۔۔۔۔اور اِس خرابے کو اُجڑا دیار کہتے تھے(غزل۔۔۔۔شکیل احمد خان)

شکیل احمد خان23 نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 14, 2020

  1. شکیل احمد خان23

    شکیل احمد خان23 محفلین

    مراسلے:
    138
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    غزل
    کہاں گئے جنھیں ہم یارِ غار کہتے تھے
    وہی کہ جو ہمیں دل کا قرار کہتے تھے

    بدل نہ جانا کہیں تم بدلتے وقت کے ساتھ
    جفا سے پہلے وہ یہ بار بار کہتے تھے

    میں رونا روؤں اب اُس کا یا خود اُسے روؤں
    مرا وہ دل جسے باغ و بہار کہتے تھے

    تھے کانٹے جوشِ بہاراں سے شاخِ گل پر وا
    اُنہیں بھی حسن کا ہم شاہکار کہتے تھے

    ترے فراق میں ویران دل کی دنیا تھی
    اور اِس خرابے کو اُجڑا دیار کہتے تھے

    گزر رہی ہے بڑے ضبط سے شکیل اپنی
    حیات، آپ جسے اضطرار کہتے تھے
    [​IMG]
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 15, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر