بھارت کا مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم، 2 حصوں میں تقسیم کرنے کا اعلان

جاسم محمد نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 5, 2019

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    سلامتی کونسل کے اجلاس کا نتیجہ۔ پاکستان کو بڑی کامیابی مل گئی:
    [​IMG]
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  2. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    1971 کے بعد پہلی بار سلامتی کونسل میں مسئلہ کشمیر کو اٹھایا گیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    وزیراعظم اور امریکی صدر میں ٹیلیفونک رابطہ، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر گفتگو
    ویب ڈیسک 3 گھنٹے پہلے
    [​IMG]
    وزیراعظم کی ٹرمپ سے علاقائی امن کو درپیش خطرات پر بھی بات چیت ہوئی،شاہ محمود قریشی ، فوٹو: فائل

    اسلام آباد: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا وزیراعظم عمران خان سے ٹیلی فونک رابطہ ہوا ہے جس میں مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔

    وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وزیراعظم عمران خان کو ٹیلی فون کیا، اس ٹیلیفونک رابطے میں وزیراعظم اور ٹرمپ کے درمیان تفصیلی گفتگو ہوئی، وزیراعظم نے مقبوضہ کشمیر کی خراب صورتحال، بھارتی مظالم اور اس کی عالمی قوانیں کی مسلسل خلاف ورزیوں سے آگاہ کیا۔

    شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ وزیراعظم اور امریکی صدر کے مابین گفتگو میں علاقائی امن کو درپیش خطرات اور افغان امن عمل کے امور بھی زیر غور آئے جب کہ مسلسل رابطوں پر اتفاق بھی کیا گیا۔

    وزیرخارجہ کا کہنا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس آج ہورہا ہے اور اس سلسلے میں سلامتی کونسل کے 5 میں سے 4 ارکان سے رابطہ ہوچکا ہے جب کہ فرانسیسی صدر سے وزیراعظم عمران خان کی ٹیلیفونک رابطے کی کوشش کی جارہی ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    صرف چھ ماہ بعد
    جاوید چوہدری جمعہ۔ء 16 اگست 2019

    بیٹے نے باپ سے پوچھا ’’دشمن پوری زندگی آپ کے سامنے پھرتا رہا لیکن آپ غیرت کھانے کے بجائے اطمینان سے حقہ پیتے رہے‘ آپ نے آخر کیا کیا‘‘ باپ حوالات کے باہر زمین پر بیٹھ گیا‘ پنجاب کے تمام تھانوں میں حوالات ہیں۔

    لواحقین ملاقات کے لیے آتے ہیں تو یہ حوالات کی سلاخوں کے باہر کھڑے ہو جاتے ہیں اور ملزم اندر سلاخیں تھام کر ان کے ساتھ گفتگو کر لیتے ہیں‘ یہ ایک دو دن کا بندوبست ہوتا ہے‘ پولیس بالآخر ملزم کو عدالت میں پیش کر دیتی ہے اور جج صاحب انھیں ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیتے ہیں یا پھر جیل بھجوا دیتے ہیں اور یوں ملاقاتوں کا یہ عمل بدل جاتا ہے‘ دیہاتی باپ کا دیہاتی بیٹا ابھی تھانے میں بند تھا‘ اس پر اقدام قتل کا پرچہ درج ہو چکا تھا‘ اس نے اپنے پشتینی دشمن پر حملہ کیا تھا‘ دشمن کو گولی لگی تھی لیکن وہ بچ گیا۔

    پولیس نے ملزم کو گرفتار کر لیا اور وہ اب حوالات میں بند تھا‘ باپ بیٹے سے ملاقات کے لیے تھانے آیا اور سلاخیں پکڑ کر حوالات کے سامنے کھڑا ہو گیا‘ بیٹا اتھرا تھا‘ اس نے رکھائی سے کہا ’’دشمن پوری زندگی آپ کے سامنے پھرتا رہا اور آپ غیرت کھانے کے بجائے اطمینان سے حقہ پیتے رہے‘ آپ نے آخر کیا کیا‘‘ بیٹے کے الفاظ باپ کے دل پر لگے اور وہ حوالات کے باہر زمین پر بیٹھ گیا‘ اس کی آنکھوں میں آنسو تھے۔

    مجھے یہ آنسو اس وقت آصف علی زرداری‘ میاں نواز شریف‘ جنرل پرویز مشرف اور شوکت عزیز کی آنکھوں میں بھی نظر آ رہے ہیں اور آج اگر جنرل ضیاء الحق زندہ ہوتے تو یہ بھی اپنی آنکھیں صاف کر رہے ہوتے‘ باپ نے کہا ’’ بیٹا میں بیس سال کا تھا تو مجھے یہ دشمنی ورثے میں ملی‘ میں نے چالیس سال یہ دشمنی نبھائی لیکن ان چالیس برسوں میں ایک بار بھی حوالات آیا اور نہ میرے خاندان کے کسی شخص کو یوں سلاخوں کے باہر زمین پر بیٹھنا پڑا‘ میں اپنے دشمن کے گاؤں میں رہا‘ یہ روز میرے سامنے آتا تھا اور مجھے سلام کر کے چپ چاپ آگے نکل جاتا تھا۔

    میں اطمینان سے حقہ پیتا رہتا تھا‘ میرے ڈنگر کھیتوں میں کھلے پھرتے تھے اور تم لوگ روز اکیلے اسکول جاتے تھے‘ کسی میں جرأت نہیں تھی یہ ہمارے جانوروں یا ہمارے ملازموں کا راستہ روک سکے لیکن پھر تم آئے اور پہلے ہی دن حوالات پہنچ گئے‘ میں حوالات کے باہر زمین پر بیٹھنے پر مجبور ہو گیا اور تمہاری ماں‘ بہنیں اور بال بچے گھر میں محصور ہو گئے‘‘ باپ رکا اور آہستہ سے بولا ’’بیٹا دشمن ختم ہو جاتے ہیں لیکن دشمنیاں کبھی ختم نہیں ہوتیں چناں چہ دشمنوں کو مارنا عقل مندی یا بہادری نہیں ہوتی‘ دشمنوں کے وار سے بچنا‘ دشمنوں کے درمیان رہ کر اپنی عزت اور اپنا دبدبہ برقرار رکھنا اور دشمن کو اپنی عزت پر مجبور کر دینا کمال ہوتا ہے اور میں نے یہ کمال کیا تھا‘ میرا دشمن پوری زندگی میرے سامنے پھرتا رہا لیکن میں نے کبھی دشمن کو اپنے گریبان میں ہاتھ نہیں ڈالنے دیا تھا‘ میں نے اسے اپنی عزت کرنے پر مجبور رکھا ‘‘۔

    بیٹا نہیں مانا‘ بیٹے جب ناتجربہ کار اور اکھڑ ہوتے ہیں تو یہ نہیں مانا کرتے‘ پنجابی کی ایک کہاوت ہے جو اپنے باپ کی نہیں مانتا اسے پورے زمانے کی ماننا پڑتی ہے‘ وہ جگہ جگہ جھکتا اور منتیں کرتا ہے اور یہ ’’یونیورسل ٹروتھ‘‘ کسی ایک گھر یا خاندان کی بات نہیں‘ یہ پوری دنیا پر لاگو ہوتا ہے‘ مثلاً آپ کشمیر کے ایشو کو لے لیجیے‘ ہم جنرل ضیاء الحق کو آمر‘ جمہوریت دشمن اور جہادی سمجھتے ہیں‘ ہم انھیں موجودہ حالات کی خرابی کا ذمے دار بھی کہتے ہیں‘ یہ سارے جرم اپنی جگہ لیکن ہمیں ماننا ہو گا جنرل ضیاء الحق نے پاکستان کی بقا کی جنگ افغانستان میں لڑی اور بھارت کو پنجاب میں مصروف رکھا۔

