لاہوری برگر بچے، انقلاب اور لڑکی کی لیدر جیکٹ

محمد خلیل الرحمٰن نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 19, 2019

  1. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,632
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    درست۔ کیا ان کا قبضہ مافیا کے خلاف سوچنا صرف اس لیے جرم ٹھہرے کہ یہ خوشحال طبقے سے ہی تعلق رکھتے ہیں؟

    ہم نے کہیں اور بھی لکھا تھا کہ سجاد ظہیر ، صاحب زادہ محمود ، رشید جہاں وغیرہ بھی تو خوشحال طبقے سے تھے اور کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کے ممبر بنے؟ کیا امیروں کے بچوں پر درست بات سوچنے کی پابندی ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,694
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بالکل بھی نہیں۔ لیکن میرے نزدیک مسئلہ کچھ اور ہے۔ "سیاپا" کسی اور چیز کا ہے، نام کسی اور چیز کا استعمال ہو رہا ہے۔ مڈل کلاس طبقہ تو بورژوا کا "لے پالک" ہوتا ہے، ان کو پرولتاری کا دکھ نہیں ہے، افسوس صرف اتنا ہے کہ ہم کیوں "مہان" نہیں بنتے۔
     
    • زبردست زبردست × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  3. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    کمیونزم، سوشل ازم وغیرہ عملی طور پر دنیا کے ثابت شدہ ناکام ترین نظریات میں سے ہیں۔ چین نے ۱۹۴۹ سے ۱۹۷۸ تک کئی کروڑ چینی مروا کر بالآخر سوشل ازم کا تجربہ ترک کر دیا۔ اور ماؤ زتنگ کی وفات کے ساتھ ہی کمیونسٹ قیادت نے ملک میں وسیع پیمانہ پر مارکیٹ ریفارمز کئے۔ جس کی بدولت آج چین دنیا کی دوسری بڑی معاشی قوت ہے۔
    ۱۹۷۸ سے لے کر ۲۰۱۸ تک ریکارڈ ۸۰ کروڑ چینی غربت کی لکیر سے نکل گئے ہیں۔ پچھلے چند سالوں میں دنیا میں سب سے زیادہ ڈالروں میں ارب پتی چین کے شہری بنے ہیں۔
    یہی حال ماضی کے کمیونسٹ سوشلسٹ ویتنام کا رہا ہے۔ امریکہ سے جنگ جیتنے کے باوجود آج وہ ملک سوشل ازم و کمیونزم چھوڑ کر مارکیٹ معیشت پر چل رہا ہے۔
    ان واضح تاریخی مثالوں کے باوجود سرخوں کی ڈھٹائی قابل دید ہے۔ وہ ابھی بھی سمجھتے ہیں کہ ان کے تمام مسائل کا حل سوشل ازم ہے۔ ایک ایسا نظریہ جو عملی طور پر کہیں کامیاب نہ ہو سکا وہ پاکستان میں ہو جائے گا؟
     
  4. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,632
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    سر ہمیں تو خوشی اس بات کی ہے کہ ان برگر بچوں کے ذریعے سے ہی سہی، پاکستان میں متبادل بیانیے کی دوبارہ آمد خوش آئیند ہے ورنہ امیر المومنین کے بائیں بازو کے خلاف جہاد کے بعد ایک ہی بیانیہ سن سن کر ہمارا تو جی اوب گیا تھا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    آجکل سرخوں کے مارچ کی آڑ میں روایتی فوج مخالف سرگرمیاں عروج پر ہیں۔ جرنیلوں کو سرخوں کے اجتماع میں سر عام غنڈہ کہا جا رہا ہے۔ اور جب جواب میں ایجسنیاں حرکت کریں تو ملک کے خلاف مزید غلیظ پراپگنڈہ کیا جاتا ہے۔

     
  6. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    امیر المومنین جنرل ضیا الحق نے افغانستان میں سرخوں کو شکست دینے کیلئے مجاہدین بنائے تھے۔ اس کے لئے نظریاتی و مالی امداد سعودیہ اور امریکہ سے آئی۔ ٹریننگ آئی ایس آئی نے دی۔
    یوں پاکستان نے افغان جہاد کے ذریعہ سرخوں کو شکست فاش دی۔ اگر پاکستان وہاں امریکہ اور سعودیہ کی ایما پر مداخلت نہ کرتا تو خطے کے حالات یکسر مختلف ہوتے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,632
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    کیا آپ اسلامی نظام کے متعلق بھی یہی آرگومنٹ دیں گے کہ خلافتِ راشدہ کے کامیاب تجربے کے باوجود خود اسلامی دنیا نے اسے تج دیا تو ضرور یہ اس نظام کی ناکامی ہے؟
     
