پنجابی جملے تے اونہاں دا ترجمہ ( پنجابی جملے اور ان کا ترجمہ )

الف نظامی

لائبریرین
پُھلاں دی خوشیاں مات پئیاں، اوہ طور نہ رہے گلزاراں دے ( صوفی غلام مصطفی تبسم)
پھولوں کی خوشیاں مات ہو گئیں ، وہ طور نہ رہے گلزاروں گے

اُس پرت نہ ساراں لئیاں ، ساڈے انگ تریڑاں پئیاں ( اقبال قیصر )
اس نے مڑ کر خبر نہ لی ، ہمارے جسم پر دراڑیں پڑ گئیں
 

الف نظامی

لائبریرین
ڈنمارک دے ماہر لسانیات راسک Rask Musqas نے ایس پاسے دھیان پوایا پئی زباناں دی سانجھ لئی صرف لفظاں نوں ای نہیں ویکھنا چاہیدا سگوں دوہاں زباناں دی گرائمر یا قواعد نوں ای مکھ رکھنا چاہیدا اے تدوں ای کسے سٹے تیکر اپڑیا جاسکدا اے۔

ڈنمارک کے ماہر لسانیات راسک Rask Musqas نے اس طرف توجہ دلائی کہ زبانوں کے باہمی تعلق کے لیے صرف لفظوں کو ہی نہیں دیکھنا چاہیے بلکہ دو زبانوں کی گرائمر یا قواعد کو ہی سامنے رکھنا چاہیے تب ہی کسی نتیجے تک پہنچا جا سکتا ہے۔
 

الف نظامی

لائبریرین
تقابلی لسانیات دے ماہراں دا خیال اے پئی انڈو یورپین زباناں دے کئی مڈھلے شبد اِکو طراں دے مادیاں وچوں پُھٹے ہوئے نیں۔ ایس دا کارن ایہہ وے کہ ایہہ اِکو ای قبیلے دیاں زباناں نیں۔
تقابلی لسانیات کے ماہرین کا خیال ہے کہ انڈو یورپین زبانوں کے کئی ابتدائی الفاظ ایک ہی طرح کے مصادر سے نکلے ہوئے ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یہ ایک ہی گروہ کی زبانیں ہیں۔
 

الف نظامی

لائبریرین
انج لگدا سی پئی پھلاں دا اِک گلدستہ اے جیہدی سُگَنْدھ دماغ نوں مہکاندی پئی ہووے۔
ایسے لگتا تھا کہ پھولوں کا ایک گلدستہ ہے جس کی خوشبو دماغ کو معطر کر رہی ہو۔
 
آخری تدوین:

رضوان راز

محفلین
تَرِنْجَن
پنجابی: اک ویلا سی جَدوں پِنڈ دِیاں کُڑیاں رَل کے چرخہ کتدِیاں تے ہسدِیاں کھیڈدِیاں سَن۔اوس تھاں نوں ترنجن کہندے سَن۔
اردو: ایک وقت تھا جب گاوں کی لڑکیاں مل کر چرخہ کاتتی اور ہنستی کھیلتی تھیں۔ اُس جگہ کو ترنجن کہتے تھے۔
بیڑی دا پُور تے ترنجن دیاں کڑیاں سبب نال ہون اکٹھیاں
 

الف نظامی

لائبریرین
آدمیاں نوں آدمی ملدے نیں ، کھوہاں نوں کھوہ نہیں ملدے
بندہ مِلدا گلدا چَنگا لگدا اے کیوں جے اوس پھیر مُڑ کے اِک دُوجے نُوں ملنا ہوندا اے تے دنیا دے کم اِنج اِی چَلدے نیں ، کُھوہ تے اِکو تھاں تے رہندے نیں۔
معاشرے وچ اک دوجے نال تعلقات پیدا کرن دی تعلیم اے

سوما: ساڈے اکھان : سو سیانے اِکّو مت ، موئف ڈاکٹر شہباز ملک ، نواں ایڈیشن ،صفحہ 26، عزیز بک ڈپو ، اُردو بازار لاہور

آدمی ، آدمی سے ملتا ہے ، کنویں کو کنواں نہیں ملتا۔
آدمی دوسروں سے ملتا جلتا اچھا لگتا ہے کیونکہ اس نے پھر دوبارہ ایک دوسرے سے ملنا ہوتا ہے اور دنیا کے کام اسی طرح چلتے ہیں۔ کنویں تو ایک ہی جگہ قائم رہتے ہیں۔
معاشرے میں ایک دوسرے سے تعلقات بنانے کی تعلیم ہے۔

ماخذ: ساڈے اکھان : سو سیانے اِکّو مت ، موئف ڈاکٹر شہباز ملک ، نواں ایڈیشن ،صفحہ 26، عزیز بک ڈپو ، اُردو بازار لاہور
 

الف نظامی

لائبریرین
جے انسان سوسائٹی دا مطالعہ کرے تاں اوہنوں پتہ چلے گا پئی اوہ کیہڑی شے اے جیہڑی اِک دُوجے نُوں نیڑے لیاوندی اے ، میلدی (مےلدی) اے۔ سوسائٹی تے جنگل دا راز اِک گہرے مطالعے دے بعد کُھلدا اے۔ محبت نال انسان تے رُکھ دا نیڑا لبھدا اے۔
ایہناں وچ کیہڑیاں شیواں اِک جیہیاں نیں تے کیہڑیاں ہور طرح دیاں؟
چہرے ، رنگ ، اکھاں ، زندگی نامہ۔۔۔
رُکھاں دا اک زندگی نامہ ہوندا اے۔۔۔
تے انسان دا وی۔۔۔
میلاس کرنو
چیکو سلاوکیہ
سوما: ناول: دوابہ ، افضل احسن رندھاوا ، صفحہ 9


اگر انسان معاشرے کا مطالعہ کرے تو اس کو پتہ چلے گا کہ وہ کیا شے ہے جو ایک دوسرے کو قریب لاتی ہے ، سمیٹتی ہے۔ معاشرہ اور جنگل کا راز ایک گہرے مطالعے کے بعد کُھلتا ہے۔ محبت سے انسان اور درخت کا قرب ملتا ہے۔ ان میں کونسی چیزیں ایک جیسی ہیں اور کونسی مختلف؟
چہرے ، رنگ ، آنکھیں ، زندگی نامہ ۔۔۔
درختوں کا ایک زندگی نامہ ہوتا ہے۔۔۔
اور انسان کا بھی۔۔۔
میلاس کرنو
چیکو سلاوکیہ
 

الف نظامی

لائبریرین
فارسی تے پنجابی دے لسانی رابطیاں دا ذکر کردیاں ( کردےآں ) ، بغیر کسے غور و فکر دے سانوں احساس ہوندا اے کہ صدیاں توں ایہہ رابطے بڑے گوڑھے رہے ہون گے۔ ہور تے ہور آپ لفظ پنجاب وی فارسی دے ای دو لفظاں دا مجموعا اے۔
سوما: پنجابی فارسی لسانی رابطے ، جمیل احمد پال
فارسی اور پنجابی کے لسانی رابطوں کا ذکر کرتے ہوئے بغیر کسی غور و فکر کے ہمیں احساس ہوتا ہے کہ صدیوں سے یہ رابطے بہت گہرے رہے ہوں گے۔ اور تو اور خود لفظ پنجاب بھی فارسی کے دو لفظوں کا مجموعہ ہے۔
 
Top