    جنرل ضیاء الحق اگر سوویت یونین کو افغانستان میں انگیج نہ کرتے تو یہ افغانستان کو ہڑپ کرنے کے بعد پاکستان کے ساڑھے چھ ہزار کلومیٹر لمبے بارڈر پر بیٹھ جاتا‘ امریکا کو اسے روکنے کے لیے پاکستان میں فوجی اڈے بنانا پڑتے اور یوں پاکستان آج کا افغانستان بن چکا ہوتا‘ ہمیں یہ بھی ماننا ہو گا بھارت نے پاکستان کو افغانستان میں مصروف دیکھ کر ہمارے اوپر یلغار کے بے شمار منصوبے بنائے تھے لیکن جنرل ضیاء الحق نے بھارتی سرحد پر ایک اضافی فوجی لگائے بغیر انڈیا کو پنجاب کی خالصتان تحریک اور ایٹم بم سے انگیج رکھا‘ راجیو گاندھی کی حکومت تھی۔

    بھارت نے پاکستان کی سرحد پرآپریشن براس ٹیک کے نام سے فوجی مشقیں شروع کر دیں‘ جنرل ضیاء الحق نے بھارتی صحافی کلدیپ نیئر کو پاکستان بلوایا اور سید مشاہد حسین کے ذریعے اس کی ملاقات ڈاکٹر عبدالقدیر سے کرا دی‘ ڈاکٹر عبدالقدیر نے کلدیپ نائیر کو بتایا‘ ہم ایٹم بم بنا چکے ہیں اور یہ کسی بھی جارحیت کے ردعمل میں استعمال ہو سکتا ہے‘ کلدیپ نیئر نے یہ انٹرویو 28 جنوری 1987 کو لیا‘ کلدیپ نیئرکے انٹرویو کے بعد جنرل ضیاء الحق اچانک 22 فروری 1987 کو پاکستان اور انڈیا کاٹیسٹ میچ دیکھنے جئے پور پہنچ گئے‘ جئے پور میں ان کی راجیو گاندھی سے ملاقات ہوئی اور جنرل ضیاء الحق نے کھڑے کھڑے راجیو گاندھی کے کان میں سرگوشی کی‘ ہم صرف پندرہ کروڑ مسلمان ہیں‘ آپ ہمیں مار دیں ہم مر جائیں گے لیکن ہمارے مرنے کے باوجود دنیا میں مسلمان اور اسلام دونوں موجود رہیں گے مگر ہم نے آپ پر ایٹم بم داغ دیا تو پھر دنیا میں ہندو مت ختم ہو جائے گا‘ فیصلہ آپ کے ہاتھ میں ہے۔

    راوی بتاتے ہیں راجیو گاندھی کے ماتھے پر پسینہ آ گیا اور بھارت اپنی فوجیں بیرکس میں واپس لے جانے پر مجبور ہو گیا اور جنرل ضیاء الحق نے خالصتان تحریک کے ذریعے بھی اپنی سرحدیں محفوظ رکھیں‘ ہم بینظیر بھٹو کو بھی برا بھلا کہتے رہتے ہیں لیکن آپ ان کا کمال بھی دیکھیے‘ بینظیر بھٹو 1988میں راجیو گاندھی کو پاکستان لے آئی تھیں‘ میاں نواز شریف بھی برے ہیں اور یہ اس وقت جیل میں ہیں لیکن یہ بھی فروری 1999میں بی جے پی جیسی کٹر ہندو تنظیم کے وزیراعظم اٹل بہاری واجپائی کو لاہور لے آئے تھے اور انھیں مینار پاکستان کے نیچے کھڑا کر کے دو قومی نظریہ ماننے پر مجبور کر دیا تھا‘ کارگل کی جنگ بھی کھلی ایٹمی جنگ میں تبدیل ہو سکتی تھی۔

    میاں نواز شریف نے صدر بل کلنٹن کو درمیان میں ڈالا اور یہ جنگ ٹل گئی‘ جنرل پرویز مشرف کے دور میں بھی دو بار جنگی صورت حال پیدا ہوئی‘ فوجیں آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر کھڑی ہو گئیں بس ایک گولی چلنے کی دیر تھی اور پورا خطہ جنگ کے دوزخ میں جا گرتا لیکن جنرل پرویز مشرف نے افغان کارڈ استعمال کیا اور امریکا نے انڈین آرمی کو بیرکس میں پہنچا دیا‘ آصف علی زرداری بھی اس وقت نیب کی حراست میں ہیں‘ یہ 2008میں صدر تھے‘ ممبئی اٹیکس ہوئے‘ اجمل قصاب نے 160 لوگ بھی مار دیے اور انڈیا کی اکانومی کا بھرکس بھی نکال دیا‘ بھارت اپنی فوجیں سرحدوں پر لے آیا لیکن زرداری صاحب نے دو لوگوں کو درمیان میں ڈالا اور پوری آگ ٹھنڈی کر دی اور میاں نواز شریف 25 دسمبر 2015 کو نریندر مودی کو پاکستان بھی لے آئے اور بھارت کے ساتھ ’’کمپوزٹ ڈائیلاگ‘‘ بھی شروع کرا دیے۔

    یہ تمام لوگ برے ہو سکتے ہیں‘ یہ کرپٹ اور جمہوریت دشمن بھی ہو سکتے ہیں لیکن ان کے دور میں بھارت کو پاکستان میں سرجیکل اسٹرائیک‘ مقبوضہ کشمیر میں مزید فوج داخل کرنے اور آرٹیکل 370 ختم کرنے کی جرأت نہیں ہوئی‘ یہ تمام لوگ بزدل بھی ہوں گے لیکن انڈیا کو ان کی بزدلی کے باوجود مقبوضہ کشمیر پر یلغار کی ہمت نہیں ہوئی‘ یہ پاکستان کو آنکھیں نہیں دکھا سکا‘ یہ لوگ شاید الٹے لٹک جاتے ہوں گے لیکن یہ بھارت کو بھی انگیج رکھتے تھے اور یہ جیسے تیسے امریکا‘ چین اور سعودی عرب کو بھی اپنے ساتھ کھڑا کر لیتے تھے مگر آج کیا ہو رہا ہے؟ پاکستان آج بہادر لوگوں کے ہاتھ میں ہے لیکن قائدین کی تمام تر بہادری کے باوجود بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں کرفیو بھی لگا دیا۔

    ایک لاکھ 80 ہزار فوج بھی بڑھا دی‘ آرٹیکل 370 اور 35 اے بھی اڑا دیا اور یہ اب آزاد کشمیر کی طرف بھی بڑھ رہا ہے‘ کشمیر میں کسی بھی وقت کھلی جنگ شروع ہو سکتی ہے‘ بھارت تیس چالیس لاکھ کشمیریوں کو آزاد کشمیر کی طرف دھکیلنے کا منصوبہ بھی بنا رہا ہے اور کشمیر اب مقبوضہ فلسطین بھی بن رہا ہے مگر ابتلا کی اس گھڑی میں دنیا کا کوئی ملک ہمارے ساتھ کھڑا نہیں ہو رہا‘ امریکا‘ چین‘ روس اور سعودی عرب کسی نے کھل کر ہمارے کندھے کے ساتھ کندھا نہیں جوڑا‘ ہم نے یو این کی سلامتی کونسل کا اجلاس بلا لیا ہے۔

    خدانخواستہ اگر اس اجلاس میں لوگ نہیں آتے یا پھر کوئی مستقل ممبر ویٹو کر دیتا ہے تو پھر ہم اپنا مقدمہ بغیر لڑے ہار جائیں گے‘ کشمیر ہمارے ہاتھ سے نکل جائے گا۔ہم کتنے بہادر ہیں یہ چند ہفتے بعد دنیا دیکھ لے گی لیکن ہم کتنے عقل مند ہیں دنیا یہ روز دیکھ رہی ہے‘ ہمیں آج نہیں تو کل سہی لیکن یہ ماننا ہو گا جنگیں لڑنا کمال نہیں ہوتا‘ جنگوں سے بچنا اور دشمنوں کو حملے سے باز رکھنا کمال ہوتا ہے مگر مجھے افسوس سے کہنا پڑتا ہے ہماری بہادر قیادت یہ کمال نہیں کر سکی‘ ہمیں اس نے دنیا میں بھی تنہا کر دیا‘ مقبوضہ کشمیر بھی ضایع کر دیا اور یہ ہمیں اب جنگ تک بھی لے آئی ہے‘ ہم اگر اس حکمت عملی کو بہادری سمجھتے ہیں تو پھر چھ ماہ بعد جی ہاں صرف چھ ماہ بعد پوری قوم مل کر اپنے بہادر قائدین کو سلام پیش کر رہی ہو گی‘ ہمارے وزیراعظم ایک اور ورلڈ کپ لے کرپاکستان تشریف لا رہے ہوں گے‘ آپ بس انتظار کیجیے‘چھ ماہ بعد آپ کی آنکھیں کھل جائیں گی۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  6. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    9,408
    برصغیر کی قیادت کشمیر کا مسئلہ حل کرنے سے قاصر رہی ہے اور شاید قاصر ہی رہے گی الا یہ کہ ایک ایسی خوفناک جنگ ہو کہ دونوں اقوام کے ہاتھ میں کچھ نہ رہے۔ تب عالمی برادری کو بھی کچھ کرنے کی ضرورت نہ پڑے گی کیونکہ جو بچ جائیں گے، وہ خود بخود دانشور بن جائیں گے اور باہمی مسائل کو بخوشی حل کر لیں گے۔ ہمیں دراصل بڑھک بازی کا بہت شوق ہے چاہے یہ بڑھکیں لگانے والے سرحد کے اِس طرف ہوں یا اُس طرف ہوں۔ پہلے پہل تو یہ معاملہ ریاستوں کے مابین ہوتا تھا تو معاملہ دب جاتا تھا؛ اب سوشل میڈیا پر جس طرح نفرتیں پھیلائی جا رہی ہیں، اس کے نتیجے میں خطے میں امن کا فروغ اک خواب ہی لگتا ہے۔ سوشل میڈیا پر نت نئے ٹرینڈز چلانے والوں نے جب جنگ ہوتے دیکھ لی، اس کی تباہ کاریاں ملاحظہ کر لیں، تو پھر، جو بچ رہیں گے، وہ کوئی ایسا ویسا اسٹیٹس اپ ڈیٹ کرنے سے پہلے کم از کم دس بار تو سوچیں گے۔ شاید ہمیں عافیت کی قدر نہ ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏اگست 16, 2019
    • زبردست زبردست × 4
  7. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    37,709
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  8. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    37,709
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    اگر یہ واقعی بھارت کے وزیر دفاع کے ہی خیالات ہیں تو سوچیں مودی کی باقی کابینہ کیسی ہوگی۔
     
    • متفق متفق × 1
  10. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    9,408
    مودی سرکار کے بارے میں کوئی شبہ نہیں ہے کہ یہ ہندوستان کا وہ چہرہ ہے جو انتہائی ناپسندیدہ ہے۔ تاہم، اُس طرف جو انتہاپسندی پروان چڑھی ہے، اس میں کچھ قصور ہمارا بھی ہے۔ اس پر بھی غور و فکر کر لینا بہتر رہے گا۔ مزید یہ کہ، کیا ہماری کشمیر کے بارے میں پالیسی واضح ہے! بدقسمتی سے، ایسا نہیں ہے۔ ہم اول روز سے تذبذب کا شکار ہیں کہ آیا یہ مسئلہ مذاکرات کے ذریعے حل کرنا ہے یا بڑی جنگ کے ذریعے۔ ہم کبھی کارگل مچاتے ہیں اور کبھی مذاکرات کا ڈول ڈالنے لگ جاتے ہیں۔ کشمیر پر ہندوستان تسلط جمائے ہوئے ہے اور وہ اس کو بہرصورت طویل مدت کے لیے افورڈ کر سکتا ہے۔ اور اس نے، یہی پالیسی اختیار کر رکھی ہے کہ کبھی تو پاکستان کو بیک فٹ پر لے آئے گا۔ عالمی برادری بھی ہمیں بیک فٹ پر ڈالنا چاہتی ہے اور اس کی مختلف سطح پر تدابیر اختیار کی جا رہی ہیں۔ تاہم، عوام کی سطح پر، شدید مزاحمت موجود ہے اور ہم نے یہ بیانیہ ایک دو روز میں تیار نہیں کیا ہے جو ہوا میں تحلیل ہو جائے گا۔ معلوم ہوتا ہے کہ حکومت نے امریکا کی مدد سے کشمیر کا مسئلہ حل کرنے کے لیے 'کوشش' کی تھی تاہم وہ گلے پڑ گئی ہے۔ مودی نے ایک قدم آگے بڑھا دیا ہے اور ہم ہیں کہ آئی ایم ایف کے چنگل میں گرفتار ہونے کے بعد ٹرمپ سے ثالثی کی امید لگائے بیٹھے ہیں۔ امریکا نے شاید ہمیں طفل تسلی دی ہے اور باور کرایا ہے کہ یہ مسئلہ باہمی بات چیت سے حل کرنا ہو گا۔ اب بارڈر پر مودی سرکار ہمارا امتحان لے گی۔ کسی قسم کا جارحانہ قدم عالمی برادری میں ہماری مزید سبکی کا باعث بنے گا۔ بہتر ہو گا کہ ہم طے کر لیں کہ آیا ہمیں انڈیا سے جنگ لڑنی ہے؛ آیا غزوہء ہند کی بابت جو سوشل میڈیا پر تواتر سے ایک بیانیہ تشکیل دیا جا رہا ہے، اس پر چلنا ہے ۔ یہ بھی جان لینا بہتر رہے گا کہ پچھلے کئی برسوں سے تواتر سے ترویج دیے جانے والا یہ بیانیہ کیا افواج پاکستان سے جڑا ہوا ہے یا محض سوشل میڈیاکے ذریعے دشمن پر دھاک بٹھانے کے لیے ٹرینڈز سیٹ کیے جا رہے ہیں اور مذہب کارڈ استعمال کیا جا رہا ہے۔ اگر ہم جنگ لڑنا چاہتے ہیں تو پھر قوم کو تیار کیجیے اور یک سو ہو کر دشمن پر چڑھ دوڑیے۔ پھر جو کچھ ہو گا، دیکھا جائے گا۔ اس سے بہتر موقع کیا ہاتھ آئے گا۔ کشمیری آپ سے توقعات جوڑے بیٹھے ہیں۔ کرفیو نے ان کے لیے جینا مشکل بنا دیا ہے۔ آپ اپنی فوجیں وہاں اتار دیں۔ انتظار کس بات کا ہے۔ادھر مودی سرکار کو بھی چاہیے کہ آزاد کشمیر پر حملہ کر دے تاکہ انہیں بھی معلوم پڑے کہ کسی کو کمزور سمجھنے کا انجام کیا ہوتا ہے۔ معلوم ہوتا ہے کہ دونوں اطراف تذبذب ہے اور معاملات ان کی گرفت سے باہر نکلتے جا رہے ہیں۔ یہ ہے اس خطے کی صورت حال جہاں غربت و جہالت کا دور دورہ ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 3
  11. بندہ پرور

    بندہ پرور محفلین

    مراسلے:
    164
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    سلامتی کونسل میں آج اس مسئلے کے اٹھنے سے کیا کچھ مثبت امید رکھی جاسکتی ہیں فرقان صاحب
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  12. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    مودی اور عمران سرکار دونوں معاشی محاذ پر ناکامی کا ملبہ کشمیر تنازعہ پر ڈال کر راہ فرار اختیار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ لیکن ان کو بھاگنے نہ دیا جائے گا۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  13. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    9,408
    بندہ پرور! ہمیں کچھ زیادہ اُمیدیں نہ ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ دنیا ہم پر اعتماد کرنے کو تیار نہیں ہے، بالخصوص کارگل ایڈونچر کے بعد۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ عالمی برادری اس حد تک پاکستان سے ضرور خوف زدہ ہے کہ اس کے پاس نیوکلیئر ہتھیار ہیں، اور اس خطے میں ممکنہ تباہ کاری کے اثرات پوری دنیا پر کسی نہ کسی صورت پڑیں گے اس لیے وہ کشمیر کے مسئلے کا کوئی نہ کوئی حل نکالنا چاہتی ہے تاہم ہندوستان اپنی شرائط پر کشمیر کا مسئلہ حل کروانا چاہتا ہے۔ اس وقت عالمی برادری زیادہ تر تو انڈیا کے ساتھ ہے۔ ہماری نیک خواہشات حکومت کے ساتھ ہیں، تاہم، بدقسمتی سے ان تلوں میں تیل نہ ہے۔ اور اس میں، صرف موجودہ حکومت کا قصور نہیں ہے۔
     
    • متفق متفق × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  14. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    9,408
    انڈیا کے معاشی حالات اس قدر خراب نہیں ہیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
    • غیر متفق غیر متفق × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    بالکل۔ پوری دنیا کے سامنے ہندو انتہا پسند مودی کی اصلیت سامنے آ چکی ہے۔ یہ واشنگٹن پوسٹ کا آرٹیکل پڑھ لیں۔
    The Kashmir crisis isn’t about territory. It’s about a Hindu victory over Islam.
     
    • زبردست زبردست × 1
  16. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    چین اور بھارت کی معیشت کا موازنہ کر لیں۔ زمین آسمان کا فرق ہے۔ یاد رہے کہ سلامتی کونسل میں کشمیر کا مسئلہ چین لے کر گیا ہے۔ اور امریکہ بھارت کو چین کی بڑھتی طاقت اور اہمیت کے خلاف استعمال کر رہا ہے۔ جس کا فائدہ مودی سرکار خوب اٹھا رہی ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  17. بندہ پرور

    بندہ پرور محفلین

    مراسلے:
    164
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بالکل صحیح ، تاہم چین جیسا طاقتور ملک اگر اس مسئلے میں کشمیر اور پاکستان کے ساتھ کھڑا ہوجائے تو ہندوستان کو اپنے شرپسندانہ عزائم پورے کرنے سے پہلے دس بار
    سوچنا پڑے گا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  18. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    9,408
    چین تب تک ساتھ دیتا ہے اور دے گا جب تک اس کے اپنے مفادات ہیں۔ وہ جنگ روکنے میں کردار ادا کر سکتا ہے تاہم جنگ چھڑ جانے کی صورت میں ہمیں چین سے کسی قسم کی کوئی امید نہیں رکھنی چاہیے۔ بہتر ہو گا کہ ہم کسی ایڈونچر میں کودنے سے قبل اپنا ہوم ورک اچھی طرح سے کر لیں۔ تاہم، یہ بات سچ ہے کہ اگر ہندوستان نے کوئی ایڈونچر کیا تو اس کے نتائج اس کے لیے بھی بھیانک ہی ہوں گے کیونکہ اس کا ایک مطلب یہ ہو گاکہ انڈیا داخلی عدم استحکام کا شکار ہو جائے گا۔ پاکستان کی بقا میں، دراصل ہندوستان کی بھی بقا ہے۔ اگر یہ خطہ عدم استحکام کا شکار ہو گا تو چین کی بھی خواہش ہو گی کہ جو ملبہ گرے، وہ ہندوستان پر گرے۔ تصور کیجیے کہ ہندوستان کس طرح سے بند باندھے گا ان افراد پر، جو جہاد کا جذبہ لیے وہاں داخل ہونے کے لیے بے تاب ہوں گے۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • متفق متفق × 1
  19. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    16,338
    بھارت نے ایسی کوئی شرط نہیں رکھی۔ بھارت کا اول دن سے یہی مطالبہ رہا ہے کہ پورا کشمیر (پاکستانی آزاد کشمیر، گلگت بلتستان، بھارتی مقبوضہ کشمیر، اکسائی چن، سیاچن اور لداخ) سارا کا سارا اس کا اٹوٹ انگ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ تاشقند معاہدہ، شملہ معاہدہ، لاہور معاہدہ کے باوجود مسئلہ کشمیر حل نہیں کیا جا سکا۔ جب کہ پاکستان نے چین سے مذاکرات کر کے کشمیر کے کچھ حصے اسے خود دئے تھے۔ جبکہ بھارت کشمیر کا ایک انچ چھوڑنے کو تیار نہیں ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  20. بندہ پرور

    بندہ پرور محفلین

    مراسلے:
    164
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    جی ہاں ، چونکہ دونوں ممالک ایٹمی طاقتیں اس خطے میں جنگ دونوں کی تباہی ہی ہوگی
     
    • متفق متفق × 3

اس صفحے کی تشہیر