کلیات اسمٰعیل میرٹھی 361 ۔ ۔ ۔ ۔۔ 384

خرد اعوان نے 'ورکنگ زون' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 30, 2009

  1. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    کلیات اسمٰعیل
    صفحہ نمبر 353

    سراپاے من پاے تاسر بہ لرزد
    کہ مجرم بدیوانِ داوربہ لرزد
    زلطفت نئے خامہ گوہر فشاند
    زقمرِ تو درتیغ جوہر بہ لرزد
    چناں لرز از بیمِ جاہِ تو حاسد
    کہ دردورِ اسلام کا فربہ لرزد
    مگر دیدہ انوارِ قلبِ منیرت
    کہ ہر صبح دم مہرِ خاوربہ لرزد
    مرا دل بہ لرزد زبےبرگ و سازی
    چناں کزسخائے تو گوہر بہ لرزد
    یناسایم از جنبش و نیست جنبش
    کہ پاماندہ برجاےوپیکر بہ لرزد
    ہے لرزم از دستِ سرمائے ناخوش
    کہ دل دادہ از شوخِ دلبر بہ لرزد
    چناں حرف لرزد بہ پیشِ نگاہم
    کہ اندر کف مست ساغر بہ لرزد
    زسرماے دی کس بہ لرزد بسانم
    مگر شاخِ عریان زصرصر بہ لرزد
    چینن است حالم بہ ماہِ نومبر
    دلِ من زبیمِ دسمبر بہ لرزد
    بازببارید ابرباز بیامد بہار
    باز نواساز کرد مرغ سرِشاخسار
    بادوزیدن گرفت سبزہ چمیدن گرفت
    جلوہ صدرنگِ گل جوش زدازہرکنار
    باز پرندِ سحاب دامنِ گوہر فشاند
    ہم بسرِ شہر ودہ ہم بسرِ کوہسار
    غنچہ دہن باز کردبہرِ سپاسِ خداے
    برگ ورقہا نوشت درصفتِ کردگار
    تاک فتادہ ہمے مست بطرفِ چمن
    سرِِوسہی سربلند گشتہ لبِ جوئبار
    سنبلِ پیچاں فگند طرہ فروترزدوش
    نرگسِ شہلا کشاد دیدہ بروے بہار
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    354

    بسکہ طرب عام شدکام روائی گرفت
    سبزہ بیگانہ ہم یافت دریں بزم بار
    ساقی و ساغر بدست مطرب و شعرے بلب
    زمزمہ عود و چنگ جام و کفِ مےگسار

    تاکے بہ عدو زنم درِ صلح
    اےشوخِ ستیزہ کاربر خیز
    ناچار شدم زشورِ ناصح
    اے تہمتِ اختیار برخیز
    بہ نشست غبار بردلِ او
    اے دیدہ اشکبار برخیز
    برخاست دلِ من ازسرجاں
    اے دلبرِ جاں شکار برخیز
    اے بلبلِ نالہ مست مے نال
    شد فصلِ گل و بہار برخیز
    خلقے شدہ منکرِ قیامت
    اے فتنہ روزگار برخیز
    من بندِ نقاب مے کشایم
    اے طرہ مشکبار برخیز
    تاپردہ فتدز کفروایماں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    355

    زاہد بہ نواے خارج آہنگ
    دل برکنی ازرباب تاکے
    آخرنہ کہ واژ گونہ بختم
    تشویش زانقلاب تاکے
    ناگفتہ ہزار حرف خون شد
    باغیرکنی خطاب تا کے
    من تشنہ جگر ترم زتیغت
    یکبار بکُش عتاب تاکے
    ساقی نِیَم ازسزائے جامے
    دوراں کندم خراب تاکے

    بےنشان وبے صفت درعینِ آثار آمدی
    گردِخوددردوروگردش ہم چوپرگارآمدی
    یوسفِ مصر جمالی وزلیخاے طلب
    خودشدی جنس عزیزوخودخریدار آمدی
    دعوتِ دیں کردیُ خود برزدی بانگِ اِبا
    وحِی منزل گشتی وہم خود باقرار آمدی
    حُسن چوں بے پردہ شدغوخاے عشق آمد پدید
    طالبان خویش راہم خود طلب گار آمدی
    چوں بہ بے رنگی رسیدی خاروگل راسوختی
    چوں برنگ وبو فتاوی عینِ گلزار آمدی
    چوں حجابِ خودشدی بزمِ شہود آرستی
    خویشتن راغیر بنمودی باظہار آمدی
    بہرِ اظہارِ شفا خودرامریضے ساختی
    چارہ گر گشتی وبربالیں ِ بیمار آمدی
    عالم اندر رقص آمد تاخرامیدی بناز
    شور درجاں ہافتادہ تابگفتار آمدی
    ہرچہ اندیشم نہ باایں ہمہ غیرِ تونیست
    بحرِ موّاج وحباب و دُرّشہوار آمدی
    ناقہ لیلائے حسنت چوں بہ صحرا سرنہاد
    کسوتِ مجنوں بہ برکردی و ہشیار آمدی
    علم گشتی و شدی مستور اندر چینِ کفر
    رند وگمراہ و قلندر مست وسرشار آمدی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    356

    ہر چند انیست بتوہیچ کلامے
    گفتم بتوازلب نہ بروں آمدہ حرفے
    رفتم بتوازجائے نہ برداشتہ گامے
    آنگاہ کہ ناگاہ بہ بیگاہ رسیدیم
    سالیست نہ ماہیست نہ صبحیست نہ شامے
    منزل گہِ بارانہ سلو کیسنت نہ رسمے
    نے ہمسفرے ہست نہ میلے نہ مقامے
    آن مے کہ بخوریم نہ درخورد عوام است
    خمخانہ مارا نہ خُمے ہست نہ جامے
    صف فتنہ برانگیختہ ناکردہ نگاہے
    صد مرحلہ طے ساختہ تاکردہ خرامے

    متفرقات
    مثنویات
    1
    بدریا وکان ہست گوہر بسے
    نیابدبہاتانگیرد کسے
    بزیرِزمیں ہست خرمن ہزار
    ازآں کسے نیست بے کشت وکار
    اگر نفع اندک وہی رائگاں
    بطمعِ زیادت زردے گماں
    ندانندت اہلِ خرد باہنر
    کہ آں نفع اندک نیابی دگر
    کہ داند کہ بسیار مقسوم نست
    چرامید ہی انچہ معلوم تست

    2
    تنازع مبرپیشِ دیوانیاں
    کہ بسیار خواہد شداندک زیاں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    357
    تحمل کن اندک زیانے بمال
    کہ خود مالِ ناقص بہ از پائمال

    3

    جوانا جوانی کمن رائگاں
    کہ پیری ہمے آیداز پے دواں
    گرامر وزتدبیرِ فرد اکنی
    بسر منزلِ عافیت جاکنی
    ورامروز کارت بساماں نشد
    دریغا کہ خود ایں شیدوآں نشد

    4
    لبِ نانے بامن وآزادی
    بہ ز حلواے خوف وناشادی
    جاے تنگے کہ بے ضرر باشد
    بہ زایواں کہ پُرخطر باشد

    5
    خرے ما عند لیبے گفت روزے
    شنید ستم کہ مے نالی بسوزے
    بہر طرفے فتادہ برزبانہا
    زخوش الحانیِ تو داستانہا
    ولے خواہم بگوشِ خود شنیدن
    بداد نغمہ ہایت وار سیدن
    درآمد بلبلِ گویا بآواز
    بصد آئیں ترنّم کرد آغاز
    بزیروبم چناں آہنگ ہاکرد
    کہ صحنِ بوستاں راپُرنواکرد
    بوجد آورد مرغانِ چمن را
    نہ تنہا مرغ بل سروسمن را

    قطعات
    1
    مکن زور آوری برزیردستاں
    کہ زورت رانمے بینم بقائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    358
    بترس از انقلابِ دہرزنہار
    مکن درحقّ ِ مسکیناں جفاے

    2
    دروطن و درسفر و در حضر
    گربودت یارِ وفا داربہ
    یار کہ بگذاشت ترا در بلا
    مار یقیناً زچنیں یاربہ
    پشتئ ہم جنس کنددام ودد
    دام ودد از مردمِ غدّار بہ

    3

    تواں برفق ومدار ابشادمانی زیست
    ولے زعربدہ خیزونکال وبدبختی
    ہر آنکہ صلح بہ ابناے جنس پیش گرفت
    بروزگار بہ بیند مصیبت و سختی

    4
    اے ترا دست نارسیدہ تباک
    ترش انگور را چرا گوئی
    توز خود کردہ نہ ترکِ ہوس
    شرم بادت کہ حیلہ می جوئی

    5

    دوستاں را کہ جنگ و فتنہ نجاست
    دگر انجام نیک امید مدار
    ہیچ سودے حسودرازحد
    نیست الاکشیدنِ آزار

    6

    ہرآنکہ رنج و مشقت کشدزجتاراں
    برانقلابِ زماں چوں کندغم وشادی
    بدست ہر کہ فتد سربہ پیش او بنہد
    ازآں کہ قطع شداوراامید ازادی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    359

    ابیات
    1
    دوں ہمت است و ناکس و نامرد وبدنہاد
    آں کو بمکر وحیلہ بدست آوردمراد

    2
    زحرص وطمع دور باش اے سلیم
    طمع خرس امینمایدگلیم

    3
    چوتیغِ راستی داری توانی لشکرے کشتن
    ولیکن تیغِ فولادی نہ ہر جائے بکارآید

    4
    تو بینانہ کے قطع راہ
    زمردانِ دانابصیرت بخواہ

    5
    ہمانا کہ مغرور گرددہلاک
    کشف وار روزے درافتدبخاک

    6

    جان بابا برو نکوئی کُن
    کہ نکوئی بلا بگرداند

    7
    بخاکِ مذلت نشاند دروغ
    دروغ آدمی راکند بے فروغ

    8

    بوزنہ نقلِ مرد نان بکند
    گرتو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    صفحہ 360
    9

    دیدیم صدہزار پئے دیگران حَکَم
    امّا حَکَم بدیدیم ازبہرِ خویش کم

    10

    خرگوش صفت گر تو دریں خواب بمانی
    ترسیم کہ خودراسرِ منزل نہ رسانی

    11

    بدست آوردنِ دنیا ہنر نیست
    یکے راگر توانی دل بدست آر

    12
    تنہا نہ زاہلِ وعظ و نصیحت شنیدہ ایم
    انجامِ لاف غیرِ فضیحت نہ دیدہ ایم

    13

    بوقتِ امن و سلامت مزن زمردی لاف
    کہ تو بخواب ندیدی ہنوز روزِ مصاف

    14

    اے بساکس کہ درزیانِ دگر
    خویشتن راہمی بناددہد

    15

    چنانکہ نغمہ بلبل بگوشِ خر ہیچ است
    بچشمِ بے ہنراں ہمچنیں ہنر ہیچ است
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    361

    بامیدِ نفع کردن بحق بداں نکوئی
    مگر ایں مثال دارد کہ شب آفتاب جوئی

    17

    زودبینی کہ مرد سایہ پرست
    درسرِ سایہ شے دہداز دست
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    362

    ضمیر اُردو

    نوٹ : یہ نظمیں سواے مثلث اور ایک غزل کے ترتیبِ کلیات کے بعد لکھی گئی ہیں احباب کی فرمایش سے بطور ضمیمہ درج کی گئیں ۔

    مثنوی
    کوّا
    کوّے ہیں سب دیکھے بھالے
    چونچ بھی کالی پر بھی کالے
    کالی کالی وردی سب کی
    اچھی خاصی اُن کی ڈھب کی
    کالی سینا کے ہیں سپاہی
    ایک سی صورت ایک سیاہی
    لیکن ہے آواز بُری سی
    کان میں جا لگتی ہے چھُری سی
    یوں تو ہے کوّا حرص کا بندہ
    کُچھ بھی نہ چھوڑے پاک نہ گندہ
    اچھی ہے پر اُس کی یہ عادت
    بھائیوں کی کرتا ہے دعوت
    کوئی ذرا سی چیز جو پالے
    کھائے نہ جب تک سب کو بُلا لے
    کھانے دانے پر ہے گرتا
    پیٹ کے کارن گھر گھر پھرتا
    دیکھ لو ! وہ دیوار پہ بیٹھا
    غُلّہ کی ہے مار پہ بیٹھا
    کیوں کر باندھوں اُس پہ نشانا
    بے صبرا چوکنّا ۔ سیانا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    363

    کائیں کائیں پنکھ پسارے
    کرتا ہے یہ بھوک کے مارے
    تاک رہا ہے کونا کُھترا
    کچھ دیکھا تو نیچے اُترا
    اُس کو بس آتا ہے اُچھلنا
    جانے کیا دو پانو سے چلنا
    اُچھلا ، کودا لپکا سُکڑا
    ہاتھ میں تھا بچّہ کے ٹکڑا
    آنکھ بچا کے جھٹ لے بھاگا
    واہ رے تیری پھرتی کاگا !
    ہا ہا کرتے رہ گئے گھر کے
    یہ جا وہ جا چونچ میں بھر کے
    پیڑ پہ تھا چڑیا کا بسیرا
    اُس کو ظالم نے جا گھیرا
    ہاتھ لگا چھوٹا سا بَچّا
    نوچا پھاڑا کھا گیا کچّا
    چڑیا رو رو جان ہے کھوتی
    ہے ظالم کی جان کو روتی
    چِیں چیںِ چیںِ چیںِ دے کے دُہائی
    اپنی بِپتا سب کو سُنائی
    کون ہے جو فریاد کو پہنچے
    بے چاری کی داد کو پہنچے
    پکنے پر جب مَکّا آئی
    کوّوں نے جا لوٹ مچائی
    دودھیا بھُٹّا چونچ سے چیرا
    سَچ مُچ کا ہے اُٹھائی گیرا
    رکھوالے نے پائی آہٹ
    گوپھن لے کر اُٹھّا جھٹ پٹ
    " ہریا ہریا " شور مچا کر
    ڈھیلا مارا تڑ سے گھُما کر
    سُن کے تڑاقا کوّا بھاگا
    تھوڑی دیر میں پھر جا لاگا
    لالچ خورا ڈھیٹ نڈر ہے
    ڈانکو سے کچھ اِس میں کسر ہے ؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    364

    ڈانکو ہے یا چور اُچّکا
    پَر ہے اَپنی دُھن کا پکّا

    مثلث

    خوشی اِک مشغلہ ہو رات دن کا
    شمار افزوں ہو اُس کے سال و سن کا
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا

    ہے امن اُس شہنشاہی میں ہرجا
    سُکھی ہیں آج راجا اور پرجا
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    کوئن دنیا کے ہر خطّہ میں نامی
    غریبوں اور مسکینوں کی حامی
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    رعایا تن کوئن اِس تن کی جاں ہے
    خدا کی خلق پر وہ مہرباں ہے
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    دعاگو اُس کا پورب اور پچھاں بھی
    فرنگستان بھی ہندوستاں بھی
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    رہے زندہ کوئن بادولت و بخت
    رہے محفوظ اُس کا تاج اور تخت
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    ہیں اکثر ساکنانِ رُبِعّ سکوں
    کوئن کے حکم میں مامون و مصئوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    365
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    ہے اُس کا مُلک راحت کا ٹھکانا
    زمانہ اُس کا ہے طُرفہ زمانہ
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    سبھی احسان اُس کا مانتے ہیں
    اُسے پیارا شہنشہ جانتے ہیں
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    ہیں اُس کے عہد میں انسان بڑھتے
    نہالِ تازہ ہیں پروان چڑھتے
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    سمندر ۔ شہر ۔ جنگل اور پربت
    بنے گلزار ہیں اُس کی بدولت
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا


    1، نظام الدین کی ہے التجا یہ
    نکلتی ہے تہِ دل سے دعا یہ
    خداحافظ خدا حافظ کوئن کا

    قطعات
    (1)
    مسلمانوں کی تعلیم


    2۔ اے ! خوشا وہ قوم مستقبل ہو جس کا شان دار
    کَل سے بہتر آج ہو اور آج سے بہتر ہو کَل
    دم بدم راہِ طلب میں کر رہی ہو دوڑ دھوپ
    ایک نقطہ پر نہ ہو اُس کو توقف ایک پل

    1۔۔ یہ نظم شیخ نظام الدین صاحب نبیرہ خان بہادر حافظ عبدالکریم مرحوم سی ۔ آئی ۔ ائ ریئس لال کورتی نے جلسہ سالگرہ ملکہ معظمہ کوئن وکٹوریا میں پڑھی تھی 12

    2۔ 30 اپریل 1910 کو بمقام علیگدہ ٹیچرز کانفرنس میں پڑہا گیا ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    366

    رفتہ رفتہ بن گئی ہو علم کی کشور کشا
    ہوتے ہوتے ہو گئی ہو مردِ میدانِ عمل
    کیوں نہ ہو اُس قوم کی دُنیا کے ہر گوشہ میں ساکھ
    جس میں اخلاقی سکت ہو اور ہو حکمت کا بَل
    وقت کو دولت کو طاقت کو نہ کھوئے رائگاں
    کھودے احیاناً تو حاصل بھی کرے تعم البدل
    ہچکچاتی ہو پہاڑوں سے نہ دریا سے رُکے
    ہمّتیں ہوں اُس کی عالیِ عزم ہوں اُس کے اَٹل
    حسرتاوہ قومِ ناقابل کہ ہو ننگِ سلف
    کاہلی سے دست و بازو ہو گئے ہوں جس کے شل
    اُس کی طاقت کیا ؟ کہ ہوں اوروں سے کم جس کے نفوس
    اُس کی عزت کیا ؟ جو ہو پس مانده علم و عمل
    اُس کی دولت کیا ؟ کہ ہوں افراد جس کے بے ہُنر
    مفلسی بھی اور دماغوں میں میشخت کا خلل
    کردیا ہے خانہ برباد آج اُسے اسراف نے
    جس کو قدرت نے دئے تھے سیکڑوں سنگیں محل
    خیر جو گزرا سو گزرا یہ جو ہیں تازہ نہال
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    367

    فکر اِن کی چاہیئے شاید یہی جائیں سنبھل
    اِن کو بارآور بناؤ خواہ بےکاروفضول
    آج جس سانچے میں ڈھالوگے انھیں جائیں گے ڈھل
    کھیت میں پیدا ہوں پودے اور نہ سینچو وقت پر
    ہے نتیجہ صاف ظاہر دھوپ سے جائیں گے جل
    سوکھ کر جھڑ جائیں کلیاں اور نہ چیتے باغباں
    ایسے ظالم باغباں کو کیا ملے گا خاک پھل
    جی چرانا کام سے اور کام یانی کا یقیں
    اے عزیزو ! ہے خلافِ حکمِ حق عزّوجل
    لَیسَ لِلاِنسَانِ اِلَّ مَا سَعٰی پڑھتے تو ہو
    لیکن اِس پڑھنے کا اے حضرات ! آخر ماحصل ؟
    شہد کی مکھّی کو دیکھو کس قدر مصروف ہے
    چوس کر ہر پھول سے لاتی ہے بے چاری عسل
    اپنے بچّوں کے لیے کرتی ہے آذوقہ تلاش
    آخرش آتے ہیں بچّوں کے بھی پَر پُرزے نکل
    یہ نئی تانتی ہماری کیا کرے گی بھاگ دوڑ
    تنگنائے کاہلی میں جب بڑے جائیں پھسل
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    368

    بعض کہتے ہیں بڑھو آگے کہ ہے میداں وسیع
    بعض کہتے ہیں کہ ہیں یہ کہنے والے مبتذل
    دیکھنا ! تم ٹَس سے مَس ہرگز نہ ہونا ایک انچہ
    بڑھ گئے آگے تو آجائے گا ایماں میں خلل
    اُن کا کہنا مانئے یا اِن کی خاطر کیجئے
    اپنا عقدہ کیجئے اب اپنے ہی ناخن سے حل
    تیز کر اپنی توجّہ کی کرن اے آفتاب (1) !
    تاکہ جائے عادتوں سے برف سُستی کی پگھل
    تیری گرمی سمندر سے اُٹھائے گی بخار
    پھر ہوا میں جمع ہوں گے بادلوں کے دَل کے دَل
    دشت اور کہُسار پر برسیں گے ایک دن جھوم جھوم
    ایک ہو جائے گا آخر دیکھنا ! جل اور تھل
    پھر تو ہو جائے گی یہ مردہ زمیں باغ و بہار
    پھر تو کھِل جائیں گے پژمردہ دلوں کے بھی کنول
    دِل نہ ہو درد آشنا تو نظم ہے اِک دردِ سر
    کیا رباعی کیا قصیدہ کیا مخمّس کیا غزل
    جملہ ڈیلیگٹ سے آب خیر مقدم عرض ہے


    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    1۔ آنریبل صاحبزادہ آفتاب احمد خاں بیرسٹرایٹ لا ۔ علی گڈہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    369

    اور پریذیڈنٹ(1) کی خدمت میں شکریہ ڈبل

    (2) قطعہ وفات مِلک معظم ایدورد ہفتم آن جہانی

    رحلت (2) ایڈورڈ ہفتم پیش آئی یک بہ یک
    اِس وقوعہ کا نہ تھا ہرگز کسی کو بھی خیال
    ہم نہ بھولے تھے ابھی وکٹوریہ عُظمٰے کا غم
    کیوں کہ گزرے تھے ابھی اِس حادثہ پر چند سال
    چند سالہ سلطنت میں شاہِ ولا جاہ نے
    کردیا سب پر عیاں اپنی لیاقت کا کمال
    ملکِ افریقہ میں قومِ بور کو بخشا عروج
    باوجود ِ فتح مندی چھوڑ دی جنگ و جدال
    کس قدر ہم عصر شاہوں سے بڑھائی آشتی
    کس قدر ہمسایہ ملکوں سے بناہا اعتدال
    بن گئے یارانِ مخلص پیرس و پیٹرس برگ
    ڈھل گئی انگلش کی جانب سے جو تھی گردِ ملال
    جرمن واسپینسیز رومی ویونانی و ترک
    صلح جو ایڈورڈ نے سب کی بدل دی چال ڈھال
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    1۔ شیخ عبدالقادر صاحب بیرسٹرایٹ لا
    2۔ مرتبہ 10 مئی 1910
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    370

    پیس میکر بّرِاعظم میں ہوا اُس کا لقب
    بڑھ گیا برطانیہ کا اور بھی غّروجلال
    کی تھی دورانِ ولی عہدی میں سیر اِس ملک میں
    تھی عنایت کی نظر ہندوستاں کے حسبِ حال
    ہفتمِ ماہِ مئی کو بج گیا کوسِ رحیل
    عیسوی اُنّیس صدیاں اور یہ دسواں ہے سال
    اب دعاہے جارج پنجم جانشینِ سلطنت
    مدتوں پھولے پھلے دُنیا میں یہ تازہ نہال
    سب کے دل پر نقش ہیں اِس خانداں کی نیکیاں
    اُن کے حق میں ہے رعایا کا دعاگو بال بال
    دودمانِ شاہ کو اﷲ دے صبروسکوں
    دولت و اقبال روز افزوں رہے اور ملک و مال

    (3) مسلمان اور انگریزی تعلیم
    ایک دن تھا بِحکم سرکاری
    گے اِسکول جابجا کھولے
    نہ تو کچھ فیس تھی نہ داخلہ تھا
    مفت تعلیم تھی اُسے جو لے
    ہم مسلمان سب اکڑ بیٹھے
    پہلے فتوےٰ جواز کا ہو لے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    371

    مُنہ زبانی بھی اور لکھ کر بھی
    پوچھ گچھ کی تو مولوی بولے
    " ایسی تعلیم سے تو بہترہے
    آدمی ٹوکری کہیں ڈھو لے "
    اُن کو تفتیص دین کی سوجھی
    تھے تعصّب کے آنکھ میں پھولے
    وہم و وسواس کے رہے چلتے
    سالہا سال توپ اور گولے
    اِنتظامِ اُمورِ دُنیا کو
    کیا سمجھتے یہ جَنّتی بھولے
    جس کو ہو کچھ بھ فہم سے بہرہ
    اپنے شربت میں زہر یوں گھولے
    رہ نما بے خبر تو بات کو پھر
    کون میزانِ عقل میں تولے
    رہے علمِ معاش سے کورے
    چہر قصبے محلّے اور ٹولے
    ہیں ہمارے جو اور ہمسایے
    گویا بیٹھے ہی تھے وہ مُنہ کھولے
    خوانِ یغما پہ جاکے ٹوٹ پڑے
    بھر لئے ٹھونس ٹھونس کر جھولے
    لگی ہلدی نہ پھٹکری اور مفت
    خوب موتی معاش کے رولے
    محکموں کی پلٹ گئی کایا
    آفسوں کے بدل گئے چولے
    کہا سیّد نے قوم سے "ناداں!
    تو بھی اُٹھ بیٹھ ہاتھ مُنہ دھولے
    پیچھے اُمیدِ جمع خرمن کر
    پہلے کھیتوں میں بیج تو بولے "
    تب ہوئی کچھ جِجھک ہماری دور
    اور ہم نے بھی بال وپر کھولے
    مگر اِس فیس کی گرانی کے
    متواتر لگے وہ ہچکولے
    حوصلہ کا نکل گیا بُھرکس
    اور ہمّت کے ہو گئے ہولے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. خرد اعوان

    خرد اعوان محفلین

    مراسلے:
    514
    372

    الغرض وہ مثل ہوئی اپنی
    " سرمنڈتے ہی پڑ گئے اولے "

    غریب اور امیر

    خوش ہیں غریب اپنے اُن جھونپٹروں کے اندر
    جو دھوپ کی تپش سے دوزخ کی بھٹّیاں ہیں
    شاکی ہیں اہلِ دولت حالاں کہ اُن کے گھر میں
    پنکھا بھی کِھنچ رہا ہے اور خَس کی ٹٹیاں ہیں

    غزلیات

    سرزمیںِ ہند کا میوہ ہے پھوٹ
    بوالہوس گِرتے ہیں اُس پر ٹوٹ ٹوٹ
    نچ کھُسٹ کے رہ گیا مفلس چمن
    یہ خزاں تھی یا کہ پنڈاروں کی لوٹ
    ہو چکی میعادِ ایّامِ بہار
    غنچہ وگل رو رہے ہیں پھوٹ پھوٹ
    جا کہیں سے مول لا عقلِ فرنگ
    کیا ہوا پہنا اگر ڈاسن کا بوٹ
    صانِع قدرت نے بھردیں کس قدر
    صنعتیں یورپ کے سر میں کوٹ کوٹ
    زالِ دُنیا کی نمایش دیکھ کر
    اچّھے اچّھوں کا وضو جاتا ہے ٹوٹ
    سچ کی پاؤ گے صدا ہر دم کڑی
    آخرش چِیں بول ہی جاتاہے جھوٹ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر