برائے اصلاح

فلسفی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 10, 2018

ٹیگ:
  1. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    سر الف عین

    آنسوؤں سے ہے بھیگی ہوئی آستیں
    یوں ہمیں یاد آتے ہیں وہ دل نشیں
    دردِ دل کو زباں پر نہ لایا کرو
    ہر کوئی بات گہری سمجھتا نہیں
    آج ان سے ہماری ملاقات ہے
    بات نکلے کی پھر اب کہیں سے کہیں
    وہ اگر پھر سے ناراض ہوتے ہیں اب
    تو منانے کی فرصت ہمیں بھی نہیں
    ہر حسیں دے تلاشی ابھی کے ابھی
    میرا دل کھو گیا ہے یہیں پر کہیں
    رات ان سے ملاقات تھی آخری
    سو ہمیں آئینے کی ضرورت نہیں
    یوں تو آیا تھا شوقِ تماشہ لیے
    بن گیا ہوں تماشہ میں خود اب یہیں
    بزمِ شرفا ہے یہ مانتا ہوں مگر
    دل کسی کا بنا پوچھے لیتے نہیں
    ق
    ایک جانب سے آئی صدا، تو نے خود
    ڈال رکھی ہے مشکل میں جانِ حزیں
    قلب و جاں جس کو پیارے ہیں وہ آدمی
    حسن والوں کی محفل میں آتا نہیں
     

اس صفحے کی تشہیر