اکبر کا ہندوستان کیسا تھا؟

سید رافع نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 3, 2020

  1. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,233
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ڈاکٹر مبارک علی کی کتاب اکبر کا ہندوستان ایک عیسائی پادری کا سفر نامہ ہے۔ اکبر کی دعوت پر پادریوں کی ایک جماعت ہندوستان آئی اور تین سال اسکے دربار میں حاضر رہی۔ یہ کتاب ان کا سفر نامہ ہے۔ کتاب سینکڑوں واقعات سے بھری پڑی ہے، انہی میں سے چند قصے سیکھنے کی غرض سے پیش کیے جا رہے ہیں۔ کتاب کے مصنف کہتے ہیں کہ انہوں نے کتاب کے ترجمے سے وہ تمام باتیں حذف کر دیں ہیں جو عیسائی وفد نے سخت مذہبی دشمنی میں کہیں۔

    اکبر مذہبی تھا یا سیاسی؟
    اکبر کا باپ ہمایوں اپنے کتب خانے کی سیڑھیوں سے گر کر ہلاک ہوا۔ معلوم ہوتا ہے کہ باپ سے حاصل ہونے والی علم دوستی اورذاتی حیثیت میں بہادری نے اکبر کو وہ بنایا جیسا کہ کتاب بتاتی ہے۔ کتاب سے اندازہ ہوتا ہے کہ وہ دور مذہبی عدم رواداری کا دور تھا۔ اکبر عیسائیوں کے عقائد و حالات جاننا چاہتا تھا۔ اس کی بنیادی وجہ عیسائی بادشاہ کا گجرات پر قبضہ تھا۔ پرتگال کے بادشاہ نے اپنی تمام مقبوضات سے غیر مسیحوں کو نکال دیا تھا۔ مجوسیوں کو گوا میں کوئی حقوق حاصل نہ تھے۔ پرتگالی زبردستی لوگوں کو مسیح بناتے۔ ہندوستان میں وہ جہاں جاتے لوٹ مار کا بازار سرگرم رکھتے۔ سمندروں پر انکا قبضہ تھا سو مسلمانوں کے چند علماء نے حج پر نہ جانے کا فتویٰ دیا۔ ایسے حالات میں اکبر ہر مذہب و عقیدے کو سمجھنے کی کوشش کرتا تا کہ رواداری کو فروغ دے کر اپنی سلطنت کو بڑھایا جائے۔ صاف ظاہر ہے کہ اکبر ایک بادشاہ تھا جو اپنے مذہب کو اپنی رعایا پر مسلط کیے بغیر اپنی حکومت کو وسیع کرنا چاہتا تھا۔

    اکبر مذہب اسلام سے کب بدظن ہوا؟
    جب تک اکبر نے فتح پور سیکری میں عبادت خانہ تعمیر کرایا وہ مذہبی تھا۔ علماء و صوفیہ کی قدر کرتا۔ اب جب عبادت خانہ تعمیر ہو گیا تو اس میں ہر جمعرات کو محفل کا انعقاد کیا گیا۔ 400 علماء و صوفیہ کے بیٹھنے کی گنجائش تھی۔ لوبان اور طرح طرح کے پھولوں سے عبادت خانے کو سجایا گیا تھا تاکہ پاکیزگی کا احساس ہو۔ لیکن جب انہی علماء و صوفیہ کے بیٹھنے کی جگہوں کی باری آئی تو ان میں سخت جھگڑا ہو گیا۔ یہاں تک کہ اکبر کو کہنا پڑا کہ جو لڑائی کر رہے ہیں ان کو باہر نکال دیا جائے۔ اس کے وزیر نے جواب دیا ایسے میں تو سب کو ہی باہر نکالنا پڑے گا۔ خیر کسی طرح سے گفتگو شروع ہوئی تو اکبر کو ہر طرف سے تنگ نظری، تعصب کی وجہ سے متضاد دلائل سامنے آئے۔ ذاتی نوعیت کے جھگڑوں نے مذہبی جنگ کی صورت اختیار کر لی۔ جب اکبر کی چار سے زائد بیویوں بحث کی ہوئی تو صرف مالکی فقہ میں اسکی گنجائش نکلی۔ کردار کے اس گھٹیا پن اور متضاد باتوں نے اکبر کو پریشان کیا۔ یہی بات اس کے دیگر مذاہب میں حق تلاش کرنے کا باعث بنی۔اکبر نے اب ہندو، سکھ، جین، بدھ، سوامی، عیسائی اور مجوسی علماء کو بلایا۔

    لادین اکبر اور دین الہی
    سترہویں صدی میں ہندوستان میں جو روشن خیالی تھی یورپ اس سے ناآشنا تھا۔ یورپی لوگوں کے لیے دوسروں کا موقف سننا ایک نئی چیز تھی۔ پادری لکھتا ہے کہ مسلمان علماء کو بائبل کی معلومات نہ تھیں جبکہ عیسائی علماء قرآن کے حوالے پیش کرتے۔ اکبر نے ابوالفضل کو بائبل کا ترجمہ فارسی میں کرنے کو کہا جو کم و بیش 25 سال بعد جہانگیر کے زمانے میں مکمل ہوا۔ اب اس عیسائی مشن کی کوشش تھی کہ اکبر کو عیسائی بنا لیا جائے۔ عیسائی علماء متعصب و تنگ نظر تھے۔ انہوں نے اپنے پرتگالی بادشاہ کو یہاں تک لکھ دیا کہ اکبر نے تمام مساجد گرانے کا حکم دے دیا ہے، ایک بیوی رکھ کر عیسائی ہو گیا ہے۔ اکبر عیسائی تو نہ بنا لیکن اس نے وفد کو عیسائیت کی تبلغ، گرجا گھر اور ہسپتال تعمیر کرنے کی اجازت دے دی۔ شاہی محل میں عیسائی اسکول کھولا گیا جس میں شہزادے اور امراء عیسائیت کی تعلیم حاصل کرتے۔ ان تمام چیزوں کا حاصل ابولفضل کا لکھا آئین رہمونی ہے جو بعد میں چل کر دین الہی بنا۔ اس آئین کا خلاصہ یہ ہے کہ سچائی ہر مذہب میں ہے کوئی ایک مذہب اس میں خاص نہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏مئی 3, 2020
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  2. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,628
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    کیا یہ ترجمے کی بددیانتی نہ ہوئی؟ اپنے فٹ نوٹ کے ساتھ پیش کرتے! آخر؛
    نقلِ کفر کفر نباشد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  3. عرفان سعید

    عرفان سعید محفلین

    مراسلے:
    6,702
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Mellow
    اسے کہتے ہیں
    cherry picking
    :)
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,233
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ممکن ہو کہ مصنف کے قتل ہو جانے کا اندیشہ ہو۔ عام نوع کی باتیں نہ ہوں گی بلکہ سخت تو ہین آمیز باتیں ہوں گی۔
     
    آخری تدوین: ‏مئی 3, 2020
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  5. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,628
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    پاکستانی معاشرے کی بہت خوب عکاسی کی ہے آپ نے!
     
    • متفق متفق × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  6. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    23,159
    ابھی کچھ روز قبل ہی ایک شخص کے ساتھ کلمہ طیبہ کے ترجمہ پر بات ہوئی۔ وہ شخص بار بار “لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ” کا ترجمہ “نہیں ہے کوئی اللہ کے سوا محمد اللہ کے آخری رسول ہیں” کر رہا تھا۔ میں نے بہت سمجھایا کہ بھائی کلمہ طیبہ میں لفظ آخری کہیں موجود نہیں ہے مگر وہ بضد رہا کہ چونکہ ختم نبوت اس کا عقیدہ و ایمان ہے اس لئے کلمہ کا ترجمہ ایسے ہی کرے گا۔ خیر میں نے اس سے مزید بحث نہیں کی البتہ بعد میں سوچتا رہا کہ جو قوم اپنے عقیدے کے دفاع میں مقدس ترین کلمہ طیبہ کا ترجمہ تک تبدیل کرنے میں عار محسوس نہیں کرتی۔ وہ دیگر شعبہ جات جیسے سائنس، تاریخ اور فلسفہ کے ساتھ کیسے کیسے کھلواڑ کرتی ہوگی۔
     
  7. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,233
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کتاب میں پرتگالیوں کے کتے کے گلے میں قرآن باندھنے کا تذکرہ ہے جو اکبر کی بیویوں نے حج پر جاتے دیکھا۔ انکا خوف تھا کہ اکبر عیسائی ہو کر ایک بیوی پر نہ آجائے۔ انکا مطالبہ تھا کہ بائبل کو گدھے کی گردن پر باندھا جائے۔ جو اکبر نے نرمی سے رد کر دیا کہ ایک معصوم کتاب سے بدلہ کیوں لوں۔

    اگر دیکھا جائے تو یہ بھی ایسی باتیں ہیں جو مذہبی تعصب کے زمرے میں آتیں ہیں۔ اسکا مطلب ہے کہ اس بھی شدید نوعیت کی مذہبی اخلاقیات سے گری ہوئی باتیں ہوں گی کہ جن کا لکھنا مترجم نے پسند نہ کیا۔

    ویسے مذہبی وجوہات پر قتل صرف پاکستان ہی میں نہیں ہوتے۔
     
    • غمناک غمناک × 1
  8. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,628
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    الفاظ کی ترتیب بدل کر یوں کہہ سکتے ہیں؟

    ویسے پاکستان میں صرف مذہبی وجوہات پر ہی قتل نہیں ہوتے۔ ( سیاسی، مذہبی، سماجی معاشرتی جنسی وجوہات پر ہوتے ہیں).
     
    • زبردست زبردست × 1
  9. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,233
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بدل کر یوں بھی کہہ سکتے ہیں کہ پاکستان ہی میں صرف مذہبی وجوہات پر قتل نہیں ہوتے۔ (بلکہ اور ملکوں، زمانوں کی طرح سیاسی، مذہبی، سماجی، معاشرتی، جنسی وجوہات پر بھی قتل ہوتے ہیں)۔ پاکستان کو اس زمرے میں خاص کرنا کچھ انصاف سے بعید ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  10. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,233
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    وہ سمت بھانپ گیا۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3

اس صفحے کی تشہیر