1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

اردو کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے

محمد علم اللہ نے 'جہان نثر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 14, 2014

  1. محمد علم اللہ

    محمد علم اللہ محفلین

    مراسلے:
    5,827
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Daring
    اردو کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے
    آصف جیلانی

    خواجہ آصف ملک کے ممتاز رہنما ہیں ۔۔ ان کا تعلق اس مردم خیز شہر سیالکوٹ سے ہے جہاں سے علامہ اقبال ابھرے جنہوںنے اردو شاعری کو ایسا نایاب خزینہ بخشا جس کی درخشندگی کبھی ماند نہیں پڑے گی اور سیالکوٹ کی اسی زمین سے فیض صاحب نے اردو کی بے مثل آبیاری کی
    ۔۔پچھلے دنوں میں ایک دوست کے ساتھ بیٹھا ایک ٹیلی وژن چینل پر خواجہ آصف کا انٹرویو دیکھ رہا تھا۔طالبان کے ساتھ مذاکرات کے بارے میں خواجہ صاحب کہہ رہے تھے ’’ حکومت کے ایک فنکشنری ہوتے ہؤے مجھے جو انفارمیشن ہے اس کے بیسس پر مذاکرات کی پراگریس کو کوانٹی فأیی نہیں کر سکتا۔ ‘‘ میرے دوست نے اپنا سر پکڑ لیا ۔ خواجہ آصف کہہ رہے تھے’’ میں پھر رپیٹ کروں گا کہ یہ نیگوسیشن اوپن ہینڈڈ نہیں ہونے چاہیں۔ابھی تک جو بھی موو(Move) کیا جارہا ہے وہ کنسنسس ()Consensusکے ذریعہ کیا جارہا ہے اینڈ رزلٹ یہ ہے کہ ابھی تک جو آپریشن نہیں کیا گیا اس پر کنسنسس ہے اور فوج مکمل طور پر آن بورڈ ہے۔ ہم چاہیںگے کہ جلد پیس ریٹرن ہو‘‘ میرے دوست سر پکڑے روہانسی آواز میںبولے’’پاکستان میں اردو کا یہ کیا حشر ہورہا ہے؟۔ خواجہ صاحب کا یہ انٹرویو سن کر ایسا محسوس ہوتا ہے کہ یہ اردو نہیں بلکہ کؤی اور نٔئ اجنبی زبان ہے ۔ اس میں انگریزی کے الٹے سیدھے جو پیوند لگأے جارہے ہیں اس سے جان پڑتا ہے کہ اردو سے اس کے ناکردہ گنا ہوں کاانتقام لیا جارہا ہے میرے دوست نے کہا کہ ٹیلی وژن چینلز پر جو سیاسی مباحثے ہوتے ہیں ان میں سیاست دان انگریزی اصطلاحات کو طوطے کی طرح دہراتے ہیں۔ مثلا یہ انسٹیٹیوشنز ایک پیج پر نہیں ہیں۔ سب اسٹیک ہولڈرس کو آن بورڈ ہونا چاہے۔یہ ماینڈ سیٹ کی بات ہے کنسنسس اور ری کنسلیسشن کی پالیسی ایڈاپٹ کرنی چاہییوہ کہہ رہے تھے کہ۔کیا انگریزی کی ان اصطلاحات کے لٔے ہماری اردو زبان میں کؤی نعم البدل نہیں کیا ہماری اردو اتنی تہی دامن ہے ۔کیا ایک پیج کے مفہوم کے لٔے ہم نے یک زبان’ ہم خیال اور ہم رأے کی خوبصورت اصطلاحات قربان کر دی ہیں اور ماینڈ سیٹ کے لیے سوچ’ انداز فکر یا طرز فکر کی اصطلاحات کو تج کردیا ہے ۔
    میں نے کہا کہ یہ تو ہمارے سیاست دان ہیں جو انگریزی میں اپنی بقراطیت ثابت کرنے کے لیے یوں اردو کو مسخ کر رہے ہیں لیکن ہمارے اخبارات اس میدان میں کسی سے پیچھے نہیں ہیں۔یہ کیسی ستم ظریفی ہے کہ اردو ادب کا صحافت کے ساتھ کتنا قدیم اورکس قدرگہرا رشتہ رہا ہے وہی اردو صحافت اردو زبان کو مسخ کرنے میں پیش پیش ہے بلاشبہہ اردو زبان کی ترقی اور فروغ میں اردو اخبارات کا بڑا اہم کردار رہا ہے۔ اسی زمانہ میں جب کہ اردو زبان کم سنی کے عہد سے نکل کر بلوغت کی شعوری منزلوں کو چھو رہی تھی اردو صحافت کا آغاز ہوا تھا۔یہ حقیقت ہے کہ اردو صحافت نے اپنے اوائل ہی سے اردو ادب اور اردو ادیبوں کو عوام سے روشناس کرایا اور یہ مبالغہ نہ ہوگا اگر یہ کہا جائے کہ اردو ادب صحافت ہی کے ذریعہ عوام میں مقبول ہوااور پروان چڑھا۔
    اردو شاعری کے بارے میں تو یہ کہا جا سکتا ہے کہ اسے جو فروغ ہوا اور عوام میں جو مقبولیت حاصل ہوئی اس میں شاہی درباروں۔‘ نوابوں کے ڈیروں اور مشاعروں کی پرانی روایت کا بڑا ہاتھ تھا لیکن اردو نثر کی ترقی خالصتاً صحافت کی مرہون منت رہی ہے۔
    مولانا محمد علی جوہر کے ہمدرد ‘ سرسید کے رسالے تہذیب الاخلاق ‘ مولانا ابوالکلام آزاد کے اخبار الہلال او ر البلاغ‘ بنارس کے اردو اخبار آوازہ اخلاق ‘ کانپور کے زمانہ ‘ حسرت موہانی کے رسالہ اردوئے معلی اور امتیاز علی تاج کے کہکشاں اور مولانا ظفر علی خان کے اخبار زمیندار نے اردو شاعری کے فروغ کے ساتھ نثر کی ترقی اور ترویج میں جو اہم حصہ ادا کیا ہے وہ اردو ادب کی تاریخ کے لئے قابل فخر ہے۔ سرسید نے تہذیب الاخلاق کے ذریعہ اردو کے ادیبوں کی ایک کہکشاں سجائی تھی جس میں مولانا حالی‘ مولانا شبلی‘ ڈپٹی نذیر احمد‘ ذکا اللہ خان ‘ محسن الملک اور چراخ علی نمایاں ہی یہ اردو صحافت کی خوش قسمتی ہے کہ اردو ادب کے ممتاز دانشوروں اور شاعروں نے اردو صحافت کی عملی رہنمائی کی ہے جن میں مولانا محمد علی جوہر‘ مولانا ابوالکلام آزاد ‘ مولانا ظفر علی خان ‘ حیات اللہ انصاری ‘ غلام رسول مہر اور مولانا جالب نمایاں ہیں اور آزادی کے بعد فیض احمد فیض ‘ احمد ندیم قاسمی اور چراخ حسن حسرت اردو اخبارات کے مدیر رہے لیکن اسے بدقسمتی کہہ لیں یا بدلتے ہوئے حالات کے تقاضے کہ جب سے اردو صحافت نے تجارت کا لبادہ اوڑھا ہے ایڈیٹری خاندانی میراث بنتی جارہی ہے۔ اب یہ عہدہ محض اخبارات کے مالکوں کے بیٹوں اور بھتیجوں کے لئے مخصوص ہوکر رہ گیا ہے اور حقیقی ایڈیٹر مفقود ہوتے جا رہے ہیں۔
    ایک زمانہ تک پاکستان میں صحافت کو زبان بندی کے مسئلہ کا سامنا رہا تھا لیکن اب اردو اخبارات کو زبان کی ابتری کے سنگین مسئلہ نے اپنی گرفت میں لے لیا ہے ۔ ایک زمانہ تھا کہ سائنس اور دوسرے علوم کی فنی اصطلاحات کے اردو میں مناسب ترجموں کی کوشش کو فوقیت دی جاتی تھی لیکن اب ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ سلسلہ یکسر مفقود ہوگیا ہے۔ انگریزی الفاظ کا ایک سیل بے کراں ہے کہ وہ اردوزبان میں اور اس کے راستہ اخبارات میں درآیا ہے۔ سائنس اور ٹیکنولوجی کی نئی اصطلاحات یعنی کمپیوٹر ‘ سافٹ ویر‘ ڈسک‘ ماؤس ‘ مانیٹر‘ کی بورڈ‘ کنکشن‘ ہارڈ ڈرائیو‘ براڈ بینڈ‘ انٹینا‘ ٹرانسسٹر اور ایسے ہی بے شمار الفاظ اور اصطلاحات ہیں جن کے ترجمے کے کوئی کوشش نہیں کی گئی اور یہی مستعمل ہوگئے ہیں لیکن بدقسمتی تو یہ ہے کہ اردو اخبارات ‘ اردو کے اچھے اور مقبول الفاظ ترک کر کے ان کی جگہ انگریزی کے الفاظ ٹھونسے جا رہے ہیں۔ مثلاً رو برو یا تخلیہ میں ملاقات کے لئے انگریزی کی اصطلاح ‘ ون ٹو ون استعمال کی جارہی ہے حالانکہ انگریزی کی صحیح اصطلاح ون آن ون ہے۔ اسی طرح تعطل اردو کا اتنا اچھا لفظ ہے اس کی جگہ سینہ تان کر ڈیڈ لاک استعمال کیا جارہا ہے ۔ انتخاب کی جگہ الیکشن ‘ عام انتخابات کی جگہ جنرل الیکشن ‘ جوہری طاقت کی جگہ ایٹامک انرجی‘ کا وائی کی جگہ آپریشن‘ حزب مخالف کی جگہ اپوزیشن‘بدعنوانی کی جگہ کرپشن‘ استاد کی جگہ ٹیچر ‘ مجلس قایمہ کی جگہ اسڈینڈنگ کمیٹی‘ جلسہ کو میٹنگ اور پارلیمان کے اجلاس کو سیشن لکھاجاتا ہے۔ چرس جو خاص طور پر اپنے ہاں کی سوغات ہے اسے اردو اخبارات کینیبیز لکھتے ہیں۔ محصول کو ڈیوٹی کہتے ہیں قرطاس ابیض اتنا اچھا لفظ ہے اب اخبارات اس کی جگہ وایٹ پیپر لکھتے ہیں اور ہوائ اڈہ کو ایرپورٹ ۔ ایک عرصہ ہوا قومی اسمبلی میں حزب مخالف کے کچھ اراکین گرفتار کر لئے گئے ان کو ایوان میں طلبی کے حکم کے لئے بے دھڑک پروڈکشن آرڈر لکھا جاتا رہا اور تو اور پیپلز پارٹی کے اراکین نے بغاوت کرکے اقتدار میں شمولیت کے لئے اپنا الگ دھڑا بنایا اور نام انہوں نے اسے پیٹریاٹ گروپ کا دیا ۔ اب ان سے کون پوچھے کہ پیٹریاٹ کے لئے محب وطن یا وفادار کے اتنے خوبصورت لفظ کو انہوں نے کیوں ترک کیا۔ کیا انگریزی کا لفظ استعمال کر کے وہ اپنے آپ کو اعلی و ارفع ثابت کرنے کی کوشش کررہے ہیں یا جتن عوام کو بے وقوف بنانے کے ہیں۔
    پچھلے دنوں ایک اخبار میں جلی سرخی دیکھ کر بے ساختہ ہنسی آگئی۔ سرخی تھی۔۔فری ہینڈ ملنے کے باوجود حکومت نے کوئی لیجسلیشن نہیں کی۔ ایک اخبار میں سرخی تھی۔۔۔یورپی یونین کی اینٹی ڈمپنگ ڈیوٹی لگانے کی دھمکی دی ہے۔ اس خبر میں لکھا تھا کہ پی وی سی کی ڈمپنگ کی انویسٹی گیشن کے لئے انکوایری ٹیم بھیجی جائے اگر ہماری بیڈ لینن پر اینٹی ڈمپنگ ڈیوٹی لگائی گئی تو ہماری ایکسپورٹ متاثر ہوگی۔ ہماری چھپن ہزار بیڈ لینن کی ایکسپورٹ یورپ کی مارکٹ میں جاتی ہیں جو کہ اٹھائیس فی صد
    شئیر ہے۔ اب آپ ہی فیصلہ کیجئے کہ کیا یہ اردو ہے؟ ۔ انگریزوں سے آزادی تو حاصل کر لی لیکن ایسا لگتا ہے کہ خود اپنے آپ اپنے اوپر مغربی ذہنی غلامی طاری کر لی۔ اس زمانہ میں جب ملک انگریزوں کا غلام تھا اردو زبان کی ایسی غلامانہ درگت نہیں بنی تھی۔۔
    اردو پر انگریزی مسلط کرنے کی کوشش کے حق میں ایک دلیل یہ دی جاتی ہے کہ انگریزی بین الاقوامی رابطہ اور سائنس تجارت صنعت اور ٹیکنولوجی کی زبان ہے اور اردو سے چمٹے رہنے کا مطلب ان شعبوں میں پسماندگی کی راہ اختیار کرنا ہے۔ لیکن اس دلیل کے حامی اس حقیقت کو نظر انداز کر دیتے ہیں کہ چین ‘ روس ‘ جرمنی اور فرانس ایسے ترقی یافتہ ملکوں نے بھی آخر ترقی کی ہے اپنی زبانوں میں اپنے بچوں کو تعلیم دے کر اور اپنی زبان کو زندہ رکھ کر۔
    سن ستر کے اوایل میں جب ذوالفقار علی بھٹو نے سندہ کے اسکولوںمیں سندھی کو لازمی مضمون کے طور پر بحال کیا تھا تو رٔیس امروہوی نے لکھا تھا’’ اردو کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے‘‘ ان کا یہ مصرعہ روزنامہ جنگ نے شہہ سرخی کی صورت میں شایع کیا تھااور ایک ہنگامہ اٹھ کھڑا ہوا تھا ۔ اس وقت تو اردو کا جنازہ نہیں نکلا تھا لیکن اب ایسا لگتا ہے کہ اردو کا جنازہ نکلنے کے لیے تیار ہوگیا ہے۔

    مذکورہ مضمون وائس آف امریکہ سے وابستہ سینیر صحافی سہیل انجم کےذریعہ ای میل سے موصول ہوا ہے ۔
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 2
  2. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    کافی "آئی اوپننگ آرٹیکل" ہے :p
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  3. محمد شعیب

    محمد شعیب محفلین

    مراسلے:
    1,853
    موڈ:
    Busy
    اور تھاٹ پرووکنگ بھی :p
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  4. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    اف، بروٹس یو ٹو :p
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  5. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,357
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    اٹ از "ٹٹ فار ٹیٹ" اردو کو وحی خداوندی سمجھنے والوں نے دیگر زبانوں کا جنازہ نکالا اب باری اردو کی ہے۔ یوں بھی دنیا جس تیزی سے قریب ہو رہی ہے ایسے میں تیسری دنیا کی زبانوں کو اپنا آپ بحال رکھنا انتہائی مشکل ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  6. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,328
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    فکر انگیز اور چشم کشا
     
    • متفق متفق × 1
  7. ایچ اے خان

    ایچ اے خان معطل

    مراسلے:
    14,183
    موڈ:
    Cool
    ڈونٹ وری۔ یہ نیا ٹائم ہے اور دنیا سے سنکرونائز ہونے کے لیے دوسری زبانوں کو ایڈاپٹ کرنا پڑتا ہے
     
  8. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,328
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    جب اپنی زبان میں مترادف الفاظ موجود ہیں تو دوسری زبانوں کے الفاظ استعمال کرنے کی کیا ضرورت؟
     
  9. ایچ اے خان

    ایچ اے خان معطل

    مراسلے:
    14,183
    موڈ:
    Cool
    اردو تو ہے ہی دوسروں کی زبان۔
    ائی میِن کہ اردو کا سورس فارسی، ہندی، عربی، انگلش، اور پنجابی ہے۔ اب انگلش کے الفاظ بڑھتے جارہیں ہیں۔ اور وائےناٹ؟ کیا حرج ہے؟
     
  10. ماسٹر

    ماسٹر محفلین

    مراسلے:
    239
    موڈ:
    Busy
    انگریزی کونسی خالص زبان ہے ۔ اردو کی طرح وہ بھی کھچڑی ہے۔
    وقت کے ساتھ زبان بھی کچھ بدلنی پڑتی ہے ۔ مگر اردو کوجان بوجھ کر بگاڑنا تو ایک فیشن بن گیا ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,327
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    انا للہ و انا الیہ راجعون۔
    یہاں اردو پڑھانے والے بھی انگریزی کا استعمال کرتے ہیں۔ مائیں خاص طور پر اپنے بچوں سے ملی جلی انگریزی بولتی ہیں۔ "بیٹا۔اپنے ھینڈ واش کر کے بریک فاسٹ کرو۔گڈ بوائے۔ہری اپ۔ہھر آپ نے read اور write بھی کرنا ہے"
    ایک طویل عرصہ تک میں اپنی طالبات کے ساتھ مل کر خالص اردو کے لئے کوشش کرتی رہی۔پڑھاتے ہوئے حتی الامکان کوشش ہوتی کہ اردو کے الفاظ ہی استعمال کروں۔ساتھیوں،دوستوں میں بھی یہی کوشش ہوتی۔۔۔۔اپنے بچوں کو بھی بھیڑ چال نہ چلنے دی۔ بچوں کے اساتذہ کہتے کہ ان سے گھر میں انگریزی بولا کریں۔لیکن میرا نظریہ رہا کہ انگریزی تو آ ہی جائے گی۔اپنی زبان نہیں چھوڑنی۔ پہلے ہی میری ایک زبان چھُٹ گئی ہے۔ہماری مادری زبان پنجابی ہے۔ لیکن بوجہ مجھے اچھی طرح نہیں آتی اور میں بچپن سے اردو بولتی ہوں۔ نتیجتاََ میرے بچوں کی مادری زبان اردو:)ہوئی۔
    لیکن اب میں تھکنے لگی ہوں۔ میرے ارد گرد سب لوگ اپنے گھروں میں بچوں سے انگریزی الفاظ سے لبالب بھری اردو بولتے ہیں۔کبھی ایسا لگنے لگتا ہے کہ میں شاید غلط کر رہی ہوں۔بچوں کے سکول میں ان کی اساتذہ کے ساتھ دوسرے لوگ انگریزی ملی اردو اور میں اردو میں بات کرتے ہیں۔
    محمد علم اللہ اصلاحی بھائی! سیّد شہزاد ناصر بھائی! کیا ہم جیسے لوگ اس معاشرے میں زیادہ دیر پنپ سکیں گے؟ بعض اوقات اپنا آپ ڈیڑھ اینٹ لگتا ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  12. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    12,327
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    زبان ثقافت کا ایک اہم عنصر ہے۔کسی کی ثقافت ختم کرنی ہو تو اس کی زبان ختم کر دو۔
    ہمارے معاشرے میں انگریزی زبان بولنے والوں سے لوگ مرعوب ہوتے ہیں۔ انہیں زیادہ پڑھا لکھا سمجھا جاتا ہے۔انہیں اہمیت ملتی ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  13. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,328
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کیا سرخ کشیدہ الفاظ کے مترادف اردو میں موجود نہیں؟
    اگر موجود ہیں تو بلاضرورت کیوں استعمال کیا جائے؟
     
  14. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,328
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ابھی سے ہی تھک گئی :)
    اس میں قصور ہمارا بھی ہے ہم اپنے بچوں کی سرگرمیوں پر نظر نہیں رکھے بچوں کے دل میں شروع سے ہی قومی اور مادری زبان کی محبت ڈالنی چاہئے میں اس بات سے اتفاق نہیں کرتا کہ ماحول کا اثر قبول کیا جائے بلکہ کوشش یہ ہونی چاہئے کہ ماحول پر اثر انداز ہوا جائے کام دیکھنے میں مشکل ضرور لگتا ہے مگر ناممکن نہیں
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. ایچ اے خان

    ایچ اے خان معطل

    مراسلے:
    14,183
    موڈ:
    Cool
    کوئی حرج نہیں
    بلکہ دونوں میں کوئی حرج نہیں
     
  16. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,328
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    تے تسی لگے رہو سانوں کی :ohgoon:
     
  17. ایچ اے خان

    ایچ اے خان معطل

    مراسلے:
    14,183
    موڈ:
    Cool
    یاد رکھیں زبانوں کی ترقی ازادی اور اسانی سے ہوتی ہے۔ یعنی جس میں لوگ اسانی محسوس کریں۔ انفرادی طور پر کچھ زیادہ اثر نہیں پڑتا
    البتہ حکومتی سطح پر اقدامات لینے سے فرق پڑتا ہے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  18. سید شہزاد ناصر

    سید شہزاد ناصر محفلین

    مراسلے:
    9,328
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    اور آپ کو جو آزادی ملی ہوئی ہے وہ مراسلے سے ظاہر ہے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  19. ایچ اے خان

    ایچ اے خان معطل

    مراسلے:
    14,183
    موڈ:
    Cool
    جی ہاں
    یہی خوبصورتی امریکی انگریزی میں ہے
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  20. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,357
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    بس کچھ یہی رونا پیٹنا پاکستانی کی قومی زبانوں کے بولنے والے چند دیوانوں نے بھی مچا رکھا ہے کہ اردو مسلط کر کے ہماری ثقافت تباہ کی گئی یا کی جا رہی ہے۔ اب قومی رابطے کی زبان اردو کا ہے ۔ کل کلاں چین کے بڑھتے ہوئے اثر رسوخ کے سبب انگردو کا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر