امیر خسرو رح کا ہندوی ﴿﴿﴿﴿"اردو" کلام

شاکرالقادری نے 'امیرخسرو' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 10, 2006

  1. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    امیر خسرو کا ہندوی " اردو" کلام
     
  2. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    اس دھاگے میں
    مشہور محقق گوپی چند نارنگ
    کی تحقیقی کتاب
    امیر خسرو کا ہندوی کلام
    مع نسخہء برلن ذخیرہ اشپرنگر
    شائع کردہ
    سنگ میل پبلی کیشنز لاہور پاکستان
    سال اشاعت1990
    میں سے
    حضرت امیرخسرو رحمۃ اللہ علیہ سے جو ہندوی اردو یا ہندوستانی کلام منسوب ہے وہ ارسال کیا جائے گا
     
  3. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    رفتم بہ تما شای کنار جوی
    دیدم بہ لب آب زن ہندوی
    گفتم صنما بہای زلفت چہ بود
    فریاد برآور کہ "دﹸر دﹸر موئے"
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    واوین کے اندر حروف اردو کے ہیں جو عورتوں کے روز مرہ سے تعلق رکتھے ہیں اور یہ محاورہ "در در موئے" آج بھی اسی طرح بولا جاتا ہے جس کے معنی ہیں "دفع ہو مردار"
     
  4. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ترجمہ
    میں سیر کے لیے ندی کے کنارے گیا
    پانی کے کنارے پر ایک ہندو عورت پر نظر پڑی
    میں نے کہا اے خوبرو تیری زلف کی کیا قدرو قیمت ہوگی
    وہ خوبرو چلائی "دفع ہو مردار"
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    در در موئ کو اگر فارسی کے الفاظ سمجھ کر ان کا ترجمہ کیا جائے تو ترجمہ یوں ہوگا
    "موتی موتی بال" یعنی ایک ایک بال کی قیمت ایک ایک سچا موتی
     
  5. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    گجری
    گجری کہ تو در حسن و لطافت چو مہی
    آن دیگ دہی بر سر تو چتر شہی
    از ہر دو لبت قند و شکر می ر یزد
    ہر گاہ بگوئی کہ بگوئی کہ "دہی لیہو دہی"
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    واوین والے حروف اردو کے ہیں
    جن کے معنی ہیں دہی لو دہی
     
  6. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ترجمہ
    اے گجری! ﴿یعنی اے گوجر عورت﴾ کہ تو حسن و لطافت میں چاند کی مثل ہے
    اور یہ تیرے سر کے اوپر دہی کی دیگ شاہی چتر کی مانند ہے
    تمہارے دونوں لبوں سے قند اور شکر ٹپکتی ہے
    جس وقت تم آواز لگاتی ہو " دہی لے لو دہی"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    تیلی
    تیلی پسری کہ می فروشد تیلے
    از دست و زبان چرب ا و واویلے
    خالے بہ رخش دیدم و گفتم کہ تل است
    گفتا کہ " برو نیست درین تل تیلے"
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    نیست دریں تیل تیلے
    اردو محاوہ ان تلوں میں تیل نہیں کا ترجمہ ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ترجمہ
    ایک تیلی لڑکا جو تیل بیچ رہا تھا
    اس کے ہاتھ بہت زیادہ تیل آلود تھے اور وہ بے پناہ چرب زبان تھا
    میں اس کے چہرے پر ایک خال دیکھا تو کہا کہ یہ تل ہے
    وہ بولا: جا ٶ جا ٶ! ان تلوں میں تیل نہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ہندو صنم
    ہندو صنمے کزو رخم شد کاہی
    دردا کہ نہ دارد ز غمم آگاہی
    گفتم ز لبت کار من خستہ برآر
    در خندہ شد و گفت کہ ناہی ناہی
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    آخری مصرعہ کے آخری الفاظ ناہی ناہی ۔۔۔۔۔ ناہیں ناہیں یا نہیں نہیں کی بدلی ہوئی صورت ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ترجمہ
    ایک ہندو صنم کہ جب سے اس کو دیکھا ہے میرا چہرا اتر گیا ہے
    لیکن افسو س کہ وہ میرے غم سے آگاہ نہیں ہے
    میں نے اس سے کہا کہ اپنے لبوں سے مجھ خستہ ٓان کی حاجت روائی کر دے
    وہ ہنس پڑا اور کہنے لگا کہ ناہی ناہی یعنی نہیں نہیں​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ہندو زن
    خسروا در عشق بازی کم ز ہندو زن مباش
    کز برائے مردہ می سوزند جان خویش را

    اسی مفہوم کا ہندوی دوہا
    خسر ایسی پیت کر جیسے ہندو جوئے
    پوت پرائے کارنے جل جل کوئلا ہوئے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    فارسی شعر کا ترجمہ
    اے خسرو عشق کے معاملہ میں ہندو عورت سے کم نہ رہ
    کہ ایک مردہ کی خاطر اپنی جان کو جلا لیتی ہیں
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دوسرا مصرعہ اپنے مفہوم کے اعتبار سے درست معلوم نہیں ہوتا
    میں نے اس دوسرے مصرعے کو کہیں یوں پڑھا تھا
    کو برائے مردہ سوزد زندہ جان خویش را
    جس کا ترجمہ یوں ہوگا
    کہ وہ ایک مردہ کی خاطر اپنی زندہ جان کو جلا لیتی ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔​
     
  13. شاکرالقادری

    شاکرالقادری لائبریرین

    مراسلے:
    2,696
    موڈ:
    Cheerful
    ہندوی یا اردو دوہے کا مفہوم واضح ہے
    پیت ۔۔۔۔۔ پریت
    ہندو جوئے ۔۔۔۔۔ ہندو عورت
    پوت پرائے ۔۔۔۔۔۔۔ پرایا بیٹا
    کارنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کی خاطر
    ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوتی ہے​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر