انٹرویو

عرفان سعید نے 'مزاحیہ شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 2, 2020

  1. عرفان سعید

    عرفان سعید محفلین

    مراسلے:
    6,702
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Mellow
    نریش کمار شاد

    شاد

    اے میرے دوست اے رفیقِ من
    کون سا شہر آپ کا ہے وطن

    فگار

    ہے بدایوں میرا عزیز وطن
    یہ ہمیشہ سے ہے میرا مسکن


    شاد

    یہ بھی معلوم ہے وہ سن کیا تھا
    آپ دنیا میں جب ہوئے پیدا

    فگار

    سن تھا انتیس بیسویں تھی صدی
    میں نے دنیا میں آنکھ جب کھولی


    شاد

    آنکھ کھولی تو پھر میرے بھائی
    اپنی تعلیم کس جگہ پائی

    فگار

    ہے بدایوں میں اک بڑا کالج
    جہاں حاصل ہوئی مجھے نالج


    شاد

    یہ بھی فرمایئے گا شاد نواز
    شاعری کا کیا تھا کب آغاز

    فگار

    سن بیالیس میں بنا شاعر
    جذبۂ شوق ہو گیا ظاہر


    شاد

    ٹھیک ہے جذب شوق کا اظہار
    کیوں بنے لیکن آپ طنز نگار

    فگار

    کیا کہوں کیوں بنا ہوں طنز نگار
    حادثوں نے بنا دیا ہے فگار

    شاعری کا مرض ازل سے تھا
    پہلے رشتہ فقط غزل سے تھا

    رفتہ رفتہ بدل گیا میلان
    میں ہوں اب اور طنز کا میدان


    شاد

    بے تکلف بتائیے گا ذرا
    آپ کا شعر اولیں کیا تھا

    فگار

    سب سے پہلا جو شعر تھا میرا
    اب مجھے یاد ہی نہیں آتا


    شاد

    یہ دلاور فگار ہے کیا شے
    آپ کا نام یا تخلص ہے

    فگار

    ہے دلاور حسین میرا نام
    اور تخلص فگار بہر کلام


    شاد

    کون حضرت ہیں آپ کے استاد
    یا ازل سے ہیں آپ بے استاد

    فگار

    جام و سبطین و جامی و جوہر
    میرے استاد ہیں یہ اہلِ نظر


    شاد

    کون سے ہیں وہ شاعرانِ بلند
    آپ کو ہیں جو بالخصوص پسند

    فگار

    جگر و میر و غالب و اقبال
    میں سمجھتا ہوں ان کو اہلِ کمال


    شاد

    جو بقیدِ حیات شاعر ہیں
    کیا وہ سب واہیات شاعر ہیں

    فگار

    اب یہ کیوں کر کہوں بآسانی
    وقت کوتاہ قصہ طولانی

    ہیں جو شاعر میرے پسندیدہ
    اکثریت ہے ان میں سنجیدہ

    ان سے قطع نظر کچھ اور بھی ہیں
    اور کچھ لوگ زیر غور بھی ہیں


    شاد

    آپ کو اے میرے کرم فرما
    کوئی شاعر ہے ناپسند بھی کیا

    فگار

    یہ بتانے میں ہے جو بیم فساد


    شاد

    پھر یہی کیجئے حضور ارشاد
    کس طرح آپ شعر کہتے ہیں

    فگار

    جس طرح آپ شعر کہتے ہیں



    شاد

    نامناسب ہے میری بات یہاں
    زیرِ بحث آپ کی ہے ذات یہاں

    فگار

    شعر کہتا ہوں میں بنا کر دھن
    بھول جاتا ہوں فاعلن فعلن


    شاد

    کھل کے فرمائیے جناب من
    آپ ہیں یا نہیں ہیں واقف فن

    فگار

    آگہی فن سے خاص کر ہے مجھے
    بحر و اوزان کی خبر ہے مجھے


    شاد

    آپ ہوتے اگر نہ طنز نگار
    آپ کیا ہوتے پھر جناب فگار

    فگار

    نہیں ہوتا اگر میں طنز نگار
    چور بنتا نہ کوئی ساہو کار

    صرف شاعر نہ میں اگر ہوتا
    کسی آفس میں آفیسر ہوتا


    شاد

    ایسا دلچسپ حادثہ کوئی
    جس سے وابستہ ہو سخن گوئی

    فگار

    کوئی بھی ایسی خاص بات نہیں
    کوئی رنگین واردات نہیں

    عمر اب تک تو صاف گزری ہے
    قاعدے کے خلاف گزری ہے


    شاد

    بہر اردو مشاعرے ہیں مفید
    اس کی تردید یا کریں تائید

    فگار

    بہر اردو مشاعرے ہیں مفید
    فی زمانہ غلط ہے یہ امید

    واقعی گر مشاعرہ ہوتا
    فکر و فن کا مظاہرہ ہوتا

    شاعری بن گئی ہے قوالی
    وائے بر سعئی غالب و حالی

    اب ادب کی یہ قدر و قیمت ہے
    خیر جو کچھ بھی ہے غنیمت ہے


    شاد

    شاعری کے علاوہ خبط کوئی
    کیا سیاست سے بھی ہے ربط کوئی

    فگار

    میں سیاست سے دور رہتا ہوں
    مئے الفت سے چور رہتا ہوں


    شاد

    اب یہ فرمایئے گا باالتخفیف
    بہتریں شعر کی ہے کیا تعریف

    فگار

    ہے وہی شعر قدر کے قابل
    جس کو سن کر تڑپ اٹھے ہر دل


    شاد

    ہیں ادب کی جو دوسری اصناف
    ان کے کوچوں کا بھی کیا ہے طواف

    فگار

    شاعری کے علاوہ سب اصناف
    کر چکی ہیں مرا قصور معاف


    شاد

    شاعری جس کی ہو بہت اچھی
    کیا وہ ہوتا ہے اچھا انساں بھی

    فگار

    جس میں انسان کی صفات نہیں
    شاعری اس کے بس کی بات نہیں


    شاد

    ہند میں اے سخن ور خوش دل
    کیا ہے اردو زباں کا مستقبل

    فگار

    جسم اردو اگرچہ ہے فانی
    روحِ اردو نہ مر سکے گی کبھی


    شاد

    کیا ادب پر جمود طاری ہے
    ہے تو پھر کس کی ذمہ داری ہے

    فگار

    ہاں ادب پر جمود طاری ہے
    اس کی ہم سب پہ ذمہ داری ہے

    جب ادیبوں کی فکر ہو محدود
    کیوں نہ طاری ہو پھر ادب پہ جمود

    اب ادب بن گیا ہے دجہ معاش
    ہم بھی عیاش آپ بھی عیاش


    شاد

    کیا حقیقت ہے ساغر و مے خوار
    کیوں سخن ور بنے نریش کمار

    فگار

    شاعری خود ہے اک طرح کا خمار
    یوں سخن ور بنے نریش کمار


    شاد

    خیر بنئے نہیں نریش کمار
    لیکن اے نوجوان خوش اطوار

    واقعی مے اگر بری شے ہے
    شاعری کیوں قصیدہ مے ہے

    لذت مے سے ہوں جو بیگانہ
    شعر بھی کیوں کہیں وہ رندانہ

    شعر میں مے کشی کا کیوں پرچار
    جب نہیں آپ مطلقاً مے خوار

    فگار

    میری مے واقعی شراب نہیں
    میری نیت کبھی خراب نہیں

    بے پئے میں نشے میں رہتا ہوں
    ہر نفس کو شراب کہتا ہوں

    کاسۂ گل ہے میرا پیمانہ
    بزمِ فطرت ہے میرا میخانہ

    استعارے ہیں ساغر و مینا
    مقصد مے کشی نہیں پینا

    روک سکتا نہیں مجھے قانون
    میں نہیں کھاتا بھنگ یا افیون

    میری مے پر نہ جایئے صاحب
    اپنے مقصد پہ آیئے صاحب


    شاد

    یہ تو وہ بات ہو گئی سرکار
    خوئے بد را بہانہ بسیار

    خیر کہیے کہ شعر کہنے کا
    آپ کے سامنے ہے مقصد کیا

    فگار

    مقصدی شاعری کا قائل ہوں
    ادبِ نو کی سمت مائل ہوں

    میری ہر نظم بالضرورت ہے
    میرا پیغام آدمیت ہے

    خواہ ہندو ہوں یا مسلماں ہوں
    میری کوشش ہے لوگ انساں ہوں

    آہ کو واہ میں سموتا ہوں
    دوسروں کو ہنسا کے روتا ہوں


    شاد

    ایک بات اور آپ سے پوچھوں
    دوسروں کو ہنسا کے رونا کیوں

    کیوں ہے پس منظر طرب تاریک
    کیا حقیقت میں آپ کے نزدیک

    طنز ہے آتشِ الم کا شرار
    اور ظرافت ہے غم کی پیداوار

    فگار

    ہاں ظرافت ہے غم کی پیداوار
    طنز ہے اک دل تپاں کا بخار


    جب دلاور فگار ہوتا ہے
    وہ ظرافت نگار ہوتا ہے

    اکبر و جعفری ہوں یا شوکت
    سب کو غم سے ملی ہے یہ دولت


    شاد

    ہو فزوں آپ کا یہ سرمایا

    فگار

    پھر ملیں گے اگر خدا لایا

    ربط
     
    آخری تدوین: ‏جنوری 2, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1

اس صفحے کی تشہیر