنار میں تھے

    مجھے خبر بھی نہ تھی اور اتفاق سے کل
    میں اس طرف سے جو گزرا، وہ انتظار میں تھے

    میں کچھ سمجھ نہ سکا، مری زندگی کے وہ خواب
    ان انکھڑیوں میں جو تیرے تھے، کس شمار میں تھے

    میں دیکھتا تھا، وہ آئے بھی اور چلے بھی گئے
    ابھی یہیں تھے، ابھی گردِ روزگار میں تھے

    میں دیکھتا تھا، اچانک، یہ آسماں، یہ کُرے
    بس ایک پل کو رکے اور پھر مدار میں تھے

    ہزار بھیس میں، سیار موسموں کے سفیر
    تمام عمر مری روح کے دیار میں تھے

    (مجید امجد)
     
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,631
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    مجید امجد کا یہ کلام استاد فتح علی خاں کی آواز میں

     

اس صفحے کی تشہیر