اردو کے نام وَر مزاح نگار کرنل محمد خان کی برسی

سیما علی نے 'اردو نامہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 24, 2020

  1. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    10,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    [​IMG] اردو کے نام وَر مزاح نگار کرنل محمد خان کی برسی

    23 اکتوبر 2020

    آج اردو زبان کے معروف مزاح نگار کرنل محمد خان کا یومِ وفات ہے۔ 23 اکتوبر 1999 کو اس دنیا سے رخصت ہونے والے کرنل محمد خان کی ادبی شہرت کا سفر ان کی ایک تصنیف بجنگ آمد سے شروع ہوا جو قارئین میں بہت مقبول ہوئی۔
    کرنل محمد خان متحدہ ہندوستان کے ضلع چکوال کے چھوٹے سے علاقے بلکسر میں پیدا ہوئے۔ ان کی تاریخِ پیدائش 5 اگست 1910 ہے۔ 1966 میں انھوں نے اپنی پہلی تصنیف بجنگ آمد کی اشاعت سے خود کو مزاح نگاری کے میدان میں متعارف کروایا۔ بعد کے برسوں میں قارئین نے ان کی مزید دو کتابیں بسلامت روی اور بزم آرائیاں پڑھیں۔ کرنل محمد خان کی تراجم پر مشتمل ایک کتاب بدیسی مزاح کے نام سے منظرِ‌عام پر آئی۔

    وہ برطانوی فوج سے وابستہ رہے اور بجنگ آمد اسی زمانے کی مزاح کے پیرائے میں لکھی ایک سوانح ہے جس میں انھوں نے اپنی فوج میں شمولیت اور مختلف واقعات کو بیان کرتے ہوئے دوسری جنگِ عظیم کے دوران بیتے واقعات اور اس وقت کے حالات کو پُر لطف انداز میں رقم کیا ہے۔ یہ کتاب ان کے زورِ قلم کی عمدہ مثال ہے جس میں انھوں نے چھٹیوں‌ پر اپنے گاؤں لوٹنے پر اپنے استقبال اور اپنی والدہ سے بولے گئے ایک جھوٹ کو کچھ یوں‌ بیان کیا ہے۔
    ”خبر مشہور ہو گئی کہ کپتان آگیا ہے، محمد خان آگیا ہے۔ کتنا دبلا پتلا تھا، اب دیکھو کیسا جوان نکلا ہے، صاحب بن گیا ہے، “سرگٹ” بھی پیتا ہے، مسکوٹ میں کھانا کھاتا ہے، نوکری پہرہ بھی معاف ہے۔

    گاؤں کے چھوٹے بڑے کام چھوڑ کر ملاقات کو آنے لگے۔ ہم نے پہلے دو دن میں کوئی ایک ہزار معانقے کیے ہوں گے اور بس اتنی ہی ہمارے گاؤں کی مردانہ آبادی تھی۔ چھاتی دکھنے لگی، لیکن دل کو ایک عجیب سکھ حاصل ہوا۔ مہینے بھر میں صرف چند روز اپنے گھر کھانا کھایا اور وہ بھی والدہ کے اصرار پر کہ مجھے اپنے بیٹے کو جی بھر کر دیکھ لینے دو اور بہت دیر دیکھ چکیں تو وہ کچھ کہا جو صرف ماں ہی کہہ سکتی ہے۔

    “بیٹا اب ساری فوج میں تم ہی بڑے افسر ہو ناں؟”

    میں والدہ کو دیکھتا اور سوچتا کہ اگر اس پیکرِ محبت کا وجود نہ ہوتا تو کیا مجھے وطن واپسی کا یہی اشتیاق ہوتا؟ بغیر کسی جھجک کے جواب دیا۔

    “جی ہاں ایک آدھ کو چھوڑ کر سب میرے ماتحت ہیں۔” اور ماں کی دنیا آباد ہو گئی۔

    ویسے سچ یہ تھا کہ ایک آدھ نہیں بلکہ ایک لاکھ چھوڑ کر بھی ہمیں اپنے ماتحت ڈھونڈنے کے لیے چراغ بلکہ سرچ لائٹ کی ضرورت تھی، لیکن وہ سچ کس کام کا جس سے ماں کا دل دکھے؟“

    کرنل محمد خان قیامِ پاکستان کے بعد ریٹائرمنٹ تک پاک فوج سے منسلک رہے، وہ شعبۂ تعلیم میں ڈائریکٹر کے عہدے پر فائز تھے۔

    اردو کے نام وَر مزاح نگار کرنل محمد خان کی برسی -
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  2. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    10,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    یہ اقتباس کرنل محمد خان کی کتاب"بزم آرائیاں" سے لیا گیا ہے. پہلا ہی مضمون ہے" یہ نہ تھی ہماری قسمت........"

    ایک شاہکار تحریر سے اقتباس

    رضیہ ہماری توقع سے بھی زیادہ حسین نکلی اور حسین ہی نہیں کیا فتنہ گر قد و گیسو تھی۔
    پہلی نگاہ پر ہی محسوس ہوا کہ initiative ہمارے ہاتھ سے نکل کر فریقِ مخالف کے پاس چلا گیا ہے۔ یہی وجہ تھی کہ پہلا سوال بھی ادھر سے ہی آیا:
    "تو آپ ہیں ہمارے نئے نویلے ٹیوٹر؟"

    اب اس شوخ سوال کا جواب تو یہ تھا کہ "تو آپ ہیں ہماری نئی نویلی شاگرد؟"

    لیکن سچی بات یہ ہے کہ حسن کی سرکار میں ہماری شوخی ایک لمحے کے لیئے ماند پڑ گئی اور ہمارے منہ سے ایک بے جان سا جواب نکلا:
    " جی ہاں، نیا تو ہوں ٹیوٹر نہیں ہوں۔ مولوی صاحب کی جگہ آیا ہوں"
    "اس سے آپ کی ٹیوٹری میں کیا فرق پڑتا ہے؟"

    "یہی کہ عارضی ہوں"

    "تو عارضی ٹیوٹر صاحب۔ ہمیں ذرا اس مصیبت سے نجات دلا دیں"
    رضیہ کا اشارہ دیوانِ غالب کی طرف تھا۔ میں نے قدرے متعجب ہو کر پوچھا:
    "آپ دیون غالب کو مصیبت کہتی ہیں؟"

    "جی ہاں! اور خود غالب کو بھی،"

    "میں پوچھ سکتا ہوں کہ غالب پر یہ عتاب کیوں؟:

    "آپ ذرا آسان اردو بولیئے۔ عتاب کسے کہتے ہیں؟"

    "عتاب غصے کو کہتے ہیں۔"

    "غصہ؟ ہاں غصہ اس لئے کہ غالب صاحب کا لکھا تو شاید وہ خود بھی نہیں سمجھ سکتے۔ پھر خدا جانے پورا دیوان کیوں لکھ مارا؟:

    "اس لئے کہ لوگ پڑھ کر لذت اور سرور حاصل کریں"

    "نہیں جناب۔ اس لئے کہ ہر سال سینکڑوں لڑکیاں اردو میں فیل ہوں"

    "محترمہ۔ میری دلچسپی فقط ایک لڑکی میں ہے، فرمایئے آپ کا سبق کس غزل پر ہے؟"

    جواب میں رضیہ نے ایک غزل کے پہلے مصرع پر انگلی رکھ دی لیکن منہ سے کچھ نہ بولی۔ میں نے دیکھا تو غالب کی مشہور غزل تھی۔

    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا

    میں نے کہا:

    "یہ تو بڑی لا جواب غزل ہے ذرا پڑھیئے تو۔"

    "میرا خیال ہے آپ ہی پڑھیں ۔ میرے پڑھنے سے اس کی لا جوابی پر کوئی ناگوار اثر نہ پڑے"

    مجھے محسوس ہوا کہ ولایت کی پڑھی ہوئی رضیہ صاحبہ باتونی بھی ہیں اور ذہین بھی لیکن اردو پڑھنے میں غالباً اناڑی ہی ہیں۔ میں نے کہا:

    "میرے پڑھنے سے آپ کا بھلا نہ ہوگا۔ آپ ہی پڑھیں کہ تلفظ بھی ٹھیک ہو جائے گا"

    رضیہ نے پڑھنا شروع کیا اور سچ مچ جیسے پہلی جماعت کا بچہ پڑھتا ہے۔

    " یہ نہ تھی ہماری قس مت کہ وصل۔۔۔ ۔۔۔ ۔"

    میں نے ٹوک کر کہا:

    "یہ وصل نہیں وصال ہے، وصل تو سیٹی کو کہتے ہیں۔"

    رضیہ نے ہمیں سوالیہ نظروں سے دیکھا۔ ہم ذرا مسکرائے اور ہمارا اعتماد بحال ہونے لگا۔

    رضیہ بولی:
    "اچھا۔ وصال سہی۔ وصال کے معنی کیا ہوتے ہیں؟"

    "وصال کے معنی ہوتے ہیں ملاقات، محبوب سے ملاقات۔ آپ پر مصرع پڑھیں۔"

    رضیہ نے دوبارہ مصرع پڑھا۔ پہلے سے ذرا بہتر تھا لیکن وصال اور یار کو اضافت کے بغیر الگ الگ پڑھا۔ اس پر ہم نے ٹوکا۔

    "وصال یار نہیں وصالِ یار ہے۔ درمیان میں اضافت ہے۔"

    "اضافت کیا ہوتی ہے؟ کہاں ہوتی ہے؟"

    "یہ جو چھوٹی سی زیر نظر آرہی ہے نا آپ کو، اسی کو اضافت کہتے ہیں۔"

    "تو سیدھا سادا وصالے یار کیوں نہیں لکھ دیتے؟"

    "اس لئے کہ وہ علما کے نزدیک غلط ہے۔"۔۔۔ ۔۔۔ یہ ہم نے کسی قدر رعب سے کہا۔

    علما کا وصال سے کیا تعلق ہے؟"

    " علما کا تعلق وصال سے نہیں زیر سے ہے۔"

    "اچھا جانے دیں علما کو۔ مطلب کیا ہوا؟"

    "شاعر کہتا ہے کہ یہ میری قسمت ہی میں نہ تھا کہ یار سے وصال ہوتا۔"

    "قسمت کو تو غالب صاحب درمیان میں یونہی گھسیٹ لائے، مطلب یہ کہ بے چارے کو وصال نصیب نہ ہوا"

    "جی ہاں کچھ ایسی ہی بات تھی۔"

    "کیا وجہ؟"

    "میں کیا کہہ سکتا ہوں؟"

    "کیوں نہیں کہہ سکتے ۔ آپ ٹیوٹر جو ہیں۔"

    "شاعر خود خاموش ہے۔"

    "تو شاعر نے وجہ نہیں بتائی مگر یہ خوش خبری سنادی کہ وصال میں فیل ہوگئے؟"

    " جی ہاں فی الحال تو یہی ہے۔ آگے پڑھیں۔"

    رضیہ نے اگلا مصرع پڑھا۔ ذرا اٹک اٹک کر مگر ٹھیک پڑھا:

    اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

    میں نے رضیہ کی دلجوئی کے لئے ذرا سرپرستانہ انداز میں کہا:

    "شاباش، آپ نے بہت اچھا پڑھا ہے۔"

    "اس شاباش کو تو میں ذرا بعد میں فریم کراؤں گی۔ اس وقت ذرا شعر کے پورے معنی بتادیں۔"

    ہم نے رضیہ کا طنز برداشت کرتے ہوئے کہا:

    "مطلب صاف ہے، غالب کہتا ہے قسمت میں محبوبہ سے وصال لکھا ہی نہ تھا۔ چنانچہ اب موت قریب ہے مگر جیتا بھی رہتا تو وصال کے انتظار میں عمر کٹ جاتی۔"

    " توبہ اللہ، اتنا Lack of confidence یہ غالب اتنے ہی گئے گزرے تھےِ؟"

    گئے گزرے؟ نہیں تو۔۔۔ غالب ایک عظیم شاعر تھے۔"

    "شاعر تو جیسے تھے، سو تھے لیکن محبت کے معاملے میں گھسیارے ہی نکلے"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,560
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہت شکریہ آپی۔

    کرنل محمد خان مرحوم میرے بھی پسندیدہ لکھاری رہے ہیں۔

    مری میں سیر کے دوران کچھ لڑکوں نے ایک کوٹھی کے باہر "کرنل محمد خان" کی نیم پلیٹ دیکھ کر گھنٹی بجا دی۔ تھوڑی دیر میں ایک صاحب تشریف لائے۔ لڑکوں کے استفسار پر انہوں نے اپنا تعارف کرنل محمد خان کے نام سے کروایا۔

    پھر وہ انہیں اندر لے گئے۔ چائے پلائی اور بہت ہی مہذب طریقے سے انہیں رخصت کیا۔ باہر گیٹ پر آ کر کہنے لگے۔ کہ میں وہ کرنل محمد خان نہیں ہوں جو لکھاری ہیں۔ اب یا تو انہیں کہیں کہ اپنا نام بدل لیں یا پھر اب تک میں جتنے مہمانوں کی خاطر تواضع کر چکا ہوں، اس کی ادئیگی کر دیں۔
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر