پنجابی پسندیدہ اشعار

سیما علی

لائبریرین
اج اس پنڈ دے میں کولوں لنگھ چلیاں ٭ جتھوں کدے ہلنے توں دل نہیں سی کردا
جتھے مینوں نت پیا رہندہ کوئی کم سی ٭ کم کی سی، سچی گل اے جتھے تیرا دم سی
تیرے دم نال پنڈ حج والی تھاں سی ٭ کڈا سہونا ناں سی
اوہدہ ناں سن کے تے جان پے جاندی سی ٭ دید اوہدی اکھیاں نوں ٹھنڈ اپڑاندی سی
دروں رکھ تک کے تھکیویں لہہ جاندے سن ٭ باہیں مار مار کے اوہ انج پئے بلاندے سن
سرگ دا سواد آوے اوہناں ہیٹھ کھلیاں
اج میرے پیراں نوں نہ کھچ کوئی ہوندی اے ٭ پنڈ ولوں آئی وا پنڈے نوں نہ پونہدی اے
کسے دیاں چاواں میرا راہ نہیں ڈکیا ٭ کوٹھے اتے چڑھ کے تے کسے نہیں تکیا
ککراں دے اولھے ہو کے سبھ توں اکلیاں ٭ اج انجھ پنڈ دے میں کولوں لنگھ چلیاں
جیویں کوئی کسے گلستان کولوں لنگھدا۔

ترجمہ:
آج میں اپنے اس گاؤں کے پاس سے گزرکر جا رہا ہوں۔ جہا ں سے کبھی میرا جانے کو جی نہیں کرتا تھا۔ ایک ایسی جگہ جہاں ماضی میں آنے کے بہانے ڈھونڈتا تھا۔ سچی بات یہ ہے کہ کام تو کوئی نہیں ہوتا تھا لیکن اصل اس کا عذر تمہاری ذات تھی۔ اس گاؤں کو میں ایک زیارت کا درجہ دیتا تھا۔ اس کا نام کتنا خوبصورت تھا۔ اس کا نام سن کر جسم میں جان اور اس کی دید سے آنکھوں میں ٹھنڈک سی پڑ جاتی تھی۔ دور سے اس کے درختوں کو دیکھ کر پوری طرح تھکن کواتر جاتی۔

ایسا لگتا تھا جیسے ان کی شاخیں مجھے قریب آنے کا اشارہ دے رہی ہوں۔ ان کے سائے تلے کھڑاہونا ایک عجیب مزا دیتا تھا۔ لیکن آج کچھ بھی مجھے ان کی طرف کھینچ نہیں رہا اور نہ ہی مجھے گاؤں سے آنے والی ہوا کی محبت کا لمس محسوس ہوتا ہے، کیونکہ اب کوئی بھی مجھ سے پیار سے ملنے والا اب یہاں نہیں ہے۔ کوئی بھی چھت پر چڑھ کر میری راہیں نہیں دیکھ رہا ہے۔ کیکر کے درختوں کے پیچھے چھپ کر تنہا میں اس گاؤں سے گزر رہا ہوں گویا یہ قبرستان ہے گاؤں نہیں۔ )۔۔۔

پروفیسر شریف کنجاہی
 

سیما علی

لائبریرین
اج تک مینوں یاد ہے تیرا، ملنا جاندی واری ٭ اکھ وچ سکاں، دل وچ سکاں، لوں لوں دے وچ سکاں
لا لا بلھیاں دے نال بلھیاں، ہکاں دے نال ہکاں ٭ لام تے جاندی واری، جد ونڈیاں سن چھکاں
دو دلاں دے جذبیاں دی اوہ سوڑ، اوہ سوڑ آپ مہاری ٭ اج تک مینوں یاد ہے تیرا، ملنا جاندی واری
ڈونگھے ساہ لے لے کے تے اکھیاں وچ اکھیاں پانا ٭ اکھیاں وچ اکھیاں پاپا کے، تانگھاں نوں ہور جگانا
نکے نکے ہٹکورے بھر بھر دسنی بے قراری ٭ اج تک مینوں یاد ہے تیرا، ملنا جاندی واری
سنیا مک پئیے ہون پینڈے، سنیا مک پئیاں ہین لاماں ٭ آماہی جھب آ، میں منیاں ہویاں کئی سلاماں
نین پکا لئے تیرا راہ تک تک کے اساں غلاماں ٭ آ ماہی ہن بھاری لگدی، اے برہا دی کھاری
اج تک مینوں یاد ہے تیرا، ملنا جاندی واری

(ترجمہ۔ مجھے آج تک تمہارے محاذ جنگ پر جاتے ہوئے تم سے آخری ملاقات یاد ہے جب میری آنکھوں میں اداسی۔ دل میں اداسی اور میرے روم روم میں اداسی تھی۔ رخصت ہوتے سمے ہم ہونٹوں سے ہونٹ اور چھاتی سے چھاتی ملا کے بیٹھے ہوئے تھے۔ ہم دونوں کے دلی جذبات اور ان کا بار بار گبھرانا بھی مجھے آج تک یاد ہے۔ وہ ہمارا گہرے سانس لے لے کر آنکھوں سے آنکھیں ملانا اور پھر آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر سوئے ہوئے جذبات کو جگانا۔ چھوٹے چھوٹے سانس لے کر اپنی بے قراری ظاہر کرنا مجھے آج تک یاد ہے۔ میرے ماہی میرے سائیں اب تو فاصلے سمٹنے والے ہیں، چونکہ سنا ہے کہ جنگ اب ختم ہو گئی ہے۔ اب تم جلدی گھر واپس آ جاؤ میں نے تمہاری سلامت واپسی کے لئے منتیں مان رکھی ہیں۔ تمہاری راہیں دیکھ دیکھ کر اب میرے دیدے تھک گئے ہیں۔ میرے ماہی اب یہ جدائی کا وقت بہت بھاری لگ رہا ہے، اب جلدی گھر آ جاؤ۔ )

پروفیسر شریف کنجاہی
 

سیما علی

لائبریرین
تیرل پنڈا پوری توت دی، تیری لگراں ورگی باہناں ٭ تیرے بلھ نے پھل کریر دے، تیرا جوبن ون دی چھاں
ایہہ چھاواں سدا نہ رہنیاں، رہے سدا اوس دا ناں ٭ اسیں رب سببیں گورئیے، آنکلے ایس گراں
اساں جھٹ دوپہر گزارنی، اساں بہتا نہیں پڑا ٭ اساں پنڈ نہ پانے جوگیاں، اساں مل نہ بہنی تھاں
کس پکے پا کے بیٹھنا، ایہہ دنیا اک سراں ٭ تیرے جوبن وانگوں گورئیے، اسیں کل مسافر ہاں

(ترجمہ۔ اس نظم میں وہ دنیا کی بے ثباتی کو بیان کرتے ہیں کہ یہ دنیا عارضی ہے یہاں سب چلے جائیں گے دائم رہنے والی ذات صرف اس رب کی ہے۔ گورئیے، تیرا بدن توت کے درخت کے تنے جیسا خوبصورت ہے اور تمہاری باہیں اس کی شاخوں جیسی گدرائی ہوئی ہیں۔ تیرے ہونٹ کریر کے پھولوں کی طرح خوبصورت ہیں ( کریر دیہات میں چھوٹی پہاڑیوں پر اگنے والا ایک خودرو پودا ہے جس پر سرخ رنگ کے چھوٹے چھوٹے بہت خوبصورت پھول لگتے ہیں ) یہ چھاؤں عارضی ہے صرف اللہ تعالی کا نام ہمیشہ رہنے والا ہے۔
پروفیسر شریف کنجاہی
 

سیما علی

لائبریرین
رنگا رنگ نے کپاہ دے پھل وے ٭ کدے بخت نہ وکدے مل وے
لیندے نہ خرید! پر جیویں ہانیاں ٭ کرئیے تے کرئیے، کی وے ہانیاں ٭ کرن نہ دندے اچی سی وے ہانیاں
ہنجھو چندرے نے پیندے ڈلھ وے ٭ کدے بخت نہ وکدے مل وے
ہتھ اپنے چ اپنی ڈور نہیں ٭ جہدے ہتھ وچ، اس تے زور نہیں ٭ لکھی دھر دی تے ہوندی ہور نہیں
لکن ہفئیے پئے گھل گھل ہانیاں ٭ رنگا رنگ نے کپاہ دے پھل ہانیاں
مٹی ڈھوئی کسے چک پھیرے ٭ کسے وگ سیالاں دے چھیڑے ٭ جدوں بخت نہ ہون چنگیرے
راں نیلیاں جاندیاں بھل وے ٭ رنگا رنگ نے کپاہ دے پھل وے ٭ کدے بخت نہ وکدے مل وے

(ترجمہ۔ اس نظم میں وہ یہ سبق دیتے ہیں کہ مقدر کبھی خریدے نہیں جاتے اور نا ہی وہ بازار میں بکتے ہیں۔ کپاس کے پھول بہت خوبصورت رنگوں کے ہیں لیکن نصیب کبھی قیمتاًبکتے نہیں ہیں۔ اگر وہ بکتے ہوتے تو ہم انھیں خرید نہ لیتے مگر افسوس ہم ایسا کر نہیں سکتے۔ ہماری اس بے کسی پر اوپر والاہمیں بولنے بھی نہیں دیتا۔ ہماری آنکھوں سے آنسو بے اختیار نکل آتے ہیں کہ نصیب کبھی قیمتاً بکتے نہیں ہیں۔ ہمارے ہاتھ میں ہمارے مقدر کی ڈور نہیں ہے اور جس کے ہاتھ میں یہ ڈور ہے اس پر ہمارا بس نہیں چلتا۔

جو ہمارے نصیب میں لکھاگیا ہے وہ بدل نہیں سکتا۔ ہم ایسے ہی انھیں تبدیل کرنے کی کوشش میں ہیں۔ دنیا میں کسی نے مقدر بدلنے کے لئے مٹی ڈھوئی جیسے مہینوال نے سوہنی کے باپ کی خدمت کی۔ کسی نے سیالوں کے جانور چرائے، رانجھے نے ہیر کو حاصل کرنے کے لئے اس کے باپ کی بھینسیں چرائیں۔ جب مقدر میں نہ لکھا ہو تر مرزا صاحباں کو پانے کے بعد بھی کھو دیتا ہے کیونکہ ان تینوں کے مقدر میں جدائی ہی لکھی تھی۔ کپاس کے پھول بہت خوبصورت رنگوں کے ہیں لیکن مقدر کبھی بکتے نہیں ہیں۔ )۔۔۔۔۔۔
 

Khursheed

محفلین
تقدیر تاں اپنی سوکن سی تدبیراں ساتھوں نا ہوئیاں
کیا لکھیا کسے مقدر سی ہتھاں دیاں چار لکیراں دا​
 
تقدیر تاں اپنی سوکن سی تدبیراں ساتھوں نا ہوئیاں
کیا لکھیا کسے مقدر سی ہتھاں دیاں چار لکیراں دا​

شو کمار بٹالوی ہوراں دی شعر نال کسے واھوا ای ظلم کیتا اے۔


تقدیر تاں آپنی سوکن سی
تدبیراں ساتھوں نہ ہوئیاں
نہ جھنگ چُھٹیا نہ کن پاٹے
جُھنڈ لنگھ گیا انجے ہیراں دا

میرے گیت وی لوک سنیندے نیں
نالے کافر آکھ سدیندے نیں
میں درد نوں کعبہ کہہ بیٹھا
رب ناں رکھ بیٹھا پِیڑاں دا
 

Khursheed

محفلین
شو کمار بٹالوی ہوراں دی شعر نال کسے واھوا ای ظلم کیتا اے۔


تقدیر تاں آپنی سوکن سی
تدبیراں ساتھوں نہ ہوئیاں
نہ جھنگ چُھٹیا نہ کن پاٹے
جُھنڈ لنگھ گیا انجے ہیراں دا

میرے گیت وی لوک سنیندے نیں
نالے کافر آکھ سدیندے نیں
میں درد نوں کعبہ کہہ بیٹھا
رب ناں رکھ بیٹھا پِیڑاں دا

بعض و اوقات ادھورے علم کی بنیاد پر بندہ اپنے آپ کو صحیح اور دوسرے کو غلط سمجھ کر
تنقید کرکے خود کو تسکین پہنچاتا ہے
آپ اس گیت کو پورا پڑھیں اور پھر دیکھیں کہ صحیح کیا ہے مصرعہ اوپر نیچے ہو سکتا ہے لیکن یہ دونوں مصرعے ایک ہی گیت کے ہیں اور ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں

محبتوں-کے-شاعر-شِو-کمار-بٹالوی-کا-یومِ-پ/اردوئے معلیٰ | جدید کلام اردو ادب اثاثہ
 
Top