کار برائے فروخت ٭ ساغر خیامی

عرفان سعید نے 'مزاحیہ شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 30, 2019

  1. عرفان سعید

    عرفان سعید محفلین

    مراسلے:
    5,476
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Psychedelic
    کار برائے فروخت

    ساغرؔ کسی سے گردشِ تقدیر کیا کہوں
    ہونے دئیے نہ وقت نے حالات پُرسکوں
    جھنڈے ہمارے گھر کے رہے یوں بھی سرنگوں
    سر پر رہا سوار اک دکھاوے کا جنوں
    بیٹھے بٹھائے دردِ سری اور مزید لی
    ہم نے پرانی کار کسی سے خرید لی

    چاروں طرف سے بند ہے صندوق کی طرح
    چلنے سے پہلے اچھلے ہے بندوق کی طرح
    لیتی ہے لمبی سانس بھی مدقوق کی طرح
    چلتی ہے وہ سڑک پہ بھی معشوق کی طرح
    اڑ جائے تو قدم نہ اٹھائے برائے سیر
    چل جائے تو رکے نہ وہ دیوار کے بغیر

    پھٹکار ایسی کار کے ساغرؔ خیال پر
    روتا ہے پھوٹ پھوٹ کے ماضی بھی حال پر
    کہنا پڑے قصیدے کئی جس کی چال پر
    کچھوا ہے وہ چڑھائی پہ ہرنی ہے ڈھال پر
    اکثر مرے گھٹانے پہ اسپیڈ بڑھ گئی
    اڑ کر سڑک سے چاٹ کے ٹھیلے پہ چڑھ گئی

    حالات اس قدر مرے سنگین ہو گئے
    کپڑے کسی کے چاٹ سے رنگین ہو گئے
    تیار مار پیٹ پہ دو تین ہو گئے
    رخ مہ رخوں کے اور بھی نمکین ہو گئے
    شرمندگی کے غار کو یوں پاٹنا پڑا
    کتنے ہی گل رخوں کو مجھے چاٹنا پڑا

    کیا کہیے کس طرح مرے جی کو جلائے ہے
    آگے اگر چلا جاؤں تو پیچھے کو جائے ہے
    مرغی کی طرح دھول پروں سے اڑائے ہے
    سو بار دن میں جیل کے رستے دکھائے ہے
    ہے کار کس کے پاس جو اتنی قدیم ہو
    آئے جو باپ سامنے بیٹا یتیم ہو

    چلتے چلاتے کھوپڑی اس کی جو پھر گئی
    وہ دشمنِ حیات گھٹا بن کے گھِر گئی
    ٹوپی کسی شریف کی نالی میں گر گئی
    آئی تھی موت اس کی مگر اُس کے سر گئی
    کانسٹبل کھسک گئے چوراہے چھوڑ کر
    بیت الخلا میں گھس گئی دیوار پھوڑ کر

    داخل ہوئی جو پھوڑ کے دیوار جل پری
    بیٹھے ہوئے کموٹ پہ تھے ایک شیخ جی
    عکسِ اجل کو دیکھ کے حالت ہوئی بری
    ہونٹوں میں جھولنے لگی بیڑی دبی ہوئی
    دیکھی جو موت روح بدن سے ہوا ہوئی
    لمحوں میں سات روز کی حاجت رفع ہوئی

    گو ہے شکستہ حال پہ ہمت بلند ہے
    کھینچے جو سوئے دار وہ ایسی کمند ہے
    یہ ہی نہیں کہ شرارت پسند ہے
    پہیوں میں اس کے وقت کی رفتار بند ہے
    چھوٹی ببول سے تو پھنسی آ کے نیم میں
    ہٹلر کا کام آئی ہے جنگِ عظیم میں

    موٹر خریدنے سے بڑا نام ہو گیا
    کہتے ہیں لوگ آپ کو آرام ہو گیا
    ان کو خبر نہیں مجھے سرسام ہو گیا
    گھر جس کی دیکھ بھال میں نیلام ہو گیا
    لِلّہ میری جانِ عزیزی بچائیے
    گاہک کوئی ملے تو مجھے بھی بتائیے

    (ساغر خیامی)





     
    آخری تدوین: ‏جنوری 30, 2019
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  2. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    2,584
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    :rollingonthefloor::rollingonthefloor::rollingonthefloor:
     
    • متفق متفق × 1
  3. امیر حمزہ

    امیر حمزہ محفلین

    مراسلے:
    33
    جھنڈا:
    Pakistan
    املا کی درستگی
     
    آخری تدوین: ‏اگست 26, 2019
  4. امیر حمزہ

    امیر حمزہ محفلین

    مراسلے:
    33
    جھنڈا:
    Pakistan
    کار برائے فروخت
    ساغرؔ کسی سے گردشِ تقدیر کیا کہوں
    ہونے دئیے نہ وقت نے حالات پُرسکوں
    جھنڈے ہمارے گھر کے رہے یوں بھی سرنگوں
    سر پر رہا سوار اک دکھاوے کا جنوں
    بیٹھے بٹھائے دردِ سری اور مزید لی
    ہم نے پرانی کار کسی سے خرید لی
    چاروں طرف سے بند ہے صندوق کی طرح
    چلنے سے پہلے اچھلے ہے بندوق کی طرح
    لیتی ہے لمبی سانس بھی مدقوق کی طرح
    چلتی ہے وہ سڑک پہ بھی معشوق کی طرح
    اڑ جائے تو قدم نہ اٹھائے برائے سیر
    چل جائے تو رکے نہ وہ دیوار کے بغیر

    پھٹکار ایسی کار کے ساغرؔ خیال پر
    روتا ہے پھوٹ پھوٹ کے ماضی بھی حال پر
    کہنا پڑے قصیدے کئی جس کی چال پر
    کچھوا ہے وہ چڑھائی پہ ہرنی ہے ڈھال پر
    اکثر مرے گھٹانے پہ اسپیڈ بڑھ گئی
    اڑ کر سڑک سے چاٹ کے ٹھیلے پہ چڑھ گئی

    حالات اس قدر مرے سنگین ہو گئے
    کپڑے کسی کے چاٹ سے رنگین ہو گئے
    تیار مار پیٹ پہ دو تین ہو گئے
    رخ مہ رخوں کے اور بھی نمکین ہو گئے
    شرمندگی کے غار کو یوں پاٹنا پڑا
    کتنے ہی گل رخوں کو مجھے چاٹنا پڑا

    کیا کہیے کس طرح مرے جی کو جلائے ہے
    آگے اگر چلاؤں تو پیچھے کو جائے ہے
    مرغی کی طرح دھول پروں سے اڑائے ہے
    سو بار دن میں جیل کے رستے دکھائے ہے
    ہے کار کس کے پاس جو اتنی قدیم ہو
    آئے جو باپ سامنے بیٹا یتیم ہو

    چلتے چلاتے کھوپڑی اس کی جو پھر گئی
    وہ دشمنِ حیات گھٹا بن کے گھِر گئی
    ٹوپی کسی شریف کی نالی میں گر گئی
    آئی تھی موت اس کی مگر اُس کے سر گئی
    کانسٹبل کھسک گئے چوراہے چھوڑ کر
    بیت الخلا میں گھس گئی دیوار پھوڑ کر

    داخل ہوئی جو پھوڑ کے دیوار جل پری
    بیٹھے ہوئے کموڈ پہ تھے ایک شیخ جی
    عکسِ اجل کو دیکھ کے حالت ہوئی بُری
    ہونٹوں میں جھولنے لگی بیڑی دبی ہوئی
    دیکھی جو موت روح بدن سے ہوا ہوئی
    لمحوں میں سات روز کی حاجت رفع ہوئی

    گو ہے شکستہ حال پہ ہمت بلند ہے
    کھینچے جو سوئے دار وہ ایسی کمند ہے
    یہ ہی نہیں کہ یہ شرارت پسند ہے
    پہیوں میں اس کے وقت کی رفتار بند ہے
    چُھوٹی ببول سے تو پھنسی آ کے نِیم میں
    ہٹلر کے کام آئی ہے جنگِ عظیم میں

    موٹر خریدنے سے بڑا نام ہو گیا
    کہتے ہیں لوگ آپ کو آرام ہو گیا
    ان کو خبر نہیں مجھے سرسام ہو گیا
    گھر جس کی دیکھ بھال میں نیلام ہو گیا
    لِلّہ میری جانِ عزیزی بچائیے
    گاہک کوئی ملے تو مجھے بھی بتائیے

    (ساغر خیامی)
     

اس صفحے کی تشہیر