مظلوم شوہر: ساحر لدھیانوی کی غزل میں کچھ تصرف کے ساتھ

شوکت پرویز نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 10, 2017

  1. شوکت پرویز

    شوکت پرویز محفلین

    مراسلے:
    795
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Breezy
    ساحر لدھیانوی کی غزل میں کچھ تصرف کے ساتھ

    ہر قدم مرحلہٗ داروصلیب آج بھی ہے
    جو کبھی تھا وہی شوہر کا نصیب آج بھی ہے

    جگمگاتے ہیں افق پار ستارے لیکن
    زندگی ساتھ میں بیگم کے مہیب آج بھی ہے

    سرِ مقتل جنہیں جانا ہو وہ شادی کر لیں
    سرِ منبر کوئی خاوند غریب آج بھی ہے

    ہر کنوارے نے جسے مرغِ مسلّم جانا
    شوہروں کے لئے وہ دال عجیب آج بھی ہے

    یہ تِرا نام ہے یا میری اذیت کوشی
    ایک نشتر سا رگِ جاں کے قریب آج بھی ہے

    کون جانے یہ تِرا شوہرِ آشفتہ مزاج
    کتنے معصوم کنواروں کا رقیب آج بھی ہے

    شوکت پرویز
    ۲۹ مارچ، ۲۰۱۷
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر