مصطفیٰ زیدی تعبیر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مصطفی زیدی

بنگش نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 22, 2008

  1. بنگش

    بنگش محفلین

    مراسلے:
    72
    مجھے یقیں تھا کہ تم نہیں ہو

    تھکے ہوے کھڑکیوں کے چہرے
    جلی ہوئ آسماں کی رنگت
    سیاہ آفا‍ق تک بگولے
    لہو کے آتش فشاں کی ساعت
    وجود پر ایک بوجھ سا تھا
    نہ صبح وعدہ نہ شام فرقت
    اسی مہیب آتشیں گھڑی میں
    کسی کی دستک سنی تو دل نے
    کہا کہ صحرا کی چوٹ کھائے
    کوئ غریب الدیار ہو گا
    یہ سچ کہ دل کی ہر ایک دھڑکن
    تمہارے درشن کے واسطے تھی
    حیات کا ایک ایک لمحہ
    تمہاری آہٹ کا منتظر تھا
    مگر ایک ایسے دیار غم میں
    جہاں کی ہر چیز خشمگیں ہو
    مجھے یقیں تھا کہ تم نہیں ہو
    2
    زمین سکتے میں ہے کہ کیونکر
    زمین پر ماہ تاب ابھرا
    یہ آگ کیسے بنی شبستاں
    کہاں سے آنکھوں کا خواب کا اترا

    3
    روایتوں کی ہزار صدیوں
    سے بڑھ کے یہ لمحہ حسیں ہے
    لہو میں پھولوں کے حاشیئے ہیں
    اداس کاسے میں انگبیں ہے
    یہ تم ہو یہ ہونٹ ہیں یہ آنکھیں
    مجھے یقیں ہے، مجھے یقیں ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,833
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت خوبصورت نظم ہے بنگش صاحب - بہت شکریہ! امید ہے مصطفیٰ زیدی کا مزید کلام بھی عنایت فرمائیں گے -
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر