پاکستانی پی ایچ ڈی: خطوط ِغالب سے خلائی مشن تک

جاسم محمد نے 'سائنس اور ٹیکنالوجی' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 22, 2020

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    23,862
    پاکستانی پی ایچ ڈی: خطوط ِغالب سے خلائی مشن تک
    ہمارے ڈاکٹرز، انجینئرز، ریاضی دان، ماہرین معاشیات، فلسفی، ادیب اگر عالم انسانیت کی فکر چھوڑ کر صرف پاکستان کو درپیش مسائل کو ہی محور بنا کر ہر تحقیق کریں، سائنسی پیپر لکھیں، حل نکالیں، جواب کھوجیں تو ان کی بڑی خدمت ہوگی۔

    عفت حسن رضوی مصنفہ، صحافی @IffatHasanRizvi
    جمعرات 20 اگست 2020 6:15
    [​IMG]
    (روئٹرز)

    ’اچھا ہوا کہ نرگس ماول والا پاکستان سے امریکہ چلی گئیں، وہاں جا کر ایم آئی ٹی کی ڈین بن گئیں۔ یہاں ہوتیں تو ماتحت ریسرچرز اور سکالرز نے ان کے کردار سے لے کر مذہب تک کچھ نہیں بخشنا تھا۔ وہ یہاں لیب بنا لیتیں تو فنڈز کے لیے سفارشات بھیجتی رہ جاتیں، سپروائزر بنتیں تو مرد سکالرز کو ان کی سائنسی منطقوں پر ’عورتوں کے پاگل پن‘ کا شبہ رہتا۔‘

    میں جینیات کے ایک پاکستانی سائنس دان سے بات کر رہی تھی۔ وہ مسلسل کہے جا رہے تھے کہ آپ جو کالم لکھنا چاہتی ہیں اسے پڑھے گا کون، پڑھنے والی نسل تو اب معدوم ہوگئی۔

    میرا ایک عمومی سا سوال ہے کہ پاکستان کے ہر بڑے شہر میں قائم جامعات پی ایچ ڈی کی سند جاری کر رہی ہیں۔ ڈاکٹریٹ کے تحقیقی مقالوں کی کئی گز لمبی اشاعت ہو رہی ہیں۔ حکومت کروڑوں روپے مالیت کی ریسرچ گرانٹس جاری کرتی ہے، کتنی ہی ریسرچ لیبارٹریز ہیں جو دوا دارو سے لے کر خلا کے رازوں تک کو جاننے کے لیے بنائی گئیں مگر جب بھی کسی مسئلے کا سائنسی حل ڈھونڈنا ہو، کسی نئے سائنسی ایجاد یا ٹیکنالوجی کی بات ہو تو پاکستان کا نام شاذ و نادر ہی آتا ہے۔

    کیا وجہ ہے؟ کیا تحقیق نہیں ہو رہی یا تحقیق تو ہو رہی ہے مگر معیاری نہیں؟ یا پھر معیاری تحقیق بالکل ہو رہی ہے لیکن اس تحقیق کو ایک ریسرچ پیپر سے نکال کر عوام الناس کے فائدے تک لانے میں جتنے مرحلے درکار ہے ہم ان تمام مرحلوں میں ناکام ہیں۔

    ایک خبر آئی کہ کراچی میں مالیکیولر سائنس میں پی ایچ ڈی کی طالبہ نادیہ اشرف نے خودکشی کر لی۔ وہ پچھلے سولہ برس سے پی ایچ ڈی کر رہی تھیں۔ ان سولہ برسوں میں کسی سطح پر یہ بات تشویش نہیں سمیٹ سکی کہ آخر ایک طالبہ تحقیقی مقالے پر دو دہائیاں کیوں لگا رہی ہے اور اس کا نتیجہ نکل کیوں نہیں رہا، جبکہ اسے مالی گرانٹ مل رہی ہے۔

    میں نے شدید سائنسی موضوعات میں پی ایچ ڈی کرنے والے کچھ سکالرز سے بات کی، ایک نے کہا کہ پی ایچ ڈی میں دس بارہ سال لگ جانا تو عام سی بات ہے۔ یہاں تو لیبارٹری کا کوئی پرزہ خراب ہو جائے تو اسے ٹھیک ہونے اور ریسرچ دوبارہ شروع کرنے میں چھ چھ ماہ نکل جاتے ہیں۔

    ایک اور سکالر کہنے لگے کہ تحقیق تو کر لیں مگر زیادہ تر طالب علموں کو ایسے ریسرچ سپروائزر ملتے ہیں جنہیں یا تو اپنے نام سے ریسرچ پیپر سائنسی جرنلز میں چھپوانے کا خبط ہوتا ہے یا پھر ان کی مطلوبہ موضوع پر گرفت بہت کمزور ہوتی ہے۔

    سائنس کے شعبوں میں ہونے والی پی ایچ ڈی تحقیق کامیاب ہو جائے تو اس کا بام عروج یہ ہوتا ہے کہ سائنس دان اپنی تحقیق کا پیٹنٹ حاصل کر لیتا ہے۔ فرض کریں مالیکیولر سائنس میں اگر کوئی پی ایچ ڈی محقق برین ٹیومر کی کوئی نئی دوا دریافت کر لیتا ہے تو اس کی زیادہ سے زیادہ اڑان یہ ہوگی کہ اس کے ڈرگ ڈیزائن کو سرٹیفائیڈ کر دیا جائے گا۔ لیکن اس دوا کے کلینکل ٹرائلز، انسانی ٹرائلز، اس کی مینوفیکچرنگ، مارکیٹنگ یہاں تک کہ عوام تک پہنچ دیوانے کا خواب ہے۔

    ہمارے ایک عزیز جرمنی سے خلائی سائنس کی گتھیاں سلجھانے کے طریقے سیکھ کر آئے۔ اس خلائی سائنس دان کو پاکستان کے سیٹلائٹ پروگرام میں ملازمت ملی۔ میں نے ان کے شعبے کا حال پوچھا کیونکہ یہ وہ شعبے ہے جس کی میڈیا رپورٹنگ نہ ہونے کے برابر ہے۔ کہنے لگے ملازمت نہیں ملامت کر رہا ہوں کہ واپس کیوں آگیا۔

    ہر تحقیق ضروری نہیں کہ کوئی فائدہ دے یا انسانی استعمال کی چیز ہی ایجاد یا دریافت کرے۔ کچھ تحقیقی کام بڑی ایجادوں کی چھوٹی سی بنیاد بنتے ہیں۔ کچھ مزید تحقیق کے در وا کرتے ہیں۔ لیکن اس کا کیا کیا جائے کہ اگر کوئی تحقیق کئی برسوں پر محیط ہو مگر اس کا ثمر ندارد، اس کا نتیجہ مبہم، اس کا اثر بالکل صفر۔

    ہمارے ڈاکٹرز، انجینئرز، ریاضی دان، ماہرین معاشیات، فلسفی، ادیب اگر عالم انسانیت کی فکر چھوڑ کر صرف پاکستان کو درپیش مسائل کو ہی محور بنا کر ہر تحقیق کریں، سائنسی پیپر لکھیں، حل نکالیں، جواب کھوجیں تو ان کی بڑی خدمت ہوگی۔ جیسے کہ پاکستان میں شہری آبادی کا انتظام، سمندر اور زمین میں چھپے معدنی ذخیرے، ماحولیاتی تبدیلی، ہمارے مقامی پیمانوں پر مبنی ڈیٹا سائنس یا پھر ہمارے لوگوں کی ڈی این اے پروفائلنگ، یا بچوں میں محدود جسمانی و ذہنی نشوونما۔

    کچھ عرصے قبل سابق چئیرمین ایچ ای سی ڈاکٹر مختار احمد سے ایک تفصیلی ملاقات رہی۔ میرا سوال اکیڈمک نہیں عامیانہ سا تھا کہ اتنے پی ایچ ڈی سکالرز ڈاکٹرز بن رہے ہیں لیکن تحقیق کا شعبہ ہمارا منہ چڑاتا ہے۔

    ڈاکٹر صاحب کا شکوہ بھی بجا تھا کہنے لگے سوشل سائنس کے موضوعات جیسے کے ادب، مذہب، فلسفہ، میڈیا، سیاست، تاریخ میں اکثر پی ایچ ڈی تحقیق عوامی سطح پر بےاثر رہتی ہے۔ ہر دوسرے تیسرے طالب علم کو اقبال کی شاعری، غالب کے خطوط پر تحقیق مقصود ہو تو کوئی کیا کہے؟

    فزکس کے استاد پرویز ہود بھائی تو پاکستان کے پروفیسرز مافیا اور ناقص تحقیقی نتائج پر کافی کھل کر لکھ چکے ہیں، مگر اپنے محاسبے کو بھلا کون تیار ہوتا ہے۔ اسی لیے میں نے سوچا ایک مشورہ میں بھی دیتی جاؤں کہ ان تحریروں سے گر کچھ نہیں بدلتا تو کوئی ان بےثمر، بےاثر پی ایچ ڈیوں کے موضوع پر ہی پی ایچ ڈی کر لے، کسی کا تو بھلا ہوگا۔
     
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اس کالم کی اکثر باتیں درست ہیں اور تحریر بھی نیک نیتی ہی سے لکھی گئی ہے لیکن یہ عجب بے جا سا شکوہ ہے۔ اب ایک ماہر ریاضیات، یا فزکس یا میڈیسنز کا طالب عالم اقبال کی شاعری یا غالب کے خطوط پر کیوں پی ایچ ڈی کرے گا؟ دوسری طرف ایک ادب اور فلسفے کا طالب علم اقبال اور غالب کی شاعری اور ذہنی رویوں پر ہی تحقیق کرے گا کہ برین ٹیومر کی دوا بناتا پھرے گا؟ ظاہر ہے اپنی اپنی فیلڈ ہی میں ریسرچ کریں گے! یہ جملہ حب ِ علی سے زیادہ بغض معاویہ کا شاخسانہ زیادہ لگتا ہے اور آپ نے بھی اسے سرخ اور مجھے ٹیگ کر کے یہی کام کیا ہے! :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,855
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    میں بھی سوچ رہا تھا کہ اس جملے کو خاص طور پر سرخی پوڈر کیوں لگایا گیا ہے۔ :LOL:
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    کسی نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ بکھرئے ہوئے دفاتر مقالہ جات ہیں!
    [​IMG]
     
    • غمناک غمناک × 2
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    23,862
    شاید اس جملے کی شادی ہو :)
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  6. سین خے

    سین خے محفلین

    مراسلے:
    2,324
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    میرے خیال سے مصنفہ نے غیر اہم مسائل اور اسباب کا ذکر کیا ہے۔

    ڈان کا یہ آرٹیکل کافی سال پہلے پڑھا تھا۔
    Why Pakistanis are among the least innovative in the world - Tech - DAWN.COM
    سائنس کے شعبے میں ترقی نہ ہونے کے میرے نزدیک یہ اسباب ہیں۔ کم جی ڈی پی، غیر معیاری تعلیمی کتب اور طریقہ کار، incompetency، نا انصافی، خیانت، کاہلی اور اپنی نالج اپ ڈیٹ نہ کرنا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  7. سین خے

    سین خے محفلین

    مراسلے:
    2,324
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    جہاں تک بارہ سال پی ایچ ڈی میں لگ جانے کی بات ہے تو میرے خیال سے ایسا کم ہی ہوتا ہے زیادہ تر تین چار سالوں میں مکمل ہو جاتا ہے۔

    محمد سعد بھائی سے اور کنفرم کیا جا سکتا ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  8. محمد سعد

    محمد سعد محفلین

    مراسلے:
    2,855
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bored
    جن پر پورے گھر کی معاشی ذمہ داری ہو، ان کے کئی کئی سال اضافی لگ جانا معمول کی بات ہے۔ اگرچہ اس پر بھی حدود ہیں کہ ایچ ای سی کی جانب سے ڈگری کو کس حد تک کھینچنے کی گنجائش ہے۔ میرے خیال میں تو ایسا ممکن نہیں ہے کہ کسی پر آپ پورے گھر کی کفالت کی ذمہ داری بھی ڈالیں اور پھر اس سے ورلڈ کلاس ریسرچ کی توقع بھی کریں۔ ترقی یافتہ ممالک میں پی ایچ ڈی کے لیے اچھے وظائف مقرر کیے جاتے ہیں جو بدقسمتی سے پاکستان جیسے غریب ملک میں شاید ممکن نہ ہوں۔ جہاں گرانٹس دی بھی جاتی ہیں تو وہ پی ایچ ڈی سکالر کو فکر معاش سے آزاد کرنے کے لیے نہ صرف ناکافی بلکہ مضحکہ خیز حد تک کم ہوتی ہیں۔ لیکچرر کی ملازمت بھی عموماً کافی نہیں ہوتی کیونکہ اکثر کو وزٹنگ پر نہایت کم تنخواہ پر رکھا جاتا ہے۔
    نادیہ اشرف کی خودکشی کے معاملے میں بھی ایکسپریس اردو کا یہ مضمون کچھ روشنی ڈالتا ہے۔
    طالبہ کی خودکشی، استاد کا قتل - ایکسپریس اردو
    "بظاہر سب کچھ ٹھیک ہونے کے باوجود، نادیہ اشرف کو گھریلو محاذ پر کچھ سنگین مسائل بھی درپیش تھے۔ انڈیپنڈنٹ اردو کی نامہ نگار، رمیشہ علی کی رپورٹ کے مطابق، نادیہ کے والد 2007 میں لاپتا ہوگئے اور بہت ڈھونڈنے پر بھی نہ مل سکے۔ اپنے والد سے بہت قریب ہونے کی وجہ سے نادیہ کو اس سانحے کا شدید صدمہ ہوا۔ علاوہ ازیں، اب ان پر تحقیق کے ساتھ ساتھ گھریلو کفالت کی ذمہ داری بھی آن پڑی تھی۔"

    یہ مسائل واقعی زیادہ بڑے ہیں لیکن جو لوگ خود سے معیاری کام کرنا چاہتے ہیں، ان کے لیے بہرحال کئی طرح کی رکاوٹیں موجود ہیں۔ باقی چونکہ معیاری کام کرنے کے خواہشمند تعداد میں ہیں ہی کم تو اثر انگیزی میں زیادہ بڑے عوامل وہی ہیں جن کا آپ نے ذکر کیا۔ اگرچہ ہر کیس کو محض انہی کی روشنی میں بھی نہیں دیکھا جا سکتا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1

اس صفحے کی تشہیر