ٹائپنگ مکمل ذوق نعت (نعتیہ دیوان)--از: برادر اعلیٰ حضرت علامہ حسن رضا بریلوی

ڈاکٹر مشاہد رضوی نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 4, 2013

  1. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    نغمہ ٔروح
    اِستمداد از حضرت سلطانِ بغداد رضی اللہ تعالیٰ عنہ
    اے کریم بنِ کریم اے رہنما اے مقتدا
    اخترِ برجِ سخاوت گوہرِ درجِ عطا
    آستانے پہ ترے حاضر ہے یہ تیرا گدا
    لاج رکھ لے دست و دامن کی مرے بہرِ خدا
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    شاہِ اقلیمِ ولایت سرورِ کیواں جناب
    ہے تمہارے آستانے کی زمیں گردوں قباب
    حسرتِ دل کی کشاکش سے ہیں لاکھوں اضطراب
    التجا مقبول کیجے اپنے سائل کی شتاب
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    سالکِ راہِ خدا کو راہنما ہے تیری ذات
    مسلکِ عرفانِ حق ہے پیشوا ہے تیری ذات
    بے نوایانِ جہاں کا آسرا ہے تیری ذات
    تشنہ کاموں کے لیے بحر عطا ہے تیری ذات
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    ہر طرف سے فوجِ غم کی ہے چڑھائی الغیاث
    کرتی ہے پامال یہ بے دست و پائی الغیاث
    پھر گئی ہے شکل قسمت سب خدائی الغیاث
    اے مرے فریادرس تیری دہائی الغیاث
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    منکشف کس پر نہیں شانِ معلی کا عروج
    آفتابِ حق نما ہو تم کو ہے زیبا عروج
    میں حضیضِ غم میں ہوں اِمداد ہو شاہا عروج
    ہر ترقی پر ترقی ہو بڑھے دونا عروج
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    تا کجا ہو پائمالِ لشکرِ اَفکارِ روح
    تابکے ترساں رہے بے مونس و غمخوار روح
    ہو چلی ہے کاوشِ غم سے نہایت زار روح
    طالبِ اِمداد ہے ہر وقت اے دلدار روح
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    دبدبہ میں ہے فلک شوکت ترا اے ماہِ کاخ
    دیکھتے ہیں ٹوپیاں تھامے گدا و شاہ کاخ
    قصر جنت سے فزوں رکھتا ہے عزو و جاہ کاخ
    اب دکھا دے دیدۂ مشتاق کو للہ کاخ
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    توبہ سائل اور تیرے در سے پلٹے نامراد
    ہم نے کیا دیکھے نہیں غمگین آتے جاتے شاد
    آستانے کے گدا ہیں قیصر و کسریٰ قباد
    ہو کبھی لطف و کرم سے بندۂ مضطر بھی یاد
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    نفس امارہ کے پھندے میں پھنسا ہوں العیاذ
    در ترا بیکس پنہ کوچہ ترا عالم ملاذ
    رحم فرما یا ملاذی لطف فرما یا ملاذ
    حاضرِ در ہے غلامِ آستاں بہرِ لواذ
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    شہرِ یار اے ذی وقار اے باغِ عالم کی بہار
    بحر احساں رشخۂ نیسانِ جودِ کردگار
    ہوں خزانِ غم کے ہاتھوں پائمالی سے دوچار
    عرض کرتا ہوں ترے در پر بچشمِ اشکبار
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    برسرِ پرخاش ہے مجھ سے عدوے بے تمیز
    رات دن ہے در پئے قلبِ حزیں نفسِ رجیز
    مبتلا ہے سو بلائوں میں مری جانِ عزیز
    حلِ مشکل آپ کے آگے نہیں دشوار چیز
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    اک جہاں سیرابِ اَبرِ فیض ہے اب کی برس
    تر نوا ہیں بلبلیں پڑتا ہے گوشِ گل میں رس
    ہے یہاں کشتِ تمنا خشک و زندانِ قفس
    اے سحابِ رحمتِ حق سوکھے دھانوں پر برس
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    فصلِ گل آئی عروسانِ چمن ہیں سبز پوش
    شادمانی کا نواںسنجانِ گلشن میں ہے جوش
    جوبنوں پر آ گیا حسنِ بہارِ گل فروش
    ہائے یہ رنگ اور ہیں یوں دام میں گم کردہ ہوش
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    دیکھ کر اس نفسِ بد خصلت کے یہ زشتی خواص
    سوزِ غم سے دل پگھلتا ہے مرا شکلِ رصاص
    کس سے مانگوں خونِ حسرت ہاے کشتہ کا قصاص
    مجھ کو اس موذی کے چنگل سے عطا کیجے خلاص
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    ایک تو ناخن بدل ہے شدتِ افکار قرض
    اس پر اَعدا نے نشانہ کر لیا ہے مجھ کو فرض
    فرض اَدا ہو یا نہ ہو لیکن مرا آزار فرض
    رد نہ فرمائو خدا کے واسطے سائل کی عرض
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    نفس شیطاں میں بڑھے ہیں سو طرح کے اختلاط
    ہر قدم در پیش ہے مجھ کو طریقِ پل صراط
    بھولی بھولی سے کبھی یاد آتی ہے شکل نشاط
    پیش بارِ کوہِ کاہِ ناتواں کی کیا بساط
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    آفتوں میں پھنس گیا ہے بندۂ دارالحفیظ
    جان سے سو کاہشوں میں دم ہے مضطر الحفیظ
    ایک قلبِ ناتواں ہے لاکھ نشتر الحفیظ
    المدد اے داد رس اے بندہ پرور الحفیظ
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    صبح صادق کا کنارِ آسماں سے ہے طلوع
    ڈھل چکا ہے صورتِ شب حسنِ رخسارِ شموع
    طائروں نے آشیانوں میں کیے نغمے شروع
    اور نہیں آنکھوں کو اب تک خوابِ غفلت سے رجوع
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    بدلیاں چھائیں ہوا بدلی ہوئے شاداب باغ
    غنچے چٹکے پھول مہکے بس گیا دل کا دماغ
    آہ اے جورِ قفس دل ہے کہ محرومی کا داغ
    واہ اے لطفِ صبا گل ہے تمنا کا چراغ
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    آسماں ہے قوس فکریں تیر میرا دل ہدف
    نفس و شیطاں ہر گھڑی کف برلب و خنجر بکف
    منتظر ہوں میں کہ اب آئی صداے لا تخف
    سرورِ دیں کا تصدق بحر سلطانِ نجف
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    بڑھ چلا ہے آج کل اَحباب میں جوشِ نفاق
    خوش مذاقانِ زمانہ ہو چلے ہیں بد مذاق
    سیکڑوں پردوں میں پوشیدہ ہے حسنِ اتفاق
    برسر پیکار ہیں آگے جو تھے اہلِ وفاق
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    ڈر درندوں کا اندھیری رات صحرا ہولناک
    راہ نامعلوم رعشہ پائوں میں لاکھوں مغاک
    دیکھ کر ابرِ سیہ کو دل ہوا جاتا ہے چاک
    آئیے اِمداد کو ورنہ میں ہوتا ہوں ہلاک
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    ایک عالم پر نہیں رہتا کبھی عالم کا حال
    ہر کمالے را زوال و ہر زوالے را کمال
    بڑھ چکیں شب ہاے فرقت اب تو ہو روزِ وصال
    مہرادھرمنہ کر کہ میرے دن پھریں دل ہو نہال
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    گو چڑھائی کر رہے ہیں مجھ پہ اندوہ و اَلم
    گو پیاپے ہو رہے ہیں اہلِ عالم کے ستم
    پر کہیں چھٹتا ہے تیرا آستاں تیرے قدم
    چارۂ دردِ دلِ مضطر کریں تیرے کرم
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    ہر کمر بستہ عداوت پر بہت اہلِ زمن
    ایک جانِ ناتواں لاکھوں الم لاکھوں محن
    سن لے فریادِ حسن فرما دے اِمدادِ حسن
    صبحِ محشر تک رہے آباد تیری انجمن
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    ہے ترے الطاف کا چرچا جہاں میں چار سو
    شہرۂ آفاق ہیں یہ خصلتیں یہ نیک خو
    ہے گدا کا حال تجھ پر آشکارا مو بمو
    آجکل گھیرے ہوئے ہیں چار جانب سے عدو
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    شام ہے نزدیک منزل دور میں گم کردہ راہ
    ہر قدم پر پڑتے ہیں اس دشت میں خس پوش جاہ
    کوئی ساتھی ہے نہ رہبر جس سے حاصل ہو پناہ
    اشک آنکھوں میں قلق دل میں لبوں پر آہ آہ
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
    تاج والوں کو مبارک تاجِ زر تختِ شہی
    بادشا لاکھوں ہوئے کس پر پھلی کس کی رہی
    میں گدا ٹھہروں ترا میری اسی میں ہے بہی
    ظلِ دامن خاک در دیہیم و افسر ہے یہی
    روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
    حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    مناقب حضرت شاہ بدیع الدین مدار قدس سرہ الشریف
    ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دربار
    گواہ ہیں دلِ محزون و چشمِ دریا بار
    طرح طرح سے ستاتا ہے زمرۂ اشرار
    بدیع بہر خدا حرمتِ شہِ ابرار
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
    اِدھر اقارب عقارب عدو اجانب و خویش
    اِدھر ہوں جوشِ معاصی کے ہاتھ سے دل ریش
    بیاں میں کس سے کروں ہیں جو آفتیں در پیش
    پھنسا ہے سخت بلائوں میں یہ عقیدت کیش
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
    نہ ہوں میں طالبِ افسر نہ سائل دیہیم
    کہ سنگ منزلِ مقصد ہے خواہش زر و سیم
    کیا ہے تم کو خدا نے کریم ابنِ کریم
    فقط یہی ہے شہا آرزوے عبد اثیم
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
    ہوا ہے خنجر افکار سے جگر گھائل
    نفس نفس ہے عیاں دم شماریِ بسمل
    مجھے ہو مرحمت اب داروے جراحتِ دل
    نہ خالی ہاتھ پھرے آستاں سے یہ سائل
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
    تمہارے وصف و ثنا کس طرح سے ہوں مرقوم
    کہ شانِ ارفع و اعلیٰ کسے نہیں معلوم
    ہے زیرِ تیغِ الم مجھ غریب کا حلقوم
    ہوئی ہے دل کی طرف یورشِ سپاہِ ہموم
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
    ہوا ہے بندہ گرفتار پنجۂ صیاد
    ہیں ہر گھڑی ستم ایجاد سے ستم ایجاد
    حضور پڑتی ہے ہر روز اک نئی اُفتاد
    تمہارے دَر پہ میں لایا ہوں جور کی فریاد
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
    تمام ذرّوں پہ کالشمس ہیں یہ جود و نوال
    فقیر خستہ جگر کا بھی رد نہ کیجے سوال
    حسنؔ ہوں نام کو پر ہوں میں سخت بد افعال
    عطا ہو مجھ کو بھی اے شاہ جنسِ حسنِ مآل
    مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار
    نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار
     
  3. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    عرضِ سلام
    بدرگاہ خیرالانام علیہ الصلوٰۃوالسلام
    السلام اے خسروِ دنیا و دیں
    السلام اے راحتِ جانِ حزیں
    السلام اے بادشاہِ دو جہاں
    السلام اے سرورِ کون و مکاں
    السلام اے نورِ ایماں السلام
    السلام اے راحتِ جاں السلام
    اے شکیبِ جانِ مضطر السلام
    آفتاب ذرّہ پرور السلام
    درد و غم کے چارہ فرما السلام
    درد مندوں کے مسیحا السلام
    اے مرادیں دینے والے السلام
    دونوں عالم کے اُجالے السلام
    درد و غم میں مبتلا ہے یہ غریب
    دم چلا تیری دُہائی اے طبیب
    نبضیں ساقط رُوح مضطرجی نڈھال
    دردِ عصیاں سے ہوا ہے غیر حال
    بے سہاروں کے سہارے ہیں حضور
    حامی و یاور ہمارے ہیں حضور
    ہم غریبوں پر کرم فرمائیے
    بد نصیبوں پر کرم فرمائیے
    بے قراروں کے سرھانے آئیے
    دل فگاروں کے سرھانے آئیے
    جاں بلب کی چارہ فرمائی کرو
    جانِ عیسیٰ ہو مسیحائی کرو
    شام ہے نزدیک، منزل دُور ہے
    پائوں کیسے جان تک رنجور ہے
    مغربی گوشوں میں پھوٹی ہے شفق
    زردیِ خورشید سے ہے رنگ فق
    راہ نامعلوم صحرا پُر خطر
    کوئی ساتھی ہے نہ کوئی راہبر
    طائروں نے بھی بسیرا لے لیا
    خواہش پرواز کو رُخصت کیا
    ہر طرف کرتا ہوں حیرت سے نگاہ
    پر نہیں ملتی کسی صورت سے راہ
    سو بلائیں چشمِ تر کے سامنے
    یاس کی صورت نظر کے سامنے
    دل پریشاں بات گھبرائی ہوئی
    شکل پر اَفسردگی چھائی ہوئی
    ظلمتیں شب کی غضب ڈھانے لگیں
    کالی کالی بدلیاں چھانے لگیں
    ان بلائوں میں پھنسا ہے خانہ زاد
    آفتوں میں مبتلا ہے خانہ زاد
    اے عرب کے چاند اے مہر عجم
    اے خدا کے نور اے شمع حرم
    فرش کی زینت ہے دم سے آپ کے
    عرش کی عزت قدم سے آپ کے
    آپ سے ہے جلوئہ حق کا ظہور
    آپ ہی ہیں نور کی آنکھوں کے نور
    آپ سے روشن ہوئے کون و مکاں
    آپ سے پُر نور ہے بزمِ جہاں
    اے خداوندِ عرب شاہِ عجم
    کیجیے ہندی غلاموں پر کرم
    ہم سیہ کاروں پہ رحمت کیجیے
    تیرہ بختوں کی شفاعت کیجیے
    اپنے بندوں کی مدد فرمایئے
    پیارے حامی مسکراتے آیئے
    ہو اگر شانِ تبسم کا کرم
    صبح ہو جائے شبِ دیجورِ غم
    ظلمتوں میں گم ہوا ہے راستہ
    المدد اے خندئہ دنداں نما
    ہاں دکھا جانا تجلی کی اَدا
    ٹھوکریں کھاتا ہے پردیسی ترا
    دیکھیے کب تک چمکتے ہیں نصیب
    دیر سے ہے لو لگائے یہ غریب
    ملتجی ہوں میں عرب کے چاند سے
    اپنے ربّ سے اپنے ربّ کے چاند سے
    میں بھکاری ہوں تمہارا تم غنی
    لاج رکھ لو میرے پھیلے ہاتھ کی
    تنگ آیا ہو دلِ ناکام سے
    اِس نکمّے کو لگا دو کام سے
    آپ کا دربار ہے عرش اِشتباہ
    آپ کی سرکار ہے بے کس پناہ
    مانگتے پھرتے ہیں سلطان و امیر
    رات دن پھیری لگاتے ہیں فقیر
    غم زدوں کو آپ کر دیتے ہیں شاد
    سب کو مل جاتی ہے منہ مانگی مراد
    میں تمہارا ہوں گداے بے نوا
    کیجے اپنے بے نوائوں پر عطا
    میں غلام ہیچ کارہ ہوں حضور
    ہیچ کاروں پر کرم ہے پَر ضرور
    اچھے اچھوں کے ہیں گاہک ہر کہیں
    ہم بدوں کی ہے خریداری یہیں
    کیجیے رحمت حسنؔ پر کیجیے
    دونوں عالم کی مرادیں دیجیے
     
  4. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    [رباعیات]
    جانِ گلزارِ مصطفائی تم ہو
    مختار ہو مالکِ خدائی تم ہو
    جلوہ سے تمہارے ہے عیاں شانِ خدا
    آئینۂ ذاتِ کبریائی تم ہو
    - : دیگر :-
    یارانِ نبی کا وصف کس سے ہو اَدا
    ایک ایک ہے ان میں ناظمِ نظمِ ہدیٰ
    پائے کوئی کیوں کر اس رُباعی کا جواب
    اے اہلِ سخن جس کا مصنف ہو خدا
    - : دیگر :-
    بدکار ہیں عاصی ہیں زیاں کار ہیں ہم
    تعزیر کے بے شبہ سزاوار ہیں ہم
    یہ سب سہی پر دل کو ہے اس سے قوت
    اللہ کریم ہے گنہگار ہیں ہم
    - : دیگر :-
    خاطی ہوں سیاہ رُو ہوں خطاکار ہوں میں
    جو کچھ ہو حسنؔ سب کا سزاوار ہوں میں
    پر اُس کے کرم پر ہے بھروسہ بھاری
    اللہ ہے شاہد کہ گنہگار ہوں میں
    - : دیگر :-
    اس درجہ ہے ضعف جاں گزاے اسلام
    ہیں جس سے ضعیف سب قواے اسلام
    اے مرتوں کی جان کو بچانے والے
    اب ہے ترے ہاتھ میں دواے اسلام
    - : دیگر :-
    کب تک یہ مصیبتیں اُٹھائے اسلام
    کب تک رہے ضعف جاں گزاے اِسلام
    پھر از سرِ نو اِس کو توانا کر دے
    اے حامیِ اسلام خداے اسلام
    - : دیگر :-
    ہے شام قریب چھپی جاتی ہے ضو
    منزل ہے بعید تھک گیا رہرو
    اب تیری طرف شکستہ حالوں کے رفیق
    ٹوٹی ہوئی آس نے لگائی ہے لو
    - : دیگر :-
    برسائے وہ آزادہ روی نے جھالے
    ہر راہ میں بہہ رہے ہیں ندی نالے
    اسلام کے بیٹرے کو سہارا دینا
    اے ڈوبتوں کے پار لگانے والے
    - : دیگر :-
    سن احقر افرادِ زمن کی فریاد
    سن بندۂ پابندِ محن کی فریاد
    یا رب تجھے واسطہ خداوندی کا
    رہ جائے نہ بے اَثر حسنؔ کی فریاد
    - : دیگر :-
    جو لوگ خدا کی ہیں عبادت کرتے
    کیوں اہلِ خطا کی ہیں حقارت کرتے
    بندے جو گنہگار ہیں وہ کس کے ہیں
    کچھ دیر اُسے ہوتی ہے رحمت کرتے
    - : دیگر :-
    دنیا فانی ہے اہلِ دنیا فانی
    شہر و بازار و کوہ و صحرا فانی
    دل شاد کریں کس کے نظارہ سے حسنؔ
    آنکھیں فانی ہیں یہ تماشا فانی
    - : دیگر :-
    اس گھر میں نہ پابند نہ آزاد رہے
    غمگین رہے کوئی نہ دل شاد رہے
    تعمیر مکاں کس کے لیے ہوتا ہے
    کوئی نہ رہے گا یہاں یہ یاد رہے
     
  5. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    [اشعار متفرقات]
    یہ رحمت ہے کہ بے تابانہ آئیں گے قیامت میں
    جو غل پہنچا گرفتارانِ اُمت کے سلاسل کا
    - : دیگر :-
    ہے جمالِ حق نما بارہ اماموں کا جمال
    اس مبارک سال میں ہے ہر مہینہ نور کا
    - : دیگر :-
    ملک ہفت آسماں کے جبہ سا ہیں
    تعالی اللہ یہ رُتبہ آستاں کا
    ابھی روشن ہوں میرے دل کی آنکھیں
    جو سُرمہ ہو غبارِ آستاں کا
    حسنؔ ہم کو نہیں خوفِ معاصی
    سہارا ہے شفیعِ عاصیاں کا
    - : دیگر :-
    خوف محشر سے ہے فارغ دلِ مضطر اپنا
    کہ ہے محبوبِ خدا شافعِ محشر اپنا
    - : دیگر :-
    داغ دل یادِ دہانِ شہ میں مرجھا ئیں گے کیا
    جن کو دیں کوثر سے پانی گل وہ کمھلائیں گے کیا
    جس قدم کا عرش پامالِ خرامِ ناز ہو
    اُس کے نیچے موم یہ پتھر نہ ہو جائیں گے کیا
    جن کی پیاری اُنگلیوں سے نور کے چشمے بہے
    اُن سے عصیاں کے سیہ نامے نہ دُھل جائیں گے کیا
    کوثر و تسنیم کس کے ہیں ہمارے شاہ کے
    حشر کے دن پھر ہمیں پیاسے بھی رہ جائیں گے کیا
    - : دیگر :-
    کیا بیاں ہو عز و شانِ اہلِ بیت
    کبریا ہے مدح خوانِ اہلِ بیت
    - : دیگر :-
    لاش میری ہو پڑی یا رب میانِ کوے دوست
    پڑتی ہو اُڑ اُڑ کے گرد رہروانِ کوے دوست
    - : دیگر :-
    مولیٰ دکھا دو جلوۂ دیدار الغیاث
    بے چین ہے بہت دلِ بیمار الغیاث
    - : دیگر :-
    کیا خوف ہو خورشیدِ قیامت کی تپش کا
    کافی ہے ہمیں سایۂ دامانِ محمد
    ہوتے ہیں فدا مہر و قمر حسنِ بیاں پر
    پڑھتا ہوں جو مدحِ رُخِ تابانِ محمد
    - : دیگر :-
    رنگ چمن آرائی اُڑانے کی ہوا میں
    چلتی ہے صبا دامن مولیٰ سے لپٹ کر
    - : دیگر :-
    رو رہا ہوں یادِ دندانِ شہِ تسنیم میں
    عین دریا میں ہے مجھ کو آبِ گوہر کی تلاش
    سایۂ نخل مدینہ ہو زمین طیبہ ہو
    تخت زرّیں کی مجھے خواہش نہ اَفسر کی تلاش
    چھوڑ کر خاکِ قدم اکسیر کی خواہش کرے
    خاک میں مل جائے یا رب کیمیا گر کی تلاش
    ان لبوں کی یاد میں دل کو فدا کیجے حسنؔ
    لعل پتھر ہیں کریں ہم خاک پتھر کی تلاش
    - : دیگر :-
    ہے شادیِ تجلّیِ جاناں مآلِ عشق
    کیوں کر نہ ہو خوشی سے گوارا ملالِ عشق
    لا پھول ساقیا کہ گل داغ کھل گئے
    آئی ہے جوبنوں پہ بہارِ جمالِ عشق
    جس کو یہ سرفراز کرے دار ہو نصیب
    کیا کیا بیان کیجیے اَوج و کمالِ عشق
    مدہوشیوںکے لطف اُٹھاؤں میں اے حسنؔ
    دل پر مرے گرے کہیں برقِ جمالِ عشق
    - : دیگر :-
    شمس العظما امام اعظم
    بدر الفقہا امام اعظم
    مقبولِ جنابِ مُصطفائی
    محبوبِ خدا امام اعظم
    چالیس برس نہ سوئے شب بھر
    تاج العرفا امام اعظم
    گمراہ ہوں کس طرح مقلد
    ہیں راہ نما امام اعظم
    - : دیگر :-
    کیا کہوں کیا ہیں مرے پیارے نبی کی آنکھیں
    دیکھیں اُن آنکھوں نے نورِ اَزلی کی آنکھیں
    نیم وا غنچۂ اَسرارِ الٰہی کہیے
    یا یہ ہیں نرگس باغِ اَزلی کی آنکھیں
    دُھل گئی ظلمتِ اعمال پڑی جس پہ نظر
    عین رحمت ہیں شہِ مطلبی کی آنکھیں
    چشم بد دُور عجب آنکھ ہے ماشاء اللہ
    ہم نے دیکھیں نہ سنیں ایسی کسی کی آنکھیں
    - : دیگر :-
    کس کا جلوہ نظر آیا مجھ کو
    آپ میں دل نے نہ پایا مجھ کو
    لب و حسنِ نمکیں کے آگے
    نمک و قند نہ بھایا مجھ کو
    اے مرے ابرِ کرم ایک نظر
    آتش غم نے جلایا مجھ کو
    جب اُٹھا پردۂ غفلت دل سے
    ہر جگہ تو نظر آیا مجھ کو
    پردہ کھل جائے گا محشر میں مرا
    گر نہ دامن میں چھپایا مجھ کو
    کیوں کھلی رہتی ہے چشمِ مشتاق
    کون ایسا نظر آیا مجھ کو
    کیا کہوں کیسی وہ صورت تھی حسنؔ
    جس نے دیوانہ بنایا مجھ کو
    - : دیگر :-
    گلو! دیکھو ہمارے گل کی نکہت ہو اور ایسی ہو
    قمر میری نظر سے دیکھ طلعت ہو اور ایسی ہو
    شہا نامِ خدا تیرا تو کیا کہنا کہ خالق کو
    ترے پیرو بھی پیارے ہیں محبت ہو اور ایسی ہو
    - : دیگر :-
    یا رب وہ دل دے جس میں کسی کی وِلا نہ ہو
    غیر خدا نہ ہو ، کوئی جز مصطفیٰ نہ ہو
    صورت بنائی حق نے تری اپنے ہاتھ سے
    پیارے ترا نظیر نہ پیدا ہوا نہ ہو
    اے بوالہوس نصیب تجھے کیمیا کہاں
    جب تک تو خاک پاے حبیبِ خدا نہ ہو
    یا ربّ وہ نخل سبز رہے جس کی شاخ میں
    جز داغِ عشق اور کوئی گل کھلا نہ ہو
    - : دیگر :-
    معاذ اللہ اُس دل کو عذابِ حشر کا غم ہو
    کہ جس کا حامی و یاور جنابِ غوث اعظم ہو
    لبِ جاں بخش نے دی جانِ تازہ دین و ایماں کو
    محی الدیں نہ کیوں کر پھر تمہارا اسم اعظم ہو
    جِلا دیتے ہو مردوں کو دلِ مردہ جلا دیجے
    تم اِس اُمت میں شاہا یادگارِ ابنِ مریم ہو
    - : دیگر :-
    اصحابِ پاک میں ہے شمارِ معاویہ
    کیوں کر بیاں ہو عز و وقارِ معاویہ
    - : دیگر :-
    آپ ہیں ختم رُسل ختم رسالت مہر ہے
    آپ آئینہ ہیں وہ تصویرِ پشت آئینہ
    گر رسالت کی گواہی چاہتے ختم رسل
    بول اُٹھتا طوطیِ تصویر پشت آئینہ
    - : دیگر :-
    غبار بے کساں کو کوئی پہنچا دے مدینہ تک
    لپٹتا ہے ہر اک دامن سے سب کے پاؤں پڑتا ہے
    - : دیگر :-
    فانی فانی ہستی فانی
    باقی باقی باقی فانی
    ہستی کی پھر ہستی کیا ہو
    ٹھہری جب یہ فنا بھی فانی
    نفسِ کافر ناز ہے کس پر
    ہے سب رام کہانی فانی
    میرا تیرا کب تک پیارے
    میں بھی فانی تو بھی فانی
    طعمۂ خاک ہیں شاہ و گدا سب
    تخت و تاج و گدائی فانی
    نیست ہیں یہ سب مجنوں عاقل
    صحرا فانی بستی فانی
    دیکھ لے حالِ حباب و شرر کو
    دم میں ہو گئی ہستی فانی
    ایک بقا ہے ذاتِ خدا کو
    باقی ساری خدائی فانی
    قولِ حسنؔ سن قولِ حسن ہے
    باقی باقی فانی فانی
     
  6. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    تاریخ طبع، نتیجہ فکرعرش پیما علی جناب اعلیٰ حضرت مجدد مائۃ حاضرہ
    قبلہ وکعبہ مولانا مولوی حاجی محمد احمد رضاصاحب قادری برکاتی ص
    قوتِ بازوے من سنیِ نجدی فگن
    حاج و زائر حسنؔ سلمہ ذوالمِنن
    نعت چہ رنگیں نوشت شعر خوش آئیں نوشت
    شعر مگو دیں نوشت دور ز ہر ریب و ظن
    شرع ز شعرش عیاں عرش بہ بیتش نہاں
    سنّیہ را حرزِ جاں نجدیہ را سر شکن
    قلقل ایں تازہ جوش بادہ بہ ہنگام نوش
    نور فشاند بگوش شہد چکاں در دہن
    کلک رضا سالِ طبع گفت بہ افضالِ طبع
    ز انکہ ز اقوالِ طبع کلک بود نغمہ زن
    اوج بہیں محمدت جلوہ گہِ مرحمت
    ۲۶ھ ۱۳
    عافیت عاقبت باد نواے حسن
    ۲۶ھ ۱۳
    بادِ نواے حسن بابِ رضاے حسن
    ۲۶ھ ۱۳
    بابِ رضاے حسن باز بہ جلب منن
    ۲۶ھ ۱۳
    باز بہ جلب منن بازوِ بخت قوی
    ۲۶ھ ۱۳
    بازوِ بخت قوی نیک حجابِ محن
    ۲۶ھ ۱۳
    نیک حجاب محن فضل عفو و نبی
    ۲۶ھ ۱۳
    فضل عفو و نبی حبل وی و حبل من
    ۲۶ھ ۱۳
    - : ولہٗ زید مجدہٗ :-
    نعت حسن آمدہ نعت حسن
    ۱۳۲۶ھ
    حُسنِ رضا باد بزیں سلام
    ۱۳۲۶ھ
    اِنَّ مَنَ الذَّوقِ لَسِحْر ہمہ
    ۱۳۲۶ھ
    اِنَّ مَنَ الشِّعْرِ لَحِکْمَۃ تمام
    ۱۳۲۶ھ
    کلک رضا داد چناں سال آں
    یافت قبول از شدِ رأس الانام
    ۱۳۲۶ھ
    ؤ
    [تواریخ از تصنیف مصنف]
    تاریخ مثنوی شفاعت و نجات
    مصنفہ مولانا مولوی محمد محسن صاحب کاکوروی وکیل مین پوری
    حسنؔ اپنے محسنؔ کی ہو کچھ ثنا
    جو احسان حسنِ طبیعت کا ہو
    شفاعت کا لکھا ہے اَحوال خوب
    بیاں کیوں کر اِس کی فصاحت کا ہو
    دعائیہ تاریخ میں نے کہی
    ’یہ اچھا ذریعہ شفاعت کا ہو‘
    1893ء
    ؤ
    تاریخ وصال حضرت سیدنا و مولانا شاہ آل رسول رضی اللہ تعالی عنہ و نوراللہ مرقدہ
    جب آلِ رسول بحر عرفاں
    رونق دہِ خاندانِ برکات
    وہ واقفِ رمز لَا و اِلَّا
    وہ کاشفِ سر نفی و اِثبات
    عازم ہوئے سوے دارِ عقبیٰ
    اِس غم کی گھٹا سے دن ہوا رات
    رضوان نے کہی حسنؔ سے تاریخ
    ’اب خلد میں دیکھیے کرامات‘
    ۶۳۴ + ۶۶۲۔۔۔ ۱۲۹۶ھ
    - : دیگر :-
    اچھے کے پیارے میرے سہارے
    باہر بیاں سے اُن کے مناقب
    وہ اور شریعت وہ اور طریقت
    دو دل یک ارماں یک جاں دو قالب
    عبد و خدا میں مانند برزخ
    مقصود و قاصد مطلوب و طالب
    دریاے رحمت گلزارِ رافت
    جانِ مراحم کانِ مواہب
    نجم منازل شمع محافل
    مہر مشارق ماہِ مغارب
    خلق خدا کے کیوں نہ ہوں رہبر
    ہیں مصطفیٰ کے فرزند و نائب
    ہے اُن کے دم سے عزت کی عزت
    تاجِ مراتب راسِ مناصب
    جب اُس قمر نے لی راہِ جنت
    تھی اشک افشاں چشم کواکب
    میں نے کہی یہ تاریخ رحلت
    ’قطب المشائخ اصل مطالب‘
    1296ھ
    ؤ
    تاریخ طبع و تالیف رسالہ نگارستانِ لطافت، مصنفہ خود
    ہو گیا ختم یہ رسالہ آج
    شکر خالق کریں نہ کیوں کر ہم
    سن تالیف اے حسنؔ سن لے
    ’منبع وصف شہریارِ حرم‘
    1302ھ
    - : دیگر :-
    یہ چند ورق نعت کے لایا ہے غلام آج
    اِنعام کچھ اس کا مجھے اے بحر سخا دو
    میں کیا کہوں میری ہے یہ حسرت یہ تمنا
    میں کیا کہوں مجھ کو یہ صلہ دو یہ صلہ دو
    تم آپ مرے دل کی مرادوں سے ہو واقف
    خیرات کچھ اپنی مجھے اے بحر عطا دو
    ہیں یہ سن تالیف فقیرانہ صدا میں
    ’والی میں تصدق مجھے مدحت کی جزا دو‘
    1302ھ
    ؤ
    تاریخ طبع دیوان حضور احمدرضاخان آثمؔ بریلوی
    ہے یہ دیوان اُس کی مدحت میں
    جس کی ہر بات ہے خدا کو قبول
    جس کے قبضہ میں دو جہان کا ملک
    جس کے بندوں میں تاجدار شمول
    جس پہ قرباں جناں جناں کے چمن
    جس پہ پیارا خدا خدا کے رسول
    جس کے صدقے میں اہل ایماں پر
    ہر گھڑی رحمتِ خدا کا نزول
    جس کی سرکار قاضیِ حاجات
    جس کا دربار معطیِ مامول
    یہ ضیائیں اُسی کے دم کی ہیں
    یہ سخائیں اُسی کی ہیں معمول
    دن کو ملتا ہے روشنی کا چراغ
    شب کو کھلتا ہے چاندنی کا پھول
    اُس کے دَر سے ملے گدا کو بھیک
    اُس کے گھر سے ملے دُعا کو قبول
    اے حسنؔ کیا حسن ہے مصرعِ سال
    ’باغ اسلام کے کھلے کیا پھول‘
    ۰۴ھ ۱۳
    ؤ
    قطعہ تاریخ وصال اعلیٰ حضرت عظیم البرکۃ سیدی و ملجائی مرشدی و مولائی
    عالیجناب مولانا مولوی سید شاہ ابوالحسین احمد نوری میاں صاحب ص
    شیخ زمانہ حضرت سید ابوالحسینؔ
    جانِ مراد کانِ ہدیٰ شانِ اہتدا
    نورِ نگاہ حضرتِ آلِ رسول کے
    اچھے میاںؔ کے لختِ جگر آنکھوں کی ضیا
    خود عین نور سیدی عینیؔ کے نور عین
    عشقیؔ کے دل کے چین مرے درد کی دوا
    میرے بزرگ بھی اِسی دَر کے غلام ہیں
    میں بھی کمینہ بندہ اِسی بارگاہ کا
    ما بندۂ قدیم و توئی خواجۂ کریم
    پروردۂ تو ایم بیفزاے قدرِ ما
    جانِ ظہور اب کوئی اِخفا کا وقت ہے
    حائل جو پردہ بیچ میں تھا وہ بھی اُٹھ گیا
    اَسرار کا ظہور ہو شانِ ظہور سے
    اَستار سے اُٹھائیے اب پردۂ خفا
    اعلان سے دکھائیے وہ قادری کمال
    اظہار کیجے شوکتِ قدرت کا برملا
    دروازے کھول دیجیے امدادِ غیب کے
    کاسے لیے کھڑے ہیں بہت دیر سے گدا
    یَا سَیِّدِیْ میں کہہ کے پکاروں بلا کے وقت
    تم لَا تَخَفْ سناتے ہوئے آؤ سرورا
    داتا مرا سوال سنو مجھ کو بھیک دو
    منگتا تمہارا تم کو تمہیں سے ہے مانگتا
    آیا ہے دُور سے یہی سنتا ہوا فقیر
    باڑا بٹے گا حضرتِ نوری کے نور کا
    مجھ سا کوئی سقیم نہ تم سا کوئی کریم
    میری طلب طلب ہے تمہاری عطا عطا
    للہ نگاہِ مہر ہو مجھ تیرہ بخت پر
    آنکھوں کو نور دل کو عنایت کرو جلا
    دارین میں عُلُّو مراتب کرو عطا
    تم مظہرِ علی ہو علی مظہرِ عُلا
    خوش باش اے حسنؔ ترے دشمن ملول ہوں
    جس کا گدا ہے تو وہ ہے غم خوار بے نوا
    تاریخ اب وصالِ مقدس کی عرض کر
    حاصل ہو پورے شعر سے خاطر کا مدعا
    ’وہ سید وِلا گئے جب بزمِ قدس میں
    اچھے میاں نے اُٹھ کے گلے سے لگا لیا
    ۴۸۰ + ۸۴۴۔۔۔۔ ۲۴ ھ ۱۳
    ؤ
    قطعہ تاریخ ولادت با سعادت نبیرہ حضرت اخ الاعظم عالم اہل سنت
    جناب مولانا حاجی محمد احمد رضا خاں صاحب قادری مدظلہم
    بخانہ برخوردار مولوی حامد رضا خاں سلمہم اللہ تعالیٰ
    شکر خالق کس طرح سے ہو اَدا
    اک زباں اور نعمتیں بے اِنتہا
    پھر زباں بھی کس کی مجھ ناچیز کی
    وہ بھی کیسی جس کو عصیاں کا مزا
    اے خدا کیوں کر لکھوں تیری صفت
    اے خدا کیوں کر کہوں تیری ثنا
    گننے والے گنتیاں محدود ہیں
    تیرے اَلطاف و کرم بے انتہا
    سب سے بڑھ کر فضل تیرا اے کریم
    ہے وجودِ اقدسِ خیر الوریٰ
    ہر کرم کی وجہ یہ فضل عظیم
    صدقہ ہیں سب نعمتیں اس فضل کا
    فضل اور پھر وہ بھی ایسا شاندار
    جس پہ سب افضال کا ہے خاتمہ
    اولیا اس کے کرم سے خاص حق
    انبیا اس کی عطا سے انبیا
    خود کرم بھی خود کرم کی وجہ بھی
    خود عطا خود باعثِ جود و عطا
    اس کرم پر اس عطا و جود پر
    ایک میری جان کیا عالم فدا
    کر دے اک نم سے جہاں سیراب فیض
    جوش زن چشمہ کرم کے میم کا
    جان کہنا مبتذل تشبیہ ہے
    اللہ اللہ اُس کے دامن کی ہوا
    جان دی مردوں کو عیسیٰ نے اگر
    اُس نے خود عیسیٰ کو زندہ کر دیا
    بے سبب اُس کی عطائیں بے شمار
    بے غرض اُس کے کرم بے اِنتہا
    بادشا ہو ، یا گدا ہو ، کوئی ہو
    سب کو اُس سرکار سے صدقہ ملا
    سب نے اس در سے مرادیں پائی ہیں
    اور اسی در سے ملیں گی دائما
    جودِ دریا دل کے صدقہ سے بڑھے
    بڑھتے بادل کو گھٹا کہنا خطا
    مَنْ رّاٰنِیْ والے رُخ نے بھیک دی
    کیوں نہ گلشن کی صفت ہو دل کشا
    جلوۂ پاے منور کے نثار
    مہر و مہ کو کتنا اُونچا کر دیا
    اپنے بندوں کو خداے پاک نے
    اس کے صدقہ میں دیا جو کچھ دیا
    مصطفی کا فضل ہے مسرور ہیں
    نعمت تازہ سے عبدالمصطفیٰ
    عالم دیں مقتداے اہلِ حق
    سُنیّوں کے پیشوا احمد رضا
    فضلِ حق سے ہیں فقیرِ قادری
    اِس فقیری نے اُنھیں سب کچھ دیا
    لختِ دل حامد میاں کو شکر ہے
    حق نے بیٹا بخشا جیتا جاگتا
    میں دعا کرتا ہوں اب اللہ سے
    اور دعا بھی وہ جو ہے دل کی دعا
    واسطہ دیتا ہوں میں تیرا تجھے
    اے خدا از فضلِ تو حاجت روا
    عافیت سے قبلہ و کعبہ رہیں
    ہم غلاموں کے سروں پر دائما
    دولت کونین سے ہوں بہرہ ور
    اخِّ اعظم - مصطفی - حامد رضا
    نعمتِ تازہ کو دے وہ نعمتیں
    کیں جو تو نے خاص بندوں کو عطا
    دوست ان سب کے رہیں آباد و شاد
    دشمنِ بد خواہ غم میں مبتلا
    آفریں طبعِ رواں کو اے حسنؔ
    قطعہ لکھنا تھا قصیدہ ہو گیا
    سن ولادت کے دعائیہ لکھو
    ’علم و عمر اقبال و طالع دے خدا‘
    1325ھ
     
  7. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    ڈاکٹر مشاہد رضوی لائبریرین

    مراسلے:
    721
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cheerful
    مثنوی در ذکر ولادت شریف حضور سرور عالم صلی اللہ علیہ وسلم
    وہ اُٹھی دیکھ لو گردِ سواری
    عیاں ہونے لگے انوارِ باری
    نقیبوں کی صدائیں آ رہی ہیں
    کسی کی جان کو تڑپا رہی ہیں
    مؤدب ہاتھ باندھے آگے آگے
    چلے آتے ہیں کہتے آگے آگے
    فدا جن کے شرف پر سب نبی ہیں
    یہی ہیں وہ یہی ہیں وہ یہی ہیں
    یہی والی ہیں سارے بیکسوں کے
    یہی فریاد رس ہیں بے بسوں کے
    یہی ٹوٹے دلوں کو جوڑتے ہیں
    یہی بند اَلم کو توڑتے ہیں
    اَسیروں کے یہی عقدہ کشا ہیں
    غریبوں کے یہی حاجت روا ہیں
    یہی ہیں بے کلوں کی جان کی کل
    انہیں سے ٹیک ہے ایمان کی کل
    شکیب بے قراراں ہے اُنہیں سے
    قرارِ دل فگاراں ہے اُنہیں سے
    اِنہیں سے ٹھیک ہے سامانِ عالم
    اِنہیں پر ہے تصدق جانِ عالم
    یہی مظلوم کی سنتے ہیں فریاد
    یہی کرتے ہیں ہر ناشاد کو شاد
    اُنہیں کی ذات ہے سب کا سہارا
    انہیں کے دَر سے ہے سب کا گزارا
    انہیں پر دونوں عالم مر رہے ہیں
    انہیں پر جان صدقے کر رہے ہیں
    انہیں سے کرتی ہیں فریاد چڑیاں
    انہیں سے چاہتی ہیں داد چڑیاں
    انہیں کو پیڑ سجدے کر رہے ہیں
    انہیں کے پاؤں پر سر دھر رہے ہیں
    انہیں کی کرتے ہیں اَشجار تعظیم
    انہیں کو کرتے ہیں اَحجار تسلیم
    انہیں کو یاد سب کرتے ہیں غم میں
    یہی دکھ درد کھو دیتے ہیں دم میں
    یہی کرتے ہیں ہر مشکل میں اِمداد
    یہی سنتے ہیں ہر بے کس کی فریاد
    انہیں ہر دم خیالِ عاصیاں ہے
    انہیں پر آج بارِ دو جہاں ہے
    کسے قدرت نہیں معلوم اِن کی
    مچی ہے دو جہاں میں دُھوم اِن کی
    سہارا ہیں یہی ٹوٹے دلوں کا
    یہی مرہم ہیں غم کے گھائلوں کا
    یہی ہیں جو عطا فرمائیں دولت
    کریں خود جَو کی روٹی پر قناعت
    فزوں رُتبہ ہے صبح و شام اِن کا
    محمد مصطفی ہے نام اِن کا
    مزین سر پہ ہے تاجِ شفاعت
    عیاںہے جس سے معراجِ شفاعت
    بدن میں وہ عباے نور آگیں
    کہ جس کی ہر اَدا میں لاکھ تزئیں
    کہوں کیا حال نیچے دامنوں کا
    جھکا ہے رحمتِ باری کا پلّہ
    یہی دامن تو ہیں اے جانِ مضطر
    مچل جائیں گے ہم محشر میں جن پر
    سواری میں ہجومِ عاشقاں ہے
    کوئی چپ ہے کوئی محو فُغاں ہے
    کوئی دامن سے لپٹا رو رہا ہے
    کوئی ہر گام محو اِلتجا ہے
    کوئی کہتا ہے حق کی شان ہیں یہ
    کوئی کہتا ہے میری جان ہیں یہ
    یہ کہتا ہے کوئی بیمارِ فرقت
    ترقی پر ہے اب آزارِ فرقت
    ادھر بھی اِک نظر او تاج والے
    کوئی کب تک دلِ مضطر سنبھالے
    ز مہجوری بر آمد جانِ عالم
    ترحم یا نبی اللہ ترحم
    نہ آخر رَحْمَۃٌ لِّلْعٰلَمِیْنِی
    ز محروماں چرا فارغ نشینی
    بدہ دستے زپا اُفتادگاں را
    بکن دلداریِ دلدادگاں را
    بہت نزدیک آ پہنچا وہ پیارا
    فدا ہے جان و دل جس پر ہمارا
    اُٹھیں تعظیم کو یارانِ محفل
    ہوا جلوہ نما وہ جانِ محفل
    خبر تھی جن کے آنے کی وہ آئے
    جو زینت ہیں زمانے کی وہ آئے
    فقیرو جھولیاں اپنی سنبھالو
    بڑھو سب حسرتیں دل کی نکالو
    پکڑ لو اِن کا دامن بے نواؤ
    مرا ذمہ ہے جو مانگو وہ پاؤ
    مجھے اِقرار کی عادت ہے معلوم
    نہیں پھرتا ہے سائل اِن کا محروم
    کرو تو سامنے پھیلا کے دامن
    یہ سب کچھ دیں گے خالی پا کے دامن
    حسنؔ ہاں مانگ لے جو مانگنا ہو
    بیاں کر آپ سے جو مدعا ہو
    مرے آقا مرے سردار ہو تم
    مرے مالک مرے مختار ہو تم
    تصدق تم پر اپنی جان کر دوں
    ملیں تو دو جہاں قربان کر دوں
    تمہیں افضل کیا سب سے خدا نے
    دیا تاجِ شفاعت کبریا نے
    تمہیں سے لو لگائے بیٹھے ہیں ہم
    تمہارے در پہ آئے بیٹھے ہیں ہم
    تمہارا نام ہم کو حرزِ جاں ہے
    یہی تو داروے دردِ نہاں ہے
    بلا لیجے مدینے میں خدارا
    نہیں اب ہند میں اپنا گزارا
    تمہارا دَر ہو اور ہو سر ہمارا
    اسی کوچے میں ہو بستر ہمارا
    قضا آئے تو آئے اِس گلی میں
    رہے باقی نہ حسرت کوئی جی میں
    نہ ہو گور و کفن ہم کو میسر
    پڑا یوں ہی رہے لاشہ زمیں پر
    سگانِ کوچۂ پُر نور آئیں
    مرے پیارے مرے منظور آئیں
    مرے مُردے پہ ہوں آ کر فراہم
    غذا اپنی کریں سب مل کے باہم
    ہمیشہ تم پہ ہو رحمت خدا کی
    دعا مقبول ہو مجھ سے گدا کی
    تمام شد
     

اس صفحے کی تشہیر