    • متفق متفق × 1
  8. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    یہ لہو رنگ تحریک کم از کم لاہور کی حد تک اپنا وجود رکھتی ہے اور پاکستان کے کئی شہروں، اور حتیٰ کہ آزاد کشمیر میں بھی، اس تحریک سے والہانہ لاؤ رکھنے والے افراد موجود ہیں اور یہ ایک متبادل نظام پیش کرنے کے علم بردار ہیں اور سوویت یونین کے زوال کے بعد بھی انہوں نے اپنا قبلہ نہیں بدلا اور دل و جان سے سمجھتے ہیں کہ اس دنیا کی معیشت کو وہ سدھار سکتے ہیں۔ لاہور میں غالباََ ہر سال ہی یہ ایک جگہ جمع ہوتے ہیں تاہم اس مرتبہ انہیں زیادہ ہائی لائیٹ کیا گیا ہے۔ شاید اس کی وجہ وہ لڑکی ہے جو بڑے والہانہ انداز میں فیض کا کلام پڑھ رہی تھی۔ اس تحریک میں جان تو کم ہے، مگر اس لڑکی نے کئی طاقتور عناصر کو ، کم از کم سوشل میڈیا کی حد تک، کہیں نہ کہیں، اندر سے ہلا ضرور دیا ہے۔ یہ عناصر اسے نظرانداز بھی کر سکتے تھے تاہم یہاں جو بھی انہیں للکارے، یہ اپنے ہرکاروں سمیت میدان میں آن موجود ہوتے ہیں۔
     
    • زبردست زبردست × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    ریاست مدینہ رسول اللہ کی وفات کے تیس سال بعد ختم ہو گئی۔
    اکثر کمیونسٹ سوشلسٹ ریاستیں بھی کم و بیش اتنا عرصہ ہی قائم رہ پائیں۔ صرف چین اور ویتنام منفرد کیس ہیں کیونکہ انہوں نے سوشل ازم کی حقیقت آشکار ہونے کے بعد بروقت مارکیٹ ریفارمز کرکے ملک کی سمت درست کر دی تھی۔ وگرنہ یہ بھی دیگر کمیونسٹ سوشلسٹ ریاستوں کی طرح تباہ ہو جاتے۔
    [​IMG]
     
  10. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,632
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    کسی بھی نظام کا ایک وقت کے بعد منظرِ عام سے وقتی طور پر ہٹ جانا اس کی مکمل شکست نہیں گردانا جاسکتا۔ موجودہ دور سرمایہ داری کا ہے لیکن یہ اس کی کامیابی کی دلیل نہیں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  11. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    پس ثابت ہوا کہ پاکستانی واقعی دنیا کی ڈھیٹ ترین قوم ہیں۔ پاکستان کے اردگرد اتنے ممالک ہیں جہاں سوشل ازم، کمیونزم، اسلام ازم مکمل طور پر قوموں کی بربادی مؤجب بنے۔ اور اتنے ہی ملک ہیں جو محض مارکیٹ ریفارمز کرکے عالمی افق پر چھا گئے ہیں۔
    اس کے باوجود پوری ڈھٹائی سے عملی طور پر ناکام نظریات کا دفاع اور کامیابی سے ہمکنار کرنے والے مارکیٹ ریفارمز کی سختی سے مخالفت کی جاتی رہی ہے۔
    بغض اور حسد کا وہ سفر جو ایوب دور کے ۲۲ امیر صنعتی و تجارتی خاندانوں کے خاتمہ سے شروع ہوا تھا ابھی تک ختم نہیں ہوا۔
     
    • نا پسندیدہ نا پسندیدہ × 1
  12. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    یہ بائیس کروڑ کی آبادی میں سے بائیس سو بھی نہیں ہیں اور آپ پر غشی کے دورے پڑنے شروع ہو گئے۔ کوئی سرخ انقلاب پاکستان میں دستک نہیں دے رہا ہے بلکہ یہاں کسی بھی طرح کے انقلاب کے بپا ہونے کے دُور دُور تک آثار نہیں۔ خدا جانے، آپ کس ٹینشن میں مبتلا ہو گئے! کم از کم انہیں برداشت کرنے کی اہلیت ہی پیدا کر لیجیے سر۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
    • متفق متفق × 1
  13. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    10,632
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    انہیں مخالفت میں ہلکی سی سسکی بھی برداشت نہیں۔ انہیں صرف

    Four legs good, two legs bad
    ممیانے والے ہی اچھے لگتے ہیں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  14. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    ویسے اس بار جو کسی قدر نیا 'جنون' دیکھنے کو ملا ہے، اور اس اجتماع میں جو ہائر مڈل کلاس یا اپر کلاس کے افراد شامل ہوئے ہیں، وہ خان صاحب کے نیا پاکستان کے نعرے سے بھی کافی حد تک ناامید سے لگتے ہیں؛ اس کی وجہ یہ ہے کہ ان کی غالب اکثریت نے عمران خان صاحب کو ہی ووٹ دیا تھا۔ معلوم نہیں کہ وہ نیا پاکستان سے کیا امیدیں لگائے بیٹھے تھے! :) ہمارے خیال میں، 'نیا پاکستان' کا میک اپ بھی اتر سا گیا ہے۔ جاسم صاحب! کوئی رنگ روغن کروائیے نا!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
    • زبردست زبردست × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    جدید سرمایہ دارانہ نظام معروف ماہر اقتصادیات ایڈم سمتھ کی شہرہ آفاق کتاب “قوموں کی دولت” سے ۳۰۰ سال قبل ۱۷۷۶ میں شروع ہوا تھا۔ اس نظام کی مخالفت میں جو نظام لائے گئے وہ اپنے آپ ہی کچھ عرصہ بعد پاش پاش ہو گئے۔
    لاتعداد تجربات کے بعد اب آپ کے سامنے قابل عمل سوشل ازم کے تین ماڈل موجود ہیں۔
    1. چین، ویتنام والا سوشلسٹ مارکیٹ معاشی ماڈل
    2. جرمنی والا سوشل مارکیٹ ماڈل
    3. ناروے، سویڈن، ڈنمارک والا جمہوری سوشلسٹ یا نارڈک ماڈل
    ان تینوں ماڈلز میں سے دیکھ لیں کونسا پاکستان کے رسم و رواج میں سے زیادہ مطابقت رکھتا ہے۔ یاد رہے کہ ان میں سے کوئی کوئی بھی ماڈل من و عن سوشلسٹ کمیونسٹ نہیں ہے۔ سب میں کہیں نہ نہیں مارکیٹ ریفارمز یا سرمایہ دارانہ نظام کی آمیزش شامل ہے :)
     
  16. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    تو آپ کا خیال ہے کہ پاکستان میں کوئی خاص ماڈل لاگو ہو گا یا اس حوالے سے کوئی مقتدر قوت سوچ بچار میں مصروف ہے۔ جناب! پاکستان میں ایک ہی ماڈل چلتا ہے، ڈنگ ٹپاؤ اکنامک سسٹم۔ شاید پوری دنیا اس سے آگاہ نہیں۔ یہ خالصتاََ ہمارا اپنا تشکیل کردہ ہے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  17. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    بھائی مسئلہ ان سرخوں کی تعداد کا نہیں قوم کا ان کی طرف متوجہ ہونے کا ہے۔ ایک ایسا نظریہ جسے پوری دنیا نے اچھی طرح ٹھوک بجا کر مسترد کر دیا ہو۔ قوم اب اس کی طرف مائل ہونا شروع ہو تو تشویش تو بنتی ہے۔ اور پھر ان سرخوں کی آڑ میں روایتی فوج مخالف پراپگنڈہ جلتی پر تیل کا کام کرتا ہے :)
     
  18. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    ناروے میں رہ کر صرف سوشل میڈیا سے خبریں پڑھنے سے آپ متاثر ہی ہوں گے۔ ارے بھئی کون سی لیدر جیکٹ، کون سی لہک لہک کر ترانہ پڑھتی لڑکی۔ ہم تو بس فیض کا کلام سُن رہے تھے۔ آپ اس میں سے سرخ سویرا برآمد کر کے لے آئے۔ ذرا یہاں آ کر تو دیکھیے۔ یہاں بس اندھیرا ہی اندھیرا ہے! اس گھٹا ٹوپ اندھیرے میں ایک صدا بلند ہوئی تو ہمیں فیض یاد آ گئے! بس اتنی سی بات ہے!
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  19. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    26,475
    خان صاحب کو ۲۲ سال گلا پھاڑنے کے بعد صرف حکومت ملی ہے۔ اصل اقتدار آج بھی فوج ہی کے پاس ہے۔ اس محدود اختیار کے ساتھ وہ جو کچھ قوم کیلئے کر سکتے تھے کر رہے ہیں۔ اور یہاں آپ نے صرف ۱۵ ماہ بعد ہی تبدیلی کا میک اتار دیا! پانچ سال پورے تو ہو لینے دیں۔ ویسے بھی اپوزیشن اور اس کا حامی میڈیا پہلے دن سے کہہ رہا ہے کہ حکومت فیل ہے :)
     
  20. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    10,183
    ساٹھ ماہ سے پندرہ ماہ تو گزر گئے۔ صاحب! ہم نے تو اپوزیشن کے نام نہاد خود ساختہ ترجمان کی حیثیت سے محض میک اپ اتر جانے کی بات کی تھی۔ یہاں جو اعلیٰ سیاسی روایات رہی ہیں، ان کے تناظر میں ہم کچھ اور بھی تصور کر سکتے تھے۔ دیکھیے! ہم نے تو عوامی مینڈیٹ کا احترام کرنے کی اپنی سی کوشش کی، جو آپ کو ناگوار گزر گئی۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2

اس صفحے کی تشہیر