ایک دوست کے والد صاحب کی وفات پر تعزیتی نظم

عمران سرگانی نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 18, 2019

  1. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    412
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    فعلن فعلن فعلن فعلن

    باپ

    دھوپ میں باہر جب میں نکلتا
    مجھ پر میرے باپ کا سایہ پڑتا
    اب میں سمجھا میرا باپ مرے آگے کیوں چلتا تھا
    جب میں پیر اٹھاتا تو وہ اپنی ہتھیلی نیچے رکھ دیتا تھا
    اب جو میرے سر سے اسکا سایہ اٹھا تو یہ معلوم پڑا
    راہِ زیست کٹھن ہے کتنی
    ریت ان صحراؤں کی گرم ہے کتنی
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    412
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
  3. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    14,540
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    یہ پڑھ کر دل سے بے اختیار ہائے نکلی ، کچھ تو ہے اس نظم میں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    412
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    آپکی محبت کے لئے سپاس گزار ہوں۔۔۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,859
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    درست ہے نظم
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • متفق متفق × 1
  6. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    412
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    بہت شکریہ سر۔۔۔ نوازش
     
  7. شاہد شاہنواز

    شاہد شاہنواز لائبریرین

    مراسلے:
    1,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    باپ

    دھوپ میں باہر جب میں نکلتا
    مجھ پر باپ کا سایہ پڑتا

    ۔۔روانی کے لیے لفظ میرے کو دوسرے مصرعے سے نکال دیا ہے، آپ کو درست لگے تو واپس لا سکتے ہیں، روانی اوپر کے مصرعے سے مطابقت کو کہہ رہا ہوں یہاں۔۔


    اب میں سمجھا میرا باپ مرے آگے کیوں چلتا تھا
    جب میں پیر اٹھاتا تو وہ اپنی ہتھیلی نیچے رکھ دیتا تھا

    اب جو میرے سر سے اسکا سایہ اٹھا تو یہ معلوم پڑا
    ۔۔۔ یہ مصرع اوپری دو مصرعوں سے اوپر لے آئیں، تب کیسا رہے گا؟

    راہِ زیست کٹھن ہے کتنی
    ریت ان صحراؤں کی گرم ہے کتنی
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. عمران سرگانی

    عمران سرگانی محفلین

    مراسلے:
    412
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Shh
    یعنی یوں کر دیا جائے۔۔۔

    باپ

    دھوپ میں باہر جب میں نکلتا
    مجھ پر باپ کا سایہ پڑتا
    اب جو میرے سر سے اسکا سایہ اٹھا تو یہ معلوم پڑا
    میرا باپ مرے آگے کیوں چلتا تھا
    جب میں پیر اٹھاتا تو وہ اپنی ہتھیلی نیچے رکھ دیتا تھا
    اب میں سمجھا
    راہِ زیست کٹھن ہے کتنی
    ریت ان صحراؤں کی گرم ہے کتنی

    اب ٹھیک ہے بھائی؟؟؟
     

اس صفحے کی تشہیر