کلام سچل سرمست

سید شہزاد ناصر نے 'سندھی فورم' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 24, 2014

  1. طارق حیات

    طارق حیات محفلین

    مراسلے:
    84
    موڈ:
    Brooding
  2. طارق حیات

    طارق حیات محفلین

    مراسلے:
    84
    موڈ:
    Brooding
    حضرت صوفی سچلؔ سرمستؒ کی مثنویٰ ’’عشق نامہ‘‘ سے اقتباس
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    آن خدا از عشق آدم آفرید ۔۔۔ تاز مخلوقات اور ابرِ گزید
    خدا تعالیٰ عشق میں سے آدم کو پیدا کیا۔جس وجہ سے اُسے اشرف المخلوقات بنایا
    ~~~~~~~~~~~
    آن خدا اور امانت عِشق داد ۔۔۔ در نہادش سِرّ اسرارِ نہاد
    خدا تعالیٰ اُسے عشق کی امانت عطا فرمائی۔ اور اُس میں اپنے سارے مخفی راز چھپا دیئے
    ~~~~~~~~~~~
    خانہ آدم را بخودُ آباد کرد ۔۔۔ بیچگونی با باچگون امداد کرد
    آدم کے گھر اپنے آپ کو آباد کیا۔ بی مثال کو مثال میں لے آیا
    ~~~~~~~~~~~
    راست میگویم دلی گردد عیان ۔۔۔ آن کہ ہستی اسرار در باطن نہان
    اگرچہ اُس کے چھپے ہوئے اور مخفی راز عیاں بھی ہوجائیں۔پھر بھی میں سچ کہوں گا
    ~~~~~~~~~~~
    ہست آن آدم کجا عالم کجا ۔۔۔آن خدا موجود باشد جا بجا
    وہ آدم کہاں ہے؟ دنیا کہاں ہے؟ مگر خدائی ہر جگہ موجود ہے۔
    ~~~~~~~~~~~
    خلق الاشیا دان تو وھو عینہا ۔۔۔ رہ دوئی را سر بسر تو کن رہا
    خلق الاشیا وھو عینہا ’’معنیٰ اللہ کی مولاق اللہ کی آنکھیں ہیں‘‘۔ تم یہ معنیٰ سمجھو اور دوئی کے راستے کو چھوڑ دو
    ~~~~~~~~~~~
    آفرید خلق را خود آن خدا ست ۔۔۔ کل شیی اودو دانستن خطاست
    مخلوق کو پیدا کیا سو وہ خود ہے ۔(کل شیُ محیط)’’ معنیٰ اللہ سب چیزوں میں سمایا ہوا ہے‘‘۔ اس لیے دو سمجھنا غلطی ہے۔
    ~~~~~~~~~~~
    آنِ خدا درَ نام انسان آمدہ ۔۔۔ آن شراب اندرصراحی جوش کرد
    اللہ انسان کا نام لے کر آیا ہے۔ رحمان نے انسان کا بھیس دھارا ہے۔
    ~~~~~~~~~~~
    شاہ اعظم دِلق آدم پوش کرد ۔۔۔ آن شراب اندر صراحی جوش کرد
    اُسی شہنشاہ نے آدم کا لباس پہنا ہے۔ صُراحی کے اندر شراب نے جوش کیا ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر