اصلاح درکار ہے

محمد شکیل خورشید نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 23, 2018

  1. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    229
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    لوچ تیری ادا میں کچھ بھی نہیں
    پیچ بندِقبا میں کچھ بھی نہیں

    کتنا سادہ مرض ہے چارہ گرو
    درد ہے اور دوا میں کچھ بھی نہیں

    حاصلِ عمر ہاتھ آیا کیا
    اک خلا اور خلا میں کچھ بھی نہیں

    زلف کھولی ہے تم نے شائد آج
    ورنہ خوشبو ہوا میں کچھ بھی نہیں

    کیسے پرنم ہو کوئی آنکھ شکیلؔ
    سوز تیری نوا میں کچھ بھی نہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,150
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    درست اور اچھی غزل ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    229
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    بہت بہت شکریہ استادِ محترم
     

اس صفحے کی تشہیر