1. اردو محفل سالگرہ پانزدہم

    اردو محفل کی پندرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

'میرے پاس تم ہو' کی آخری قسط سینما گھروں میں بھی دکھانے کا اعلان

جاسم محمد نے 'سنیما، ٹی وی اور تھیٹر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 16, 2020

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    21,569
    'میرے پاس تم ہو' کی آخری قسط سینما گھروں میں بھی دکھانے کا اعلان
    انٹرٹینمنٹ ڈیسکاپ ڈیٹ 15 جنوری 2020
    [​IMG]
    پوسٹ میں بتایا گیا کہ پاکستان کی تاریخ کے سب سے بڑے ڈرامے کا اختتام ہونے جارہا ہے اور اس کی آخری قسط اے آر وائے ڈیجیٹل کے ساتھ ساتھ سینما گھروں میں بھی نمائش کے لیے پیش کی جائے گی۔

    خیال رہے کہ 'میرے پاس تم ہو' کی کہانی خلیل الرحمٰن قمر نے تحریر کی جبکہ اس کی ہدایات ندیم بیگ نے دی ہے۔

    ڈرامے میں ہمایوں سعید، عائزہ خان اور عدنان صدیقی نے مرکزی کردار نبھائے جبکہ شیث گل، حرا مانی، انوشے عباسی، سویرا ندیم، مہر بانو اور سید محمد احمد نے اہم کردار نبھائے۔

    اس ڈرامے کی کہانی ہمایوں سعید کے کردار 'دانش' سے شروع ہوتی ہے جو اپنی بیوی مہوش (عائزہ خان) سے بےحد محبت کرتا ہے، ان دونوں کا ایک بیٹا رومی (شیث گل) بھی ہے۔

    جہاں دانش اپنی فیملی سے بےحد محبت کرتا ہے اور ہر حال میں خوش رہنے کی کوشش کے ساتھ ایک عام زندگی گزارنے کا خواہشمند ہے وہیں مہوش امیر ہونے کی خواہشمند ہے اور اپنی دوست (مہر بانو) سے پیسے ادھار لیتی رہتی ہے۔

    ایک روز مہوش کی ملاقات مہر بانو کے بھائی کے باس شہوار (عدنان صدیقی) سے ہوتی، جس کے بعد ان کی ملاقاتوں کا سلسلہ بڑھتا اور وقت گزرنے کے بعد شہوار مہوش کو اپنے دفتر میں کام کرنے کی آفر دیتا جسے مہوش قبول کرلیتی۔

    اس ہی دوران شہوار اور اس کی دولت سے متاثر ہونے والی مہوش اپنے شوہر دانش کو دھوکا دیتی اور اس سے طلاق لےکر بغیر شادی شہوار کے ساتھ زندگی گزارنا شروع کردیتی۔

    بعدازاں ایک روز جب یہ دونوں شادی کرنے ہی جارہے تھے تب شہوار کی پہلی اہلیہ (ماہم) امریکا سے پاکستان واپس آجاتی اور شہوار کو گرفتار کروا کر مہوش کو بے عزت کر کے گھر سے نکال دیتی ہیں۔

    جس کے بعد مہوش کو اپنی غلطی کا احساس ہوتا اور وہ ہمایوں سعید سے معافی مانگ کر اس کے پاس واپس جانے کی کوشش کرنے لگتی ہیں۔

    دوسری جانب ہمایوں سعید اپنے بیٹے کو اس دوران بورڈنگ اسکول بھیج دیتا ہے جہاں اس کی ملاقات اس کی ٹیچر ہانیہ (حرا مانی) سے ہوتی ہے، جو بعد میں دانش کو پسند کرنے لگتی ہیں۔

    دانش اپنی سرکاری نوکری چھوڑ دیتا ہے اور اپنا گھر فروخت کر کے رقم اسٹاک ایکسچینج میں لگا کر شہوار انڈسٹری کے شیئرز خرید لیتا ہے جس سے اسے خوب کامیابی ملتی ہے اور اس کے دن بدل جاتے ہیں جس کے بعد وہ اپنے دوست کے ساتھ مل کر باقاعدہ کاروبار شروع کردیتا ہے۔

    جہاں مداحوں کو اس ڈرامے کی آخری قسط کا بےصبری سے انتظار ہے وہیں اس بات کا تجسس بھی بڑھ رہا ہے کہ ڈرامے کے آخر میں وہ کون سے دو کردار ہیں جن کا قتل ہوگا۔
    خیال رہے کہ یہ خلیل الرحمٰن قمر اور ندیم بیگ کا یہ دوسرا ڈراما ہے جسے سینما گھروں میں بھی دکھایا جائے گا۔

    اس سے قبل 2013 میں سامنے آیا ڈراما 'پیارے افضل' کی آخری قسط بھی سینما گھروں میں نمائش کے لیے پیش کی گئی تھی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    جاسم محمد صاحب، کیا آپ نے یہ ڈرامہ دیکھا ہے؟ کیا آپ کو یہ ڈرامہ اس لیے پسند ہے کہ یہ اے آر وائے کا ڈرامہ ہے؟
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    21,569
    پاکستانی ڈرامے عموما پسند نہیں۔ یہ والا غیرمعمولی مقبولیت کی وجہ سے دیکھ رہا ہوں بلکہ گھر میں "زبردستی" بٹھا کر دکھایا جا رہا ہے :)
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    چند دن پہلے مجھے بھی پہلی بار علم ہوا کہ میری بیوی اور بچے یہ ڈرامہ شوق سے دیکھ رہے ہیں۔ میں نے اس ڈرامے پر ہونے والی تنقید (جس کا آپ ہی کے کسی پوسٹ کردہ تحریر سے علم ہوا تھا) پیش کی تو مجھے "بلاسفمی" کے الزامات کا سامنا کرنا پڑا سو منہ بند رکھنے ہی میں عافیت سمجھی۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    21,569
    پھر تو آپ کو کتاب بینی سے کچھ وقت نکال کر یہ ڈرامہ دیکھ ہی لینا چاہئے۔ اس کی کہانی آپ اور ہم جیسے "معصوم" شوہروں پر ہونے والے گھریلو"مظالم" پر مبنی ہے۔ شاید یہی وجہ ہے کہ یہ غیرروایتی کہانی ڈرامہ کی غیرمعمولی مقبولیت کی وجہ بنی :)
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  6. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اگلے پچاس سو سال میں تو یہ ڈرامہ دیکھنے کا میرا کوئی ارادہ نہیں ہے اس کے بعد زندہ ہوا اور "موڈ" بھی ہوا تو سوچیں گے! :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  7. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    21,569
    اس ڈرامہ میں سیگریٹ اور شراب نوشی کے بھی کئی سین دکھائے گئے ہیں۔ اب شاید آپ کا موڈ بن جائے! :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  8. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    واقعی؟
    اور کیا اس ڈرامے میں سائنس اتنی ترقی کر گئی ہے کہ سگریٹ کا کش ڈرامے کا کردار لگائے اور دھواں ناظرین کے منہ سے نکلے؟
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
  9. سین خے

    سین خے محفلین

    مراسلے:
    2,208
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    چھ سات سال کا بچہ باپ کی دوسری شادی کروا رہا ہے۔ اپنی ٹیچر کو گھٹنا ٹیک کر باپ کے لئے پرپوز بھی کر آیا ہے۔ مجھے تو لگ رہا ہے آخری قسط میں نکاح بھی پڑھا دے گا۔

    اب ہوئی دلچسپی پیدا؟ :p
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  10. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,347
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    یہ سین تو دیکھ لیا تھا ہم نے! اب پتا چلا کہ حاصلِ ڈرامہ یہی سین ہے!!!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  11. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اس "وقوعے" کا مجھے پہلے سے علم تھا (یہیں پڑھا تھا) اور یہی بات میں نے آپ کی بھابھی سے پوچھی تھی، جل بھن کر کہنے لگی کہ بس سارے ڈرامے میں سے تمھیں یہی ڈرامہ یاد رہا۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 6
  12. سید ذیشان

    سید ذیشان محفلین

    مراسلے:
    7,240
    موڈ:
    Asleep
    حاصل ڈرامہ بس وہی ڈائلاگ تھا کہ خود کو بزنس مین کہتے ہو اور پھر بھی دو ٹکے کی لڑکی کے لئے پچاس کروڑ کی پیشکش کی ہے۔
    اس ڈرامے میں ہر ایک کردار سے اسی قسم کے ڈائلاگ بلوانے کی کوشش کی گئی ہے۔ ہزاروں میں سے ایک آدھ تیر نشانے پر لگ ہی جاتا ہے۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
    • متفق متفق × 1
  13. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    21,569
    اس بچے کے مختلف انٹرویوز دیکھ چکا ہوں۔ تمام اینکرز ہر قسم کا لالچ دینے اور باتوں میں بہلانے پھسلانے کے بعد بھی "رومی" سے ڈرامہ کا اختتام نہ اگلوا سکے۔ کہتا ہے ایکٹنگ میں بالکل دلچسپی نہیں، باپ نے زبردستی کروائی۔ بڑے ہو کر سائنسدان بنوں گا۔ :)
     
  14. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    [​IMG]
     
    • زبردست زبردست × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  15. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,209
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    یعنی اس قوم میں ایسے ویلے بھی موجود ہیں جو ایک ڈرامے کی قسط پر بھی خرچہ کر سکتے ہیں۔ یا خود ہی سارے ٹکٹ خرید لیے ہیں ٹیم نے :p
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  16. سید ذیشان

    سید ذیشان محفلین

    مراسلے:
    7,240
    موڈ:
    Asleep
    دو قسطیں۔ جو کہ تقریبا ایک فیچر فلم کے برابر ہیں۔ :D
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  17. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,209
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    مطلب یہ کہ جب فری میں ٹی وی پر آ رہی ہے، تو اس خرچہ کی ضرورت؟ ہاں اگر صرف سینما میں ہی دکھائی جا رہی ہوتی تو سمجھ آتی تھی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 2
  18. سروش

    سروش محفلین

    مراسلے:
    2,198
    موڈ:
    Relaxed
    ٹی وی پر دو ہفتے بعد دکھائی جائے گی جبکہ یو ٹیوب پر بھی اپلوڈ نہیں ہوگی ۔۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 4
  19. سین خے

    سین خے محفلین

    مراسلے:
    2,208
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    رومی نے ایک بہترین میچ میکر کا کردار ادا کیا ہے۔ ذرا سوچئے پاکستانی شوہروں کو کیا ہی اعلیٰ راستہ دکھایا گیا ہے کہ باپ اگر افسردہ ہو اور بیوی سے بیزار ہو تو تو رومی جیسے بچے باپ کے لئے میچ میکنگ کر کے ان کے لئے خوشیوں کا انتظام کر سکتے ہیں۔

    اب ناجانے ہمارے یہاں کے بچوں نے "کتنا سیکھا" لیکن یہ پاکستانی شوہروں کے لئے ایک نئے دور کا آغاز ہو سکتا ہے۔

    ہمارے یہاں خوش قسمتی سے یا بد قسمتی سے بچے ہمیشہ سے ماں والیے ہی ہوتے ہیں۔ چاہے ماں پورا دن بچوں کی دھنائی کرے لیکن ماں کی ایک آہ پر فوراً باپ سے نظریں پھیر لیتے ہیں۔

    اصل میں مصنف کو اس بات کا بھی کمپلیکس ہے کہ بچے کیوں ماں سے چپکے رہتے ہیں۔ رومی کے ذریعے مصنف نے بچوں کو ایک نئی راہ دکھانے کی کوشش کی ہے کہ باپ کے احساسات کو سمجھنے کی کوشش کریں اور باپ کے دل بہلانے کے لئے ہاتھ پیر ماریں۔

    اس طرح مصنف نے صرف عورتوں کی بے وفائی کو اجاگر کرنے کی ہی کوشش نہیں کی ہے بلکہ قوم کے بچوں کو بھی ٹرین کرنے کی کوشش کی ہے۔ یعنی ایک تیر سے دو شکار!

    پی ایس: یہ میرا تجزیہ نہیں ہے۔ یہ کسی اور کا تجزیہ ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • متفق متفق × 1
  20. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,184
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اللہ ایسی اولاد ہر باپ کو دے، اور کم از کم پہلی تین بیویوں میں سے تو ضرور دے تا کہ چار کا خانہ پورا ہو سکے۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3

اس صفحے کی تشہیر