1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

برائے اصلاح

فلسفی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 3, 2018

ٹیگ:
  1. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    سر الف عین اور دیگر احباب سے اصلاح کی گذارش ہے

    زندگی بتا تجھے، کس کا انتظار ہے
    تجھ پہ موت کے سوا، کس کا اختیار ہے

    گوشہء نشیں ہے وہ ، تو پھر آج شہر میں
    ہر درودوار پر، کس کا اشتہار ہے

    منزلیں سراب ہیں، دشتِ زیست میں تو پھر
    اے مسافر اب تجھے ، کس کا اعتبار ہے

    قصرِ شاہ کے قریب، بھوک محوِ رقص ہے
    اس عجیب ملک پر، کس کا اقتدار ہے

    امتحاں کے وقت میں ، مشکلوں کے سامنے
    دیکھنا ہے حوصلہ، کس کا برقرار ہے

    بے قصور جان کر، بے وفا سے جا ملا
    ہائے بے نوا یہ دل ، کس کا غم گسار ہے

    جب گناہ کے لیے ، پورا اختیار ہو
    تب پتا چلے یہ نفس ، کس کا پیروکار ہے

    ہو خزاں یا فصلِ گل ، اس کو فکر ہی نہیں
    جس کے صحن میں کوئی ، پھول ہے نہ خار ہے

    خیر خواہ ہوں مگر ، اس کو کیا صلاح دوں
    جس کی آنکھوں میں ابھی ، عشق کا خمار ہے

    سر جھکا کے فلسفیؔ ، اے خدا ترے حضور
    اپنے ہر گناہ پر، آج شرمسار ہے
    نوٹ: درودوار کی ترکیب معلوم نہیں درست ہے کہ نہیں۔ اگر درست نہیں تو اس کا متبادل یہ ہو سکتا ہے؟
    ہر گلی کے موڑ پر، کس کا اشتہار ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,589
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دوار تو یقیناً مجھے پسند نہیں یہ ہندی شاعر لکھتے ہیں۔ لیکن گلی کے موڑ بھی اچھا متبادل نہیں. کچھ اور بھی سوچو لیکن اس کے علاوہ گوشہء نشین کی ترکیب سمجھ نہیں سکا اسی شعر میں ۔ محض گوشہ نشین کا محل ہے۔ اسی طرح کئی حضرات گوشِ گزار بھی لکھتے ہیں حالانکہ کسر اضافت کی وہاں بھی ضرورت نہیں

    ہو خزاں کہ فصل گل بہتر ہو گا بنسبت یا فصل گل کے
    باقی درست ہے غزل ۔ روانی مزید بہتر کی جا سکتی ہے کچھ اشعار جیسے مقطع میں جہاں بعد کا ٹکڑا پہلے لایا جا سکتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    شکریہ سر تبدلیاں کردیں ہیں اب دیکھیے

    زندگی بتا تجھے کس کا انتظار ہے
    تجھ پہ موت کے سوا کس کا اختیار ہے

    منکسر مزاج تُو ، اب بتا کہ شہر میں
    ہر جگہ لگا ہے جو، کس کا اشتہار ہے

    دشتِ زیست کی تو سب، منزلیں سراب ہیں
    اے مسافر اب تجھے ، کس کا اعتبار ہے

    قصرِ شاہ کے قریب، بھوک محوِ رقص ہے
    اس عجیب ملک پر، کس کا اقتدار ہے

    امتحاں کے وقت میں ، مشکلوں کے سامنے
    دیکھنا ہے حوصلہ، کس کا برقرار ہے

    بے قصور جان کر، بے وفا سے جا ملا
    ہائے بے نوا یہ دل ، کس کا غم گسار ہے

    جب گناہ کے لیے ، پورا اختیار ہو
    تب پتا چلے یہ نفس ، کس کا پیروکار ہے

    ہو خزاں کہ فصلِ گل ، اس کو فکر ہی نہیں
    جس کے صحن میں کوئی ، پھول ہے نہ خار ہے

    خیر خواہ ہوں مگر ، اس کو کیا صلاح دوں
    جس کی آنکھوں میں ابھی ، عشق کا خمار ہے

    اے خدا ترے حضور، سر جھکا کے فلسفیؔ
    اپنے ہر گناہ پر، آج شرمسار ہے
    سر میری ناقص فہم کے مطابق تو نشان لگے اشعار میں ہی تبدیلی کی ضرورت تھی۔ اگر کہیں اور بھی ضرورت ہے تو آپ نشاندہی فرما دیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,589
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اب درست ہو گئی ہے غزل، انہیں نشان زد تبدیلیوں کا مشورہ دیا تھا
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    شکریہ سر۔
     

اس صفحے کی تشہیر