انتخاب قابل اجمیری

نوید صادق نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 12, 2007

  1. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    گرتے سنبھلتے جھومتے دارورسن کو چومتے
    اہلِ جنوں تیرے حضور آ ہی گئے کشاں کشاں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    آؤ اب ایک نئے دور کا آغاز کریں
    عہدِ رفتہ کی کوئی بات نہیں یاد مجھے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    عمر بھر ہم سمجھ سکے نہ تجھے
    آج سمجھا رہی ہے تیری یاد

    زندگی کتنی تیز رو ہے مگر
    ساتھ ساتھ آ رہی ہے تیری یاد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اے آفتابِ صبحِ بہاراں! سلام کر
    دیوانے آ رہے ہیں شبِ غم گزار کے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہم تری راہ سے پھرے ہی نہیں
    آستانے ہمیں بلاتے رہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    کچھ غمِ زیست کے شکار ہوئے
    کچھ مسیحا نے مار ڈالے ہیں

    آخرِ شب کے ڈوبتے تارو!
    ہم بھی کروٹ بدلنے والے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    خیالِ خاطرِ احباب اور کیا کرتے
    جگر پہ زخم بھی کھائے شمار بھی نہ کیا

    نجانے زندگی کیسے گذر گئی اے دوست
    کہیں ٹھہر کے ترا انتظار بھی نہ کیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    گھبرا کے نا خدا نے سفینہ ڈبو دیا
    ہم مسکرا کے دامنِ طوفاں میں آ گئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    زمانہ کھیل رہا ہے تمہاری زلفوں سے
    ہمارے حالِ پریشاں کی بات کون کرے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    لذتِ گردشِ ایام وہی جانتے ہیں
    جو کسی بات پہ اٹھ آئے ہیں میخانے سے

    لوگ لے آتے ہیں کعبہ سے ہزاروں تحفے
    ہم سے اک بت بھی نہ لایا گیا بت خانے سے

    ظلمتِ دیر و حرم سے کوئی مایوس نہ ہو
    اک نئی صبح ابھرنے کو ہے میخانے سے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اب یہ عالم ہے کہ غم کی بھی خبر ہوتی نہیں
    اشک بہہ جاتے ہیں لیکن آنکھ تر ہوتی نہیں

    پھر کوئی کم بخت کشتی نذرِ طوفاں ہو گئی
    ورنہ ساحل پر اداسی اس قدر ہوتی نہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہونٹوں پہ ہنسی آنکھ میں تاروں کی لڑی ہے
    وحشت بڑے دلچسپ دوراہے پہ کھڑی ہے

    آداب تری بزم کے جینے نہیں دیتے
    دیوانوں کو جینے کی تمنا تو بڑی ہے

    دل رسم و رہِ شوق سے مانوس تو ہو لے
    تکمیلِ تمنا کے لئے عمر پڑی ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہم بے کسوں کی بزم میں آئے گا اور کون
    آ بیٹھتی ہے گردشِ دوراں کبھی کبھی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہمسائیگی کاکل و رخسار چھن گئی
    دن اپنا ہے نہ رات مگر جی رہے ہیں ہم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہاں ہوشیار، چشمِ فسوں کار ہوشیار
    دل کو تری نگاہ کے انداز آ گئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    عاشقوں کے جمگھٹے میں تیری بزمِ ناز تک
    شمع بجھتے ہی بدل جاتا ہے پروانوں کا رُخ

    کیا ہوا ہم کو اگر دو چار موجیں چھو گئیں
    ہم نے بدلا ہے نہ جانے کتنے طوفانوں کا رخ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ظلمت و نور میں تفریق ابھی مشکل ہے
    رات سو رنگ بدلتی ہے سحر ہونے تک
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    کسی کی زلف پریشاں کسی کا دامن چاک
    جنوں کو لوگ تماشا بنائے پھرتے ہیں

    قدم قدم پہ لیا انتقام دنیا نے
    تجھی کو جیسے گلے سے لگائے پھرتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    قابل اجمیری

    اصلی نام: عبدالرحیم
    قلمی نام: قابل اجمیری

    پیدائش: 1930ء اجمیر شریف
    وفات: 1962ء حیدر آباد ۔ پاکستان

    کلام کی اشاعت

    دیدہ بیدار ۔۔۔۔۔۔۔ پہلا مجموعہ کلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1963ء
    خونِ رگِ جاں ۔۔۔۔ دوسرا مجموعہ کلام ۔۔۔۔ 1966ء
    کلیاتِ قابل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1992ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    قابل کے کلام پر ہمعسروں کے تاثرات

    قابل کے کلام سے ان کی انفرادیت نمایاں ہے اور یہی خصوصیت شاعر کے لئے اہم اور اہم تر ہے۔ میں نے جب پہلی بار ان کا کلام انہی کی زبانی سنا تو حقیقتا بہت متاثر ہوا، خیالات اور جذبات کے ساتھ ساتھ اسلوبِ بیان بھی شگفتہ و پاکیزہ اور تغزل کا حامل ہے۔

    (جگر مراد آبادی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر