تبسم جب اشک تری یاد میں آنکھوں سے ڈھلے ہیں ۔ صوفی تبسّم

یوسُف نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 7, 2021

  1. یوسُف

    یوسُف محفلین

    مراسلے:
    148
    جب اشک تری یاد میں آنکھوں سے ڈھلے ہیں
    تاروں کے دیے صورتِ پروانہ جلے ہیں

    سو بار بسائی ہے شبِ وصل کی جنت
    سو بار غمِ ہجر کے شعلوں میں جلے ہیں

    ہر آن امنگوں کے بدلتے رہے تیور
    ہر آن محبت میں نئی راہ چلے ہیں

    مہتاب سے چہرے تھے ستاروں سی نگاہیں
    ہم لوگ انہی چاند ستاروں میں پلے ہیں

    نوچے ہیں کبھی ہم نے حوادث کے گریباں
    ناکامیٔ کوشش پہ کبھی ہاتھ ملے ہیں

    تاریک فضاؤں کے ابھرتے رہے طوفاں
    پھر بھی تری یادوں کے دیے خوب جلے ہیں

    کیا جانیے یہ رند برے ہیں کہ بھلے ہیں
    ساقی کی نگاہوں کے اشاروں پہ چلے ہیں

    محسوس یہ ہوتا ہے کہ دنیا کی بہاریں
    اس گُل کدۂ ناز کے سائے کے تلے ہیں

    یونہی تو دل آویز نہیں شعر تبسمؔ
    یہ نقش ترے حسن کے سانچے میں ڈھلے ہیں​
     
    آخری تدوین: ‏فروری 7, 2021
